حسن الالوباطلی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
حسن الالوباطلی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1428  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
الوابات، کراجابے  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 29 مئی 1453 (24–25 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات لڑائی میں مارا گیا  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the Ottoman Empire (1844–1922).svg سلطنت عثمانیہ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ ینی چری،  فوجی افسر  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کارہائے نمایاں فتح قسطنطنیہ  ویکی ڈیٹا پر (P800) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

حسن الالوباطلی یا الالوباطلی حسن (1428ء - 29 مئی 1453ء) سلطنت عثمانیہ کے سلطان محمد دوئم کی خدمت میں ایک تیموری سپاہی تھے جو فتح قسطنطنیہ کے وقت شہید ہو گئے تھے۔[1][2][3][4]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

الالوباطلی حسن صوبہ بورصہ کے ایک چھوٹے سے گاؤں الوابات (کراجابے کے قریب) میں پیدا ہوئے تھے۔[2][3][4]

فتح قسطنطنیہ[ترمیم]

فتح قسطنطنیہ کے وقت حسن کی عمر 25 سال تھی اور وہ قسطنطنیہ کے محاصرے میں موجود تھے (6 اپریل 1453ء سے 29 مئی 1453ء تک)۔[4][3][2] ترکوں نے اس سے قبل متعدد بار رومی سلطنت کے عظیم الشان شہر اور آخری مضبوط گڑھ قسطنطنیہ لینے کی کوشش کی تھی لیکن کامیابی نہیں ملی۔ سلطان محمد فاتح کی کمان میں جو اس وقت اپنے بیسویں سال کے اوائل میں تھے اور پہلے ہی ایک عظیم فوجی رہنما ہونے کا امکان محمد فاتح میں ظاہر ہو رہا تھا اور ایسا لگتا تھا کہ فتح قریب ہی ہے۔ توپوں کے ذریعہ کئی حملے اور شدید ہتھوڑے کے باوجود قسطنطنیہ کی عظیم دیواریں 53 دن تک قائم رہیں۔

محاصرے کے آخری دن یعنی 29 مئی کی صبح نمازِ فجر کے بعد، عثمانی فوجی بینڈ نے ایک گانا بجانا شروع کیا اور قسطنطنیہ پر دھاوا بول دیا۔ الالوباطلی حسن قسطنطنیہ کی دیواروں پر چڑھنے والے پہلے شخص تھے اس کے بعد حسن کے تیس اور دوستوں نے ساتھ دیا۔ حسن کے پاس صرف ایک عثمانی تلوار، ایک چھوٹی سی ڈھال اور عثمانی جھنڈا تھا۔ جب حسن دیوار پر چڑھے تو ان پر تیروں، پتھروں، نیزوں اور گولیوں کی بارش شروع ہو گئی۔ وہ سب سے اوپر دیوار پر پہنچے اور جھنڈا لگایا۔ جب حسن نے جھنڈا لگایا اس وقت ان کے باقی 12 دوست ان کے پاس تھے اور اس کے بعد حسن اپنے جسم میں موجود 27 تیروں کی وجہ سے نیچے گر کر شہید ہو گئے۔ عثمانی پرچم کو دیکھ کر عثمانی فوجی متاثر ہوئے اور آخر کار عثمانیوں نے قسطنطنیہ کو فتح کیا۔

مقبول ثقافت میں[ترمیم]

  • ابراہیم سلوکول نے ترک فتح 1453 (2012) میں حسن کا کردار ادا کیا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. The Companion Guide to Istanbul: And Around the Marmara By John Freely, Susan Glyn, pg. 356
  2. ^ ا ب پ "Ulubatlı Hasan kimdir? Tarihte Ulubatlı Hasan". 
  3. ^ ا ب پ "Ulubatlı Hasan Kimdir ?". sabah.com.tr. 
  4. ^ ا ب پ "ADI BAYRAKLAŞAN ŞEHİD ULUBATLI HASAN". yenisafak.com.