برکس

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
برکس

 

مخفف برکس ( BRICS)
تاریخ تاسیس سانچہ:آغاز اور مدت (UNGA 61st session)
پہلی برکس کانفرنس: سانچہ:16 جون 2009
مقام تاسیس UN HQ, NYC (UNGA 61st session)
ایکاتیرنبرگ (1st BRIC summit)
قسم بین الحکومتی تنظیم
مقاصد سیاسی اور اقتصادی تعاون
باضابطہ ویب سائٹ https://brics2023.gov.za/

برکس (BRICS) برازیل ، روس ، بھارت ، چین اور جنوبی افریقہ کا ایک گروپ ہے جو 2010 میں جنوبی افریقہ کو پیشرو برک (BRIC) میں شامل کرنے سے تشکیل دیا گیا تھا۔ [1] اصل مخفف "BRIC" یا "The BRICs"، 2001 میں گولڈمین ساسچ کے ماہر اقتصادیات جم او نیل نے تیزی سے ترقی کرنے والی معیشتوں کو بیان کرنے کے لیے وضع کیا تھا جس کی اس نے پیش گوئی کی تھی کہ یہ 2050 تک عالمی معیشت پر اجتماعی طور پر غالب ہوجائینگی۔ [2]

برکس ممالک دنیا کی زمینی رقبے کے تقریباً 27 فیصد اور عالمی آبادی کے 42 فیصد پر محیط ہیں۔[ا] برازیل، روس، بھارت اور چین دنیا کے آبادی، رقبے اور جی ڈی پی کے لحاظ سے دس بڑے ممالک میں شامل ہیں اور موجودہ سپر پاور یا طاقتور ابھرنے والی طاقتیں سمجھی جاتی ہیں۔ تمام پانچ ریاستیں G20 کے ارکان ہیں، جن کی GDP مشترکہ طور پر 28 ٹریلین امریکی ڈالر ( مجموعی عالمی پیداوار کا تقریباً 27 فیصد) ہے، کل GDP (PPP) تقریباً 57 ٹریلین امریکی ڈالر (عالمی GDP PPP کا 33 فیصد) اور مشترکہ غیر ملکی ذخائر میں ایک اندازے کے مطابق 4.5 ٹریلین امریکی ڈالر ہیں (2018 تک)۔ [4]

BRICS کی شناخت اصل میں سرمایہ کاری کے مواقع کو اجاگر کرنے کے مقصد سے کی گئی تھی اور یہ کوئی باضابطہ بین حکومتی تنظیم نہیں تھی۔ 2009 کے بعد سے، وہ تیزی سے ایک زیادہ مربوط جیو پولیٹیکل بلاک کی شکل اختیار کر چکے ہیں، ان کی حکومتیں سالانہ باضابطہ سربراہی اجلاسوں میں ملاقات کرتی ہیں اور کثیر جہتی پالیسیوں کو مربوط کرتی ہیں۔ برکس ممالک کے درمیان دو طرفہ تعلقات بنیادی طور پر عدم مداخلت، مساوات اور باہمی فائدے کی بنیاد پر چلائے جاتے ہیں۔ [5]

برکس ممالک کو سرکردہ ترقی یافتہ معیشتوں کے G7 بلاک کا سب سے اہم جیو پولیٹیکل حریف سمجھا جاتا ہے، جو مسابقتی اقدامات کا اعلان کرتے ہیں جیسے کہ نیو ڈیولپمنٹ بینک، برکس کانٹیجینٹ ریزرو آرینجمنٹ، برکس ادائیگی کا نظام، برکس مشترکہ شماریاتی اشاعت اور برکس کرنسی ریسرو باسکٹ۔ 2022 سے، گروپ نے رکنیت کو بڑھانے کی کوشش کی ہے، جس میں کئی ترقی پزیر ممالک نے شمولیت میں دلچسپی ظاہر کی ہے۔ برکس نے متعدد مبصرین کی طرف سے تعریف [6] [7] [8] [9] اور تنقید [10] حاصل کی ہے۔

اگست 2023 میں، 15ویں برکس سربراہی اجلاس میں، جنوبی افریقہ کے صدر سیرل رامافوسا نے اعلان کیا کہ ارجنٹائن، مصر، ایتھوپیا، ایران، سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کو بلاک میں شامل ہونے کی دعوت دی گئی ہے۔ مکمل رکنیت 1 جنوری 2024 سے نافذ العمل ہونے والی ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "S. Africa Joins; BRIC Now BRICS, 13 de abril de 2011"۔ 24 فروری 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 اپریل 2011 
  2. Gulnar Nagashybayeva (November 2016)۔ "Research Guides: BRICS: Sources of Information: Introduction"۔ guides.loc.gov (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 جولا‎ئی 2023 
  3. "Total Population – Both Sexes"۔ World Population Prospects, the 2019 Revision۔ United Nations Department of Economic and Social Affairs, Population Division, Population Estimates and Projections Section۔ June 2019۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جون 2019 
  4. "Report for Selected Countries and Subjects"۔ IMF (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2023 
  5. Gutemberg Pacheco Lopes Junior۔ "The Sino-Brazilian Principles in a Latin American and BRICS Context: The Case for Comparative Public Budgeting Legal Research; Wisconsin International Law Journal; 13 May 2015" (PDF)۔ University of Wisconsin Law School۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 ستمبر 2016 
  6. "Brics a force for world peace, says China"۔ Business Day۔ 8 August 2012۔ 22 اپریل 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 نومبر 2013 
  7. Khadija Patel (3 April 2012)۔ "Brics summit exposes the high wall between India and China"۔ Daily Maverick۔ 02 اپریل 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 10 جولا‎ئی 2013 
  8. "ILO head praises BRICS countries' commitment to social dialogue" (بزبان انگریزی)۔ ILO۔ 2018-08-03۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 اگست 2023 
  9. Richard D. Wolff (3 October 2022)۔ "BRICS: the powerful global alliance"۔ canadiandimension.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 اگست 2023 
  10. Sumantra Maitra (18 April 2013)۔ "BRICS – India is the biggest loser"۔ USINPAC۔ 28 اکتوبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جون 2013