شامی ترکمان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
شامی ترکمان
Image-D) Dervish, Syrian Peasant, Young Druse Woman, Karvass (Police Officer) in Damascus.jpg
کل آبادی
(۱۰۰ هزار تا ۲۰۰ هزار محل زندگی = حلب • دمشق • جزیره • حمات • حمص • لاذقیہ[1])
زبانیں
عربی • ترکی استانبولی[2][3] • ترکی آذربایجانی[4]
مذہب
اکثریت مسلمان سنی[5]
متعلقہ نسلی گروہ
ترکان اغوز (ترک‌ها • آذربایجانی‌ها • عراقی ترکمان‌)

شامی ترکمان، شامی ترک یا شامی آذربائیجان کو شامی ترک کہا جاتا ہے۔ وہ آذربائیجانی ترک زبان بولتے ہیں [4] اور استنبول ترک [2] اور بنیادی طور پر سنی مسلمان ہیں [5] اور شامی عربوں اور شامی کردوں کے بعد ملک کا تیسرا سب سے بڑا نسلی گروہ تشکیل دیتے ہیں۔


شام کو 11ویں صدی میں سلجوک ترکمان سلطنت نے فتح کیا اور پھر سلطنت عثمانیہ کے قبضے میں آگیا۔ اس کے بعد سے پہلی جنگ عظیم کے اختتام تک یہ سلطنت عثمانیہ کا حصہ رہا اور اس عرصے کے دوران ترکوں کی شام کی طرف ہجرت کا سلسلہ جاری رہا۔

بشار الاسد اور خانہ جنگی کے دور میں[ترمیم]

بشار الاسد کے زیر اقتدار شامی ترکمانوں کو ترک زبان میں کچھ لکھنے یا شائع کرنے کا حق نہیں تھا۔ حکومت نے ان یا دیگر نسلوں کو اقلیت کے طور پر تسلیم نہیں کیا اور عرب قوم کے اتحاد پر زور دینے کو ترجیح دی۔ حکومت مخالف مظاہروں (2011) کے آغاز کے فوراً بعد ترکمانوں نے ترکی کی حمایت سے (جو بشار الاسد کا کٹر دشمن ہے) حکومت کے خلاف مسلح جدوجہد شروع کر دی۔ شامی ترکمان جماعتیں بھی شامی ترکمان کونسل کی شکل میں اکٹھی ہوئیں۔ بشار الاسد کے خلاف قومی اتحاد سے وابستہ ایک کونسل۔ حالیہ برسوں میں، ترکمانوں نے کئی مسلح گروہ تشکیل دیے ہیں (جیسا کہ شامی ترکمان 2012 میں تشکیل دیا گیا تھا)۔ [6]

آبادی[ترمیم]

1961 کی مردم شماری میں ان کی آبادی کا تخمینہ 30,000 لگایا گیا تھا۔ [7] لیکن فی الحال شامی ترکمانوں کی آبادی کا کوئی واضح تخمینہ نہیں ہے، لیکن بہت سے ذرائع ان کی آبادی 100,000 [8] سے 200,000 تک بتاتے ہیں۔ ایک اور دعوی ان کی آبادی 750,000 سے 1.5 ملین تک رکھتا ہے۔ [9] تاہم، ترکمان نیشنل کونسل نے آبادی کا تخمینہ 3.5 ملین لگایا ہے۔ [10]

گیلری[ترمیم]

ذرائع[ترمیم]

  1. Commins 2004, 268.
  2. ^ ا ب Galié & Yildiz 2005, 18.
  3. Karpat 2004, 436.
  4. ^ ا ب http://www.ethnologue.com/language/AZB
  5. ^ ا ب Shora 2008, 236.
  6. ترکمان‌های سوریه که هستند؟ بی‌بی‌سی فارسی، ۵ آذر ۱۳۹۴
  7. Languages of Syria Ethnologue
  8. Phillips، David J. (1 January 2001). Peoples on the Move: Introducing the Nomads of the World. William Carey Library. صفحہ 301. ISBN 978-0-87808-352-7. اخذ شدہ بتاریخ 12 نومبر 2012. 
  9. Özkaya 2007.
  10. "نسخه آرشیو شده". ۲۹ ژانویه ۲۰۱۴ میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ ۳۰ ژانویه ۲۰۱۴. 
  • مشارکت‌کنندگان ویکی‌پدیا. «Syrian Turks». در دانشنامهٔ ویکی‌پدیای انگلیسی، بازبینی‌شده در June ۱۰, ۲۰۱۱.