سرسکھ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

سرسکھ ٹیکسلا، پاکستان کے کھنڈر کا حصہ ہے۔

سرسکھ کی فصیل، ٹیکسلا، پاکستان.

شہر[ترمیم]

سرسکھ شہر کشن بادشاہ کنشکا نے 80 عیسوی میں تعمیر کیا۔ یہ ٹیکسلا کے شہروں میں سے سب سے آخری شہر ہے۔ کشن حکمرانوں نے فتح کے بعد سرکپ کے پرانے شہر کو ترک کر کے لنڈی نالہ کی دوسری جانب نیا شہر آباد کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔[1] شہر کی فصیل قریبا 5 کیلومیٹر لمبی ہے اور قریبا 4ء5 میٹر چوڑی ہے۔ یہ فصیل 2300x1000 میٹر رقبہ کے گرد بنائی گئی ہے اور وسطی ایشیا کے طرز تعمیر کے مطابق ہے۔ جب پانچویں صدی عیسوی کے آخر میں سفید ہن قوم نے پنجاب پر قبضہ کیا تو سرسکھ کا شہر متروک ہو گیا۔ سرسکھ کے شمال مشرق میں ہارو دریا بہتا ہے جبکہ جنوب میں لنڈی نالہ موجود ہے۔

کھدائی[ترمیم]

اس شہر کی کھدائی ایک محدود پیمانے پر 1915ء - 1916ء میں ہوئی۔ مزید کام پانی کی بلند سطح کی وجہ سے بند کرنا پڑا۔ 1980ء میں ان کھنڈر کو یونیسکو کی عالمی ورثہ کی لسٹ میں ٹیکسلا کے تحت شامل کیا گیا۔[2]

فصیل[ترمیم]

شہر کی فصیل بڑے بڑے پتھروں سے بنائی گئی ہے جن کے بیچ میں چھوٹے پتھر استعمال ہوئے ہیں۔ باہر والی طرف سے یہ فصیل حیرت انگیز حد تک ہموار ہے۔ شائد اس لیے کہ دشمن اس پر آسانی سے نہ چڑھ سکیں۔ فصیل میں کچھ فاصلے پر برج نما جگہیں بنائی گئی ہیں جن میں تیر اندازوں کے لیے کھڑکیاں نبی ہوئی ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. John Marshall۔ Taxila: An Illustrated Account of Archaeological Excavations Carried Out at Taxila Under the Orders of the Government of India between the years 1913 and 1934۔ صفحہ 217۔
  2. "UNESCO World Heritage List"۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 دسمبر 2008۔

نیز دیکھیں[ترمیم]