جیکبس ڈومینی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
جیکبس ڈومینی
مدت منصب
1958 – 1967
آر ڈبلیو جیمز
رچرڈ لیوٹ
معلومات شخصیت
پیدائش 16 دسمبر 1897ء  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بیل ویل، جنوبی افریقہ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 31 جنوری 1980ء (83 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کیپ ٹاؤن  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت جنوبی افریقا  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی یونیورسٹی کالج، اوکسفرڈ  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ کرکٹ کھلاڑی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کھیل کرکٹ  ویکی ڈیٹا پر (P641) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کھیل کا ملک جنوبی افریقا  ویکی ڈیٹا پر (P1532) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

جیکبس پیٹرس ڈومینی (پیدائش: 16 دسمبر 1897ء) | (انتقال: 31 جنوری 1980ء) ایک جنوبی افریقہ کے ماہر تعلیم تھے جو کیپ ٹاؤن یونیورسٹی کے پرنسپل اور وائس چانسلر بنے۔ [1] [2] ایک نوجوان کے طور پر، وہ ایک کرکٹ کھلاڑی بھی تھا جس نے 1927ء سے 1929ء تک 3 ٹیسٹ کھیلے۔ [3] وہ کیپ ٹاؤن کے مضافاتی علاقے بیل ول میں پیدا ہوا تھا اور کیپ ٹاؤن میں بھی گروٹ شوور ہسپتال میں انتقال کر گیا تھا۔ وزڈن کرکٹرز کے المناک میں ان کی وفات میں انھیں "جوہانس پیٹرس ڈومینی" کہا گیا ہے۔ [4] [5] [6]

زندگی اور تعلیمی کیریئر[ترمیم]

ڈومینی ٹائگربرگ ہلز کے ایک فارم میں پلے بڑھے۔ اس نے 1979ء میں ایک یادداشت، Twilight over the Tygerberg شائع کی۔ [7] [8] وہ 23 سال کی عمر میں روڈس سکالر کے طور [9] یونیورسٹی کالج، آکسفورڈ میں پڑھنے کے لیے گئے تھے۔ ڈومینی نے مختلف تعلیمی کمیشنوں کے چیئرمین کے طور پر خدمات انجام دیں۔ [10] [11] [12] یونیورسٹی آف کیپ ٹاؤن کے وائس چانسلر کے طور پر اپنے دور میں انھوں نے نسل پرستی کی سختی سے مخالفت کی، بعض اوقات ذاتی خطرے میں۔ اس نے لڑکوں اور لڑکیوں کے لیے کثیر نسلی کرکٹ ہفتے قائم کرنے میں بھی مدد کی۔ [13]

کرکٹ کیریئر[ترمیم]

ایک کرکٹ کھلاڑی کے طور پر ڈومینی بائیں ہاتھ کے اوپننگ یا مڈل آرڈر بلے باز اور ایک بائیں ہاتھ کے سپن باؤلر تھے۔ ان کا کرکٹ کیریئر قسط وار تھا: 1919-20ء میں دو میچ ایک 1921ء میں اور پھر کچھ اور 1927-28ء اور 1928-29ء میں اس کے بعد 1929ء میں غیر معمولی حالات میں مزید 3 میچ [14] وہ 1919-20ء میں آسٹریلوی فورسز کی ٹیم کے خلاف مغربی صوبے کے لیے اپنی دو پیشیوں میں کامیاب نہیں ہو سکا اور 1921ء میں آکسفورڈ یونیورسٹی کے لیے اپنے واحد فرسٹ کلاس گیم میں 0 اور 2 بنائے جب وہ روڈس سکالر تھے تاہم اس نے یونیورسٹی کی دوسری کرکٹ ٹیم کے رکن کے طور پر "ہارکیولن" کیپ جیتی۔ [1] ڈومنی 1927-28ء کے جنوبی افریقی سیزن میں فرسٹ کلاس کرکٹ میں دوبارہ نمودار ہوئے، ایم سی سی ٹورنگ ٹیم کے خلاف 2 میچوں میں ٹرانسوال کے لیے کھیلے۔ پہلے میں انھوں نے ناقابل شکست 95 رنز بنائے اور دوسرے میں انھوں نے 55 رنز بنائے اور پھر 74 رنز پر ناٹ آؤٹ رہے جب میچ ڈرا ہوا تھا۔ [15] [16] اس کی وجہ سے 5 میچوں کی سیریز کے پہلے ٹیسٹ کے لیے ان کا انتخاب ہوا: وہ جوہانسبرگ میں ہونے والے میچ میں بلے سے کامیاب نہیں ہوئے، 0 اور 4 رنز بنائے لیکن اس کا بائیں ہاتھ کا سپن جو جنوبی افریقہ میں چھٹے باؤلر کے طور پر استعمال ہوتا ہے۔ اٹیک نے، ہربرٹ سٹکلف اور ارنسٹ ٹائلڈسلے کے درمیان دوسری وکٹ کی 230 کی شراکت کو توڑ دیا جس نے انگلینڈ کی پہلی اننگز کا مجموعہ جنوبی افریقہ کو صرف ایک وکٹ کے نقصان پر پہنچا دیا۔ [17] ڈومینی دوسرے یا تیسرے ٹیسٹ میں نہیں کھیلے تھے لیکن جب جنوری کے آخر میں دورہ جوہانسبرگ واپس آئے تو انھیں چوتھے ٹیسٹ کے لیے منتخب کیا گیا حالانکہ اس دوران انھوں نے کوئی اول درجہ کرکٹ نہیں کھیلی تھی: یہ اقدام دوبارہ ناکام رہا اور اس نے صرف 7 اور 5 رنز بنائے۔ [18] 1928-29ء میں کیوری کپ کا مقابلہ نہیں کیا گیا لیکن ڈومینی ٹرانسوال کے لیے 3 اول درجہ میچوں میں نظر آئے۔ ان میں سے تیسرے میں بارڈر کے خلاف انھوں نے اپنے فرسٹ کلاس کیریئر کی واحد سنچری، ناقابل شکست 168 رنز بنائے اور 40 رنز کے عوض ایک ہی اننگز میں 6 وکٹیں حاصل کیں جو ان کے کیریئر کی وکٹوں کا نصف ہے۔ [19] یہ جنوبی افریقہ میں ان کا آخری اول درجہ میچ تھا۔ اس کے کیریئر کا کوڈیسل ایک عجیب تھا۔ انھیں 1929ء کے دورہ انگلینڈ کے لیے منتخب نہیں کیا گیا تھا لیکن 1929ء کے موسم گرما میں وہ یورپ میں تھے۔ معاصر وزڈن کرکٹرز المناک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ وہ "یورپ کے کسی کاروباری یا پیشہ ورانہ دورے پر تھے"۔ 1981ء میں ڈومینی کے بارے میں وزڈن کی موت زیادہ مخصوص ہے اور اس میں کہا گیا ہے کہ "وہ سوئٹزرلینڈ میں چھٹیاں گزار رہے تھے جب انھیں زخمی ہونے والی ٹیم میں شامل ہونے کے لیے بھیجا گیا تھا"۔ [1] [20] اسے لیڈز میں 5 میچوں کی سیریز کے تیسرے میچ کے لیے سیدھے ٹیسٹ ٹیم میں شامل کیا گیا اور ایک بار پھر وہ 2 اور 12 [21] بنا کر کامیاب نہیں ہوئے۔ وہ ٹیسٹ کے بعد اگلے 2 اول درجہ میچوں تک جنوبی افریقی ٹیم کے ساتھ رہے لیکن پھر چلے گئے اور دوبارہ اول درجہ کرکٹ نہیں کھیلی۔

انتقال[ترمیم]

ان کا انتقال 31 جنوری 1980ء کو کیپ ٹاؤن، جنوبی افریقہ میں 82 سال کی عمر میں ہوا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ "Obituaries"۔ Wisden Cricketers' Almanack (1981 ایڈیشن)۔ Wisden۔ صفحہ: 1141 
  2. East Africa and Rhodesia Volumes 42–43 – Page 857 1966 "... and Dr. Jacobus Duminy, principal of Cape Town University, the guest of honour."
  3. "Jacobus Duminy"۔ www.cricketarchive.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 جنوری 2012 
  4. Keith A. P. Sandiford & Brian Stoddart, The Imperial Game: Cricket, Culture and Society 1998 Page 58 "While it is unwise to assign community on the basis of language, it would appear that after 1907 no Afrikaner appeared in a test for South Africa until Iacobus Petrus Duminy in 1927–28."
  5. Ray Knowles South Africa versus England: a test cricket history Page 95 1995 "John Nicolson (Natat) and Jacobus Duminy (Transvaal), both left-handed batsmen, made their Test debuts in the 1927/28 series."
  6. Jonty Winch, Bella Forsyth Wits sport: an illustrated history of sport at the University of ... 1989 Page 95 "The visiting team was captained by the 1927 Springbok lefthander, Jacobus Duminy, who was a professor at the university. He made top score of 47 in Pretoria's total of 106 and did well to fend off the fiery opening attack of Neville Rankin and ..."
  7. The Tygerberg: the story of the Tygerberg Hills 1998 Page 49 "A 1905 snapshot of farming on parts of "Lobenstein" is contained in J. P. Duminy's reminiscences, Twilight over the Tygerberg. His family was still concentrating on grain-farming and vines, but the grain was mainly oats, possibly for feeding the ..."
  8. South Africa's yesterdays Reader's Digest Association South Africa 1981 Page 87 "In his book, Twilight over the Tygerberg, J.P. Duminy recalled the splendid parties and 'delicious old-time delicacies' which graced the long family dining table: 'Among the meats I remember were a whole roast sucking-pig with the traditional roast potato in its mouth,.. "
  9. J.P. Duminy The call for reappraisal 1961 "... The first occasion on which I met any Non-White who was not a farm-labourer, or a dock-worker or a semi-skilled artisan was when I went to Oxford at the age of 23"
  10. Baruch Hirson, Year of fire, year of ash: the Soweto revolt, roots of a revolution?, 1979, p.58: "1935, contains in summary form some of the recommendations of the Commission under Professor J.P. Duminy"
  11. Paul Dobson. Doc: the life of Danie Craven, 1994, p.77: "First of all dances at the university were stopped because J P Duminy, in accordance with government decree, forbade racially mixed dances"
  12. D. McKenzie, Medical education U.C.T., 1938–1978 1978, p.6: "He was followed by Dr J. P. Duminy in 1959 who had to contend with the student unrest of the postwar period."
  13. The Cricketer, May 1980, p. 60.
  14. "First-class Matches played by Jacobus Duminy"۔ www.cricketarchive.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2012 
  15. "Scorecard: Transvaal v MCC"۔ www.cricketarchive.com۔ 9 December 1927۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2012 
  16. "Scorecard: Transvaal v MCC"۔ www.cricketarchive.com۔ 16 December 1927۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2012 
  17. "Scorecard: South Africa v England"۔ www.cricketarchive.com۔ 24 December 1927۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2012 
  18. "Scorecard: South Africa v England"۔ www.cricketarchive.com۔ 28 January 1928۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2012 
  19. "Scorecard: Border v Transvaal"۔ www.cricketarchive.com۔ 22 December 1928۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2012 
  20. "South Africans in England"۔ Wisden Cricketers' Almanack۔ Part II (1930 ایڈیشن)۔ Wisden۔ صفحہ: 2 
  21. "Scorecard: England v South Africa"۔ www.cricketarchive.com۔ 13 July 1929۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2012