بیروت کا محاصرہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بیروت کا محاصرہ
بسلسلہ 1982ء کی جنگ لبنان
بیروت کا محاصرہ
اسٹیڈیم کا آسمان سے دیکھا گیا ایک منظر جسے تنظیم آزادی فلسطین کے اسلٰحہ فراہمی کے مرکز کے طور پر اسرائیلیوں سے تصادم کے دوران استعمال کیا گیا تھا۔
تاریخ14 جون – 21 اگست 1982
مقامبیروت، لبنان
نتیجہ

اسرائیل کی حکمی فتح، پی ایل او کی منصوبہ جاتی فتح[1]

  • پی ایل او افواج نے قیام امن کے بعد جگہ خالی کی
  • بیش تر بیروت تباہ ہو چکا تھا
محارب

Flag of اسرائیل اسرائیلی دفاعی افواج
لبنانی محاذ

جنوبی لبنانی فوج

Flag of تنظیم آزادی فلسطین تنظیم آزادی فلسطین
Flag of لبنان لبنانی قومی مزاحمت محاذ

Flag of Syria.svg سوریہ
INM
ASALA
PKK
کمانڈر اور رہنما
Flag of اسرائیل آرئیل شارون
Flag of اسرائیل مناخم بیگن
Flag of اسرائیل Rafael Eitan
Logo of Kataeb Party.svg Bachir Gemayel
Logo of Kataeb Party.svg Fadi Frem
Logo of Kataeb Party.svg Elie Hobeika
Logo of Kataeb Party.svg Samir Geagea
Al-Tanzim logo.png Fawzi Mahfouz
Al-Tanzim logo.png Obad Zouein
Saad Haddad
Flag of تنظیم آزادی فلسطین یاسر عرفات
Flag of تنظیم آزادی فلسطین Abu Jihad
Flag of تنظیم آزادی فلسطین Salah Khalaf
جارج حبش
Nayef Hawatmeh
George Hawi
Elias Atallah
Inaam Raad
Muhsin Ibrahim
Flag of سوریہ حافظ الاسد
Flag of سوریہ Mustafa Tlass
Ibrahim Kulaylat
Monte Melkonian
Mahsum Korkmaz
طاقت
76,000 12,000
ہلاکتیں اور نقصانات
N/A N/A
4,000–5,000 Lebanese civilians killed[2]

بیروت کا محاصرہ 1982ء کے موسم گرما میں پیش آیا۔ یہ 1982ء کی جنگ لبنان کا حصہ ہے۔ اس کے نتیجے میں اقوام متحدہ کی نافذ کردہ جنگ بندی متاثر ہوئی اور تنظیم آزادی فلسطین کو بیروت، لبنان چھوڑنا پڑا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Who won the Battle of Fallujah?, Jonathan F. Keiler at ملٹری ڈاٹ کام: "Dating from the siege of Beirut in 1982, Israel has practiced a complex and limited form of urban warfare. In Beirut, this involved a cordon around the city, accompanied by limited attacks with artillery, ground, and air forces to put pressure on the Palestinian Liberation Organization (PLO) and Syrian forces inside. The IDF did not launch a general assault on the city; it awaited a political solution that resulted in evacuation of enemy forces under the auspices of outside powers. Despite the IDF’s restraint, it was depicted as little short of barbaric by much of the international media. The PLO’s evacuation was treated as a victory parade, rather than the retreat it was, and the PLO lived to fight another day. The battle was a tactical victory for Israel, but a strategic defeat."
  2. Gabriel, Richard, A, Operation Peace for Galilee, The Israeli-PLO War in Lebanon, New York: Hill & Wang. 1984, p. 164, 165, ISBN 0-8090-7454-0