شبینہ مصطفی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

شبینہ مصطفیٰ ایک پاکستانی سماجی کاروباری اور کراچی کے نیلم کالونی میں واقع دی گیراج اسکول کی بانی ہیں جو کراچی میں ان پسماندہ بچوں کو تعلیم فراہم کرتی ہیں جو تعلیمی اخراجات کے متحمل نہیں ہوسکتی ہیں۔ [1] [2]

Shabina Mustafa
معلومات شخصیت
مقام پیدائش کولکاتا  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ اکیڈمک،  سماجی کارکن  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

تعلیم[ترمیم]

شبینہ نے 1972 میں جامعہ کراچی سے سوشیالوجی میں بیچلر کیا۔

زندگی[ترمیم]

شبینہ مصطفیٰ بھارت کے شہر کولکتہ میں پیدا ہوئیں۔ بچپن میں ہی شبینہ بنگلہ دیش شفٹ ہوگئیں۔ وہ اپنے پانچ بہن بھائیوں میں سب سے چھوٹی تھیں۔ شبینہ نے سینٹ فرانسس زاویرز کانونٹ اور ہولی کراس کالج میں تعلیم حاصل کی۔ [3] [4] بعد میں اس نے فلائٹ لیفٹیننٹ سید صافی مصطفیٰ سے شادی کی۔ شبینہ اپنی یونیورسٹی میں پڑھ رہی تھیں جب انہیں خبر ملی کہ 1971 میں ان کے شوہر گمشدہ ہو گئے تھے۔ شبینہ نے اس کے ساتھ صرف اٹھارہ ماہ کی شادی کی تھی۔ اس وقت وہ 21 سال کی تھیں اور ان کا ایک بچہ تھا۔ تاہم شبینہ نے جامعہ کراچی میں اپنی تعلیم جاری رکھی۔ [5]

فارغ التحصیل ہونے کے بعد ، شبینہ کو موری پور کے پاک فضائیہ کے اڈے مسرور میں استاد کی حیثیت سے ملازمت ملی۔ وہ اور ان کا بیٹا سید زین مصطفیٰ ابتدا میں ایک بیڈروم کے اپارٹمنٹ میں رہتے تھے۔ اس کے بعد وہ اپنی اراضی بیچنے کے قابل ہونے کے بعد شبینہ اپنے موجودہ گھر میں چلی گئیں۔ اس کے بعد شبینہ نے سعودی عرب ایئر لائنز میں 32 یا 32 سالوں میں ریزرویشن ایجنٹ کی حیثیت سے کام کیا۔ [6]

شبینہ کے شوہر کا خواب تھا کہ وہ معاشرے میں پسماندہ بچوں کے لیے اسکول کھولے۔ تاہم ، لاپتہ ہونے کے بعد ، شبینہ کو خدشہ تھا کہ اس کے شوہر کا خواب پورا نہیں ہوگا۔ [7] 1999 میں ، شبینہ کا سامنا ایک ایسی لڑکی سے ہوا جس کو سلائی کلاس میں داخلے سے انکار کر دیا گیا تھا کیونکہ وہ پڑھ نہیں سکتی تھی۔ اس کی والدہ نے شبینہ سے مدد کی درخواست کی کہ اگر وہ اپنی گیراج میں اپنی بیٹی اور آس پاس کے دیگر بچوں کو تعلیم دیں۔ [8] [9] اس سے شبینہ کو ان بچوں کے لیے سیکھنے کی جگہ کھولنے کی ترغیب ملی جو تعلیم کے متحمل نہیں ہوسکتے تھے اور اس نے اپنے گیراج میں بچوں کو پڑھانا شروع کیا۔ پہلی کلاس کا آغاز 14 بچوں سے ہوا۔ [10] [11]

ابتدا میں ، شبینہ کے اسکول میں فنڈنگ نہیں تھی اور نہ ہی کوئی فرنیچر تھا اور نہ ہی کلاس روم کا کوئی سامان۔ شبینہ کے دوستوں نے اس اسکول کے لیے استعمال ہونے والے کچھ لکڑی ، پتھر ، پنسل اور کھرچنے والے کاغذ بچائے۔ شبینہ نے اپنے ہاتھ سے تیار کردہ ورزش کی کتابیں بھی استعمال کے لیے بنائیں۔ شبینہ صبح کام پر جاتی تھی اورپھر واپس بچوں کو پڑھانے آتی تھیں۔ [12] [13] ہیپی ہوم اسکول کی پرنسپل غزالہ نظامی نے شبینہ کو بقیہ پنسلیں اور ورزش کی کتابیں ارسال کیں۔ کچھ اسکولوں نے وہ اخبارات بھی عطیہ کیے جو شبینہ نے اپنے اسکول کے لیے اسٹیشنری خریدنے کے لیے بیچی تھیں۔ اس کے بعد شبینہ نے اپنے نئے اسکول کے لیے کفیلوں کی تلاش شروع کردی۔ اس نے زیادہ سے زیادہ بچوں کی تربیت کے لیے ایک بڑی جگہ کرایہ پر لی۔ جب اس کے اسکول میں مزید فنڈز پہنچے تو ، شبینہ نے میڈیکل پروگرام ، بالغوں میں خواندگی کا پروگرام ، اساتذہ کی تربیت اور کھانے کے پروگرام شروع کیے۔ [14] [15]

2002 تک ، شبینہ کا اسکول بھیڑ بھرا ہوا تھا۔ شبینہ کے دوست عباس واوڈا کو شبینہ کے اس اقدام کا علم ہوا اور اس نے سالانہ 10 بچوں کی مدد کرنا شروع کردی۔ [16] [17]

2006 میں ، صافی بینیولینٹ ٹرسٹ نے گیراج اسکول کو سنبھال لیا اور اس کی توسیع کے لیے اس کی حمایت کرنا شروع کردی۔ [18] شبینہ 1999 سے صافی خیراتی ٹرسٹ میں بورڈ آف ٹرسٹی کی صدر ہیں۔

گیراج اسکول اب تین منزلوں پر مشتمل ہے۔ اس نے اب 500 سے زائد طلبہ کو تعلیم فراہم کی ہے۔ اسکول نیلم کالونی میں واقع ہے۔ بچوں کو تعلیم کے ساتھ ساتھ صاف پانی ، غذائیت سے متعلق غذا ، دوائیں اور صحت سے متعلق فوائد تک رسائی حاصل ہے۔ [19] اسکول میں ایک سالانہ تھیٹر شو کا انعقاد بھی کیا گیا ہے جو بستیوں میں رہنے والے طلبہ کو غیر نصابی مطالعے کا موقع فراہم کرتا ہے۔ [20] اسکول میں بچوں کے لیے فیلڈ ٹرپ کا بھی اہتمام کیا جاتا ہے۔ [21]

شبینہ کا اسکول پانچ انگلیوں کے فارمولے کی پیروی کرتا ہے جو اسکول کا مشن بھی ہے: " طور (تربیت) ، طریقہ (نقطہ نظر) ، تربیت (گرومنگ) ، تعلیم (تعلیم) اور ترقی (ترقی)۔ " [22] [23]

گیراج اسکول تین شفٹوں میں کام کرتا ہے۔ صبح کی شفٹ باقاعدگی سے طلبہ کی پری نرسری کی سطح سے دسویں جماعت تک ہوتی ہے اور انہیں آغا خان بورڈ اور سندھ بورڈ کے امتحان کے لیے تیار کیا جاتا ہے۔ [24] [25]

ایوارڈ[ترمیم]

تعلیم پر کام کرنے پر شبینہ کو 2011 میں ایزم ایوارڈ ملا۔ [26]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Release |، Press. "FPCCI Women Entrepreneur Committee celebrated Women Day". CustomNews.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  2. Muzaffar، Erum Noor. "Say yes to women power". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  3. "The Garage School Jobs in Pakistan". RIGHTJOBS.PK (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  4. "The widow who educated 600 children in her garage". gulfnews.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  5. "Story of Mrs. Shabina Mustafa – The Garage School" (بزبان انگریزی). 09 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  6. Desk، Web. "#DefenceAndMartyrsDay 2019: A Son's Tribute to His Father | Brandsynario" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  7. "Empowering The Powerless | Feature - MAG THE WEEKLY". magtheweekly.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  8. "Dawood Global Foundation". Dawood Global Foundation (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  9. "Worldwide". association-happykids.org. 10 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  10. "‎dhaani: "I am a Product of the Society " - Shabina Mustafa - Episode 74 on Apple Podcasts". Apple Podcasts (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  11. ""I am a Product of the Society " - Shabina Mustafa - Episode 74 by dhaani • A podcast on Anchor". Anchor (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  12. "The Garage School – I Am the Change" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  13. "Activities | Rotary Club of Karachi | Rotary District 3271 – Pakistan. Chartered 1933 | Page 21" (بزبان انگریزی). 09 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  14. "Food for workers starving in Pakistan due to COVID - HasanaH.org". beta.hasanah.org (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  15. "IBA Women Entrepreneurship Program". ced.iba.edu.pk. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  16. "The Garage School". i-Care Foundation (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  17. "Garage schooling in Clifton since '99 | Pakistan Today". www.pakistantoday.com.pk. 09 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  18. "The Garage School – Kalia Group" (بزبان انگریزی). 09 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  19. "Positive Pakistani: Oasis for the underprivileged". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 2012-02-19. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  20. Salman، Peerzada (2018-09-29). "Garage School students entertain theatre enthusiasts with Aladdin". Images (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  21. "Ahsan Khan talks about social causes close to his heart". Something Haute (بزبان انگریزی). 2018-09-17. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  22. "Kolachi, NOS, The News International". jang.com.pk. 08 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  23. "Inspiration Pakistan: The Garage School". All Things Pakistan. 2009-05-31. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  24. "The Garage School Archives". The Karachiite (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  25. rajesh. "Projects Supported". The Ekta Foundation (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020. 
  26. "British Pakistanis Pick Up Azm Awards". www.newswire.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2020.