مندرجات کا رخ کریں

سٹیوٹکولو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
سٹیو ٹکولو
ذاتی معلومات
مکمل نامسٹیفن اوگونجی ٹکولو
پیدائش (1971-06-25) 25 جون 1971 (عمر 53 برس)
نیروبی, کینیا
عرفگنزی، گنز
بلے بازیدائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں ہاتھ کا فاسٹ میڈیم گیند باز
حیثیتآل راؤنڈر
تعلقاتٹام ٹکولو (بھائی)
ڈیوڈ ٹکولو (بھائی)
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ایک روزہ (کیپ 11)18 فروری 1996  بمقابلہ  بھارت
آخری ایک روزہ23 جنوری 2014  بمقابلہ  نیدرلینڈز
ایک روزہ شرٹ نمبر.5
پہلا ٹی20 (کیپ 10)1 ستمبر 2007  بمقابلہ  بنگلہ دیش
آخری ٹی2026 نومبر 2013  بمقابلہ  کینیڈا
ٹی20 شرٹ نمبر.5
ملکی کرکٹ
عرصہٹیمیں
1995–1996بارڈر
سوامی باپا
سدرن راکس
روینزوری واریئرز
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ایک روزہ ٹوئنٹی20آئی فرسٹ کلاس لسٹ اے
میچ 135 15 62 213
رنز بنائے 3,428 345 4,728 6,105
بیٹنگ اوسط 29.05 28.75 48.24 33.00
100s/50s 3/24 0/2 11/26 9/40
ٹاپ اسکور 111 56* 220 133
گیندیں کرائیں 4,016 170 5,991 6,647
وکٹ 94 12 85 168
بالنگ اوسط 34.20 14 37.18 30.67
اننگز میں 5 وکٹ 0 0 1 0
میچ میں 10 وکٹ 0 0 0 0
بہترین بولنگ 4/41 4/2 6/80 4/18
کیچ/سٹمپ 67/– 9/– 58/– 104/–
ماخذ: Cricinfo، 12 مئی 2017

اسٹیفن اوگونجی ٹکولو (پیدائش: 25 ​​جون 1971ء) کینیا کے ایک سابق کرکٹ کھلاڑی اور سابق ایک روزہ بین الاقوامی کپتان ہیں۔ وہ تنزانیہ کی قومی کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ کے طور پر خدمات انجام دے رہے ہیں۔ انھیں بڑے پیمانے پر کینیا کے اب تک کے عظیم ترین کرکٹ کھلاڑی کے طور پر شمار کیے جاتے ہیں، ٹکولو نے ایک روزہ بین الاقوامی میچوں میں ٹیم کے لیے سب سے زیادہ رنز بنائے اور دوسرے نمبر پر وکٹیں حاصل کیں۔

خاندان[ترمیم]

ٹکولو کا تعلق ایک کرکٹ خاندان سے تھا جس کے سب سے بڑے بھائی ٹام کینیا کے سابق کپتان تھے جبکہ ان کا دوسرا بھائی ڈیوڈ ٹکولو 1996ء کے کرکٹ عالمی کپ میں شریک ہوا تھا۔

مقامی کیریئر[ترمیم]

ٹکولو ایک دائیں ہاتھ کے مڈل آرڈر بلے باز اور پارٹ ٹائم دائیں ہاتھ کے میڈیم پیس اور آف اسپن بولر ہیں۔ ٹکولو اس سے قبل جنوبی افریقہ کی ڈومیسٹک کرکٹ میں بارڈر کی نمائندگی کر چکے ہیں اور انگلینڈ اور بنگلہ دیش میں بھی کھیل کر وقت گزار چکے ہیں۔ حال ہی میں وہ انگلینڈ میں کلب کرکٹ کھیل رہے ہیں اور کینیا میں وہ نیروبی میں سوامیباپا کرکٹ کلب کے لیے کھیلتے ہیں۔ 2005ء میں انگلینڈ میں کرکٹ کھیلنے کے لیے ہاویریگ نے ٹکولو پر دستخط کیے تھے۔ 2008ء میں ٹِکولو کو کینیا کے مقامی ٹورنامنٹ، سہارا ایلیٹ لیگ میں دی ایسٹرن ایسز کا کپتان منتخب کیا گیا۔

بین الاقوامی کیریئر[ترمیم]

1996ء کرکٹ عالمی کپ میں، تکولو نے کینیا کے لیے اپنا ایک روزہ ڈیبیو کیا۔ اپنی پہلی اننگز کے لیے تیسرے نمبر پر آکر ٹِکولو نے بھارت کے خلاف 65 رنز بنائے۔ ٹکولو نے کپ میں دو مزید متاثر کن اننگز کھیلی، پونے میں ویسٹ انڈیز کے خلاف اپنی تاریخی فتح میں 29 اور کینڈی میں سری لنکا کے خلاف 96 رنز کے ساتھ اپنی ٹیم کے لیے سب سے زیادہ اسکور کیا۔ ٹکولو نے 1997ء کے آئی سی سی ٹرافی فائنل میں بنگلہ دیش کے خلاف 147 رنز بنا کر کینیا کے اہم بلے باز کے طور پر اپنی ساکھ کو مزید بڑھایا۔ اس اننگز نے انھیں باضابطہ ایک روزہ کا درجہ دیا اور 1999ء کے کرکٹ ورلڈ کپ کے لیے انگلینڈ میں کینیا کی جگہ بک کی۔ یہ ٹِکولو کے لیے ایک اور کامیاب ورلڈ کپ تھا کیونکہ اس نے بھارت اور انگلینڈ کے خلاف 50 کی جوڑی بنائی تھی۔ 2002ء میں ٹِکولو کو کینیا کا نیا کپتان نامزد کیا گیا اور 2002ء کی آئی سی سی چیمپئنز ٹرافی میں 93 اور 69 رنز کی اننگز کے ساتھ آگے سے قیادت کی۔ ٹکولو نے 2003ء کرکٹ ورلڈ کپ کے سیمی فائنل میں کینیا کی قومی ٹیم کی قیادت کی۔ یہ ایک ایسے ملک کے لیے ایک بہت بڑا کارنامہ تھا جسے ٹیسٹ کا درجہ بھی نہیں دیا گیا، جسے اب بھی بین الاقوامی میدان میں کینیا کی بہترین کارکردگی قرار دیا جاتا ہے۔ 2004ء کی آئی سی سی چیمپیئنز ٹرافی کے خراب ہونے کے بعد، اس نے کپتانی چھوڑ دی اور اس کی بجائے اندرونی سیاست کے احتجاج میں کھلاڑیوں کی ہڑتال کی قیادت کی۔ ہڑتال نے ایک نئی حکومت کو مجبور کیا اور وہ کپتان کے طور پر واپس آئے۔ 2007ء میں وہ 100 ون ڈے گیمز اور 2,500 ون ڈے رنز بنانے والے ٹیسٹ نہ کھیلنے والے ملک کے پہلے کھلاڑی بنے۔ کپتان کے طور پر ان کی آخری پیشی، 2009ء کے آئی سی سی ورلڈ کپ کوالیفائر تھی، جہاں کینیا نے 2011ء کے کرکٹ ورلڈ کپ کے لیے جگہ حاصل کی۔ اگست 2010ء میں، ٹیم سے باہر ہونے اور یہ اشارہ دینے کے کئی ماہ بعد کہ وہ دوبارہ بین الاقوامی کرکٹ نہیں کھیلے گا، ٹکولو نے 2011ء کے ورلڈ کپ کے لیے اپنی دستیابی کا اعلان کیا۔ انھوں نے ورلڈ کپ کے بعد اپنی ریٹائرمنٹ کا اعلان کیا لیکن 42 سال کی عمر میں واپس آئے جب انھیں یو اے ای میں 2013ء کے آئی سی سی ورلڈ ٹوئنٹی 20 کوالیفائر کے لیے واپس بلایا گیا۔ تکولو نے ایشیا الیون کے خلاف افریقہ الیون کی نمائندگی بھی کی ہے۔ کینیا کی کرکٹ پر تکولو کے غلبے کو اچھی طرح سے اجاگر کیا گیا ہے کہ جنوری 2007ء تک اس نے ایک روزہ کرکٹ میں کینیا کے بلے باز کے نو میں سے سب سے زیادہ سکور بنائے۔ ٹکولو نے تین ایک روزہ سنچریاں بنائی ہیں۔ بنگلہ دیش کے خلاف 106*، برمودا کے خلاف 111 اور زمبابوے کے خلاف 102۔ وہ 90 کی دہائی میں تین بار آؤٹ ہو چکے ہیں۔

کوچنگ کیریئر[ترمیم]

جولائی 2012ء میں یہ اعلان کیا گیا تھا کہ تکولو کو یوگنڈا کی قومی ٹیم کا بیٹنگ کوچ مقرر کیا گیا ہے کپ افریقہ کوالیفائر۔ اس مدت کے دوران، یوگنڈا نے ٹی20 افریقی پریمیئر لیگ جیتی اور ورلڈ کرکٹ لیگ ڈویژن II کے لیے کوالیفائی کیا۔ انھیں کینیا کی قومی کرکٹ ٹیم کا عبوری کوچ نامزد کیا گیا تھا جب انھوں نے 2014ء کے آئی سی سی ورلڈ ٹوئنٹی 20 میں کینیا کے کوالیفائی کرنے میں ناکامی کے بعد ہیڈ کوچ کے طور پر رابن براؤن کی جگہ لی تھی۔ مئی 2016ء میں، ٹِکولو کو ورلڈ کرکٹ لیگ ڈویژن تھری سے پہلے یوگنڈا کی قومی کرکٹ ٹیم کا ہیڈ کوچ مقرر کیا گیا اور 2017ء میں ہونے والا ہے۔ وہ ٹیم کے ہیڈ کوچ کے طور پر خدمات انجام دے رہے ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]