صدر یوکرین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
صدر یوکرین
Президент України
Flag of the President of Ukraine.svg
Petro Poroshenko 2014-06-26.jpg
موجودہ
پیٹرو پوروشینکو

7 جون 2014ء سے
رہائش Mariyinsky Palace (ceremonial)
13 دیگر available for use
تقرر کُننِدہ انتخابات
مدت عہدہ 5 سال
renewable once, consecutively
تاسیس کنندہ Leonid Kravchuk,
5 December 1991[d]
تشکیل Law "On the President of the Ukrainian SSR," 5 July 1991[a]
تنخواہ 9,296 فی ماہ[1][2]
ویب سائٹ president.gov.ua

صدر یوکرین (یوکرینی: Президент України, Prezydent Ukrayiny) یوکرین سربراہ ریاست ہوتا ہے۔ صدر بین الاقوامی تعلقات میں قوم کی نمائندگی، ریاست کے غیر ملکی سیاسی سرگرمی کا انتظام، مذاکرات کا انعقاد اور بین الاقوامی معاہدوں پر دستخط کرنے کا مجاز ہوتا ہے۔ صدر براہ راست انتخابات کے ذریعے یوکرینی شہریوں میں سے 5 سال کی مدت کے لیے (چاہے وہ صدارتی انتخاب ابتدائی ہوں یا طے شدہ)، ایک شخص صدر صرف دو بار ہی بن سکتا ہے۔[3]

تاریخ[ترمیم]

پہلے صدر میخائیلو ہروشیفسکئی (1917–18)۔
دوسرے صدر وولودیمیر وینی چینکو (1918–19)۔

یوکرین کی صدارت اور ملک کا بحران[ترمیم]

یوکرین کے بحران کا آغاز وکٹر يانكووچ کے حکومت کی طرف سے یورپ کے ساتھ ہونے والے تجارت و تعامل معاہدے (Trade and Association Agreement) کو منسوخ کرنے اور اس کی جگہ روس کے ساتھ اور قریبی تعلقات قائم کرنے کی کوشش کے بعد ہوا۔ ملک کی يانكووچ حکومت کی طرف سے روس سے نزديكياں بڑھانے سے یوکرین کا وہ طبقہ ناراض ہو گیا جو روس سے فاصلے رکھنا چاہتا ہے اور مغربی ممالک سے قریبی بڑھانے کے حق میں ہے۔ مندرجہ بالا معاہدہ منسوخ کرنے کے بعد یوکرین کے شمالی قوم پرست، دائیں بازو اور شدت پسند عناصر نے یوکرین کے دار الحکومت کیف میں بڑے پیمانے پر تشدد احتجاج اور مظاہرے شروع کر دیے۔ معاملہ بگڑتا چلا گیا اور فروری 2014ء میں یوکرین کی پارلیمنٹ کی طرف سے صدر کو معزول کر دیا گیا۔ مندرجہ بالا معاہدے کے لیے انہوں نے پہلے سے اصولی رضامندی دی تھی لیکن بعد میں انہوں نے روس سے تجارتی تعلقات خراب ہونے کا خدشہ کی بنیاد پر اس معاہدے سے انکار کر دیا تھا۔ پر تشدد احتجاج یوکرین کے دار الحکومت کیف کی آزادی چوک پر ہو رہا تھا جسے میدان (Maidan) بھی کہا جاتا ہے۔ اس پر تشدد احتجاج کو روکنے کے لیے يانكووچ نے احتجاج مخالف قانون (Anti-Protest Law) بھی بنایا جسے بعد میں منسوخ کر دیا گیا۔

تشدد ختم کرنے کے لیے بڑھتے ہوئے بین الاقوامی دباؤ کے درمیان يانكووچ اور حزب مخالف ٹیم رہنماؤں کے درمیان فروری 2014ء میں ایک معاہدہ کیا گیا جس میں جلد انتخابات کروانے، ایک نیا آئین بنانے اور ملی جلی حکومت (Unity Government) بنانے کی بات کہی گئی تھی لیکن پارلیمنٹ نے جلد ہی صدر کو معزول کر دیا۔ نئی قائم عبوری حکومت نے يانكووچ کی گرفتاری کا حکم جاری کر دیا۔ ان کے خلاف مزاحمت اور مظاہروں میں حصہ لینے والے لوگوں کی بڑی تعداد میں قتل کا مجرم ٹھہرایا گیا۔ ان حالات میں يانكووچ ملک چھوڑ کر روس چلے گئے۔ انہیں روس نواز رہنما تصور کیا جاتا رہا ہے لیکن ان کی حکومت کی مدت کے دوران انہوں نے خارجہ پالیسی کے تناظر میں یورپی یونین اور روس کے درمیان توازن قائم کرنے کی کوشش کی تھی۔ روس اب بھی يانكووچ کو یوکرین جائز صدر تسلیم کرتا ہے۔ یوکرین کے موجودہ واقعات سے یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں ہے کہ غیر فعال غلبہ، سیاست دانوں کی باہمی مسابقت، بڑے پیمانے پر بدعنوانی اور اقتصادی گراوٹ وغیرہ کی وجہ 2004ء میں ہوا اورنج انقلاب (Orange Revolution) کے سائے سے یوکرین اب بھی پوری طرح نہیں نکل پایا ہے۔ یوکرائن کے جنوبی اور مشرقی حصوں میں جہاں روسی بولنے والے لوگ رہتے ہیں وہ جذباتی طور پر روس سے منسلک ہیں۔ وہاں ان کے خلاف پرتشدد واقعات ہو رہی ہیں۔ روس نے اس طرح کے واقعات کو روکنے کے لیے اپنی فوج کو چوکنا رہنے کو کہا ہے۔ دوسری طرف امریکا روسی بولنے والے لوگوں کے ساتھ ہو رہے تشدد واقعات کو روکنے کے لیے اقوام متحدہ کی قیادت میں بین الاقوامی نگرانی (International Monitoring Misson) مشن کی تعیناتی کا مطالبہ کر رہا ہے جسے روس نے اب تک سنجیدگی سے نہیں لیا ہے۔

یوکرین اور روس کے درمیان بڑھتی ہوئی کشیدگی کے درمیان یوکرائن کی سابقہ وزیر اعظم ارسیني ياتسیيك طرف روس سے بڈاپسٹ مفاہمت کی یادداشت (Budapest Memorandum) کا احترام کرنے کی اپیل کی گئی تھی۔ اس مفاہمت کی یادداشت 1994ء میں یوکرائن کی طرف سے جوہری ہتھیاروں کے عدم پھیلاؤ سے متعلق سمجھوتہ پر دستخط کرنے سے متعلق ہے۔ یوکرین کے علاوہ اس مفاہمت کی یادداشت پر روس، برطانیہ اور امریکا کی طرف سے دستخط کیے گئے تھے۔ اس کے ذریعے یوکرین کو تحفظ کا یقین دلایا گیا تھا۔ اس کی آزادی، خود مختاری کا احترام کرنے اور اس کے علاقائی سالمیت کے خلاف طاقت کے استعمال سے دور رہنے کی بات کہی گئی ہے۔ مگر اس کے بعد یوکرین میں یورپی یونین کے حامی اور روس نواز شہریوں کے درمیان تنازع بڑھتا گیا تھا۔[4]

روس کی طرف سے کریمیا کا الحاق[ترمیم]

بڑھتے ہوئے تشدد کے درمیان یوکرین کی کریمیا میں روسی بولنے والے لوگ یوکرین سے الگ ہونے اور روس میں شامل ہونے کی مخالفت مظاہرے کرنے لگے۔ پرتشدد واقعات بھی پیش آئے۔ 16 مارچ 2014ء کو وہاں ریفرنڈم کرایا گیا جس میں کریمیا کے لوگوں سے پوچھا گیا تھا کہ کیا وہ روس میں ضم کرنا چاہتے ہیں یا وہ زیادہ خود مختاری کے ساتھ یوکرین میں ہی رہنا چاہتے ہیں۔ ریفرنڈم میں شامل 95.5 فیصد لوگوں نے روس میں ضم ہونے کی حمایت کی۔ روس کے صدر ولادیمیر پوتین نے کریمیا کے لوگوں کی خواہشات کا احترام کرتے ہوئے انضمام سے متعلق حکم خط پر 21 مارچ کو دستخط کر دیے۔ یوکرائن حامی كريميائی لوگوں نے اس ریفرنڈم کا بائیکاٹ کیا۔ یورپی یونین اور امریکا نے اسے غیر قانونی قرار دیا اور اس کی مذمت کی۔ انہوں نے اس کے نتائج کو ماننے سے انکار کر دیا۔ امریکا نے کریمیا کے ریفرنڈم پر کہا کہ یہ یوکرین کے آئین اور بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی ہے اور اس کو روسی فوجیوں کے دباؤ میں کرایا گیا ہے اور یہ یوکرین کی خود مختاری اور سالمیت پر چوٹ کی طرح ہے۔ روسی فوجوں نے فروری 2014 میں ہی کریمیا کو اپنے کنٹرول میں لے لیا تھا۔ امریکا کا کہنا تھا کہ روس کو مشرقی یوکرین میں ایک بین الاقوامی نگرانی مشن (International Monitoring Mission) کی حمایت کرنا چاہیے۔ روس کی طرف سے رد عمل نہ دینے کے بعد روس پر امریکا کی قیادت میں اقتصادی اور سفارتی پابندیاں لگائے گئے جنہیں 28 اپریل 2014 کو اور سخت بنا دیا گیا اور اس کے تحت پوتین سے نزدیکی رکھنے والے سیاست دانوں، سفارتکاروں، فوج افسروں اور صنعت کاروں پر سخت اقتصادی پابندیاں لگا دیے گئے۔ ان میں امریکا آنے پر پابندی لگا دی گئی اور انہیں ویزا جاری کرنا بند کر دیا۔ روس کو ترقی یافتہ ممالک کے گروپ جی -8 سے نکال دیا گیا ہے۔ جی -8 اجلاس جون مہینے میں روس فہرست میں ہونے والا تھا لیکن اب اس گروپ (جی -7) کے اجلاس برسلز میں منعقد کرنے کا فیصلہ ہوا ہے۔ کریمیا میں 58 فیصد لوگ روسی بولنے والے ہیں، باقی یوکرین اور تاتاری (Tatar) ہیں۔ تاتاروں کو سوویت یونین کے رہنما جوزف اسٹالن کی طرف سے مشرق ایشیا جلاوطن کر دیا گیا تھا اور وہ سوویت یونین کی تحلیل کے بعد ہی یوکرین واپس لوٹ سکے تھے۔ وہ اب بھی یوکرین کے ساتھ ہی رہنا چاہتے ہیں۔ کریمیا 1954ء تک سوویت یونین کا ہی حصہ تھا۔ 1954 میں سوویت یونین کے رہنما نیکیتا خروشچیف (Nikita Khrushchev) نے اسے یوکرین کو تحفہ کی شکل میں دے دیا تھا۔ تب یوکرین سوویت یونین میں ہی شامل تھا۔

کریمیا کے علاوہ جنوب مشرقی شہر دانیتسك (Donetsk)، سلووياسك كھاركو، لهاسك میں بھی احتجاج اور مظاہرے ہوئے تھے۔ سلووياسك کو بھی روسی حامی لوگوں نے اپنے کنٹرول میں لے لیا ہے۔ اس کے علاوہ بھی یوکرین کے کئی شہروں میں احتجاج اور مظاہرے جاری ہیں۔ یوکرین کے واقعات سے امریکا اور روس سرد جنگ کے بعد ایک بار پھر آمنے سامنے کھڑے دکھائی دے رہے ہیں۔ امریکا اور یورپی یونین کے ملک روس پر کئی طرح کی پابندیاں لگا رہے ہیں۔ لیکن جس مقدار میں امریکا پابندی لگانا چاہتا تھا، یورپی یونین اس کے حق میں نہیں تھے کیونکہ یورپی یونین کے ملک تیل، گیس جیسی ضروری مواد کے معاملے میں روس پر انحصار کرتے ہیں۔ یورپی یونین اور روس کے درمیان سالانہ 460 بلین ڈالر سے زیادہ کا کاروبار ہوتا ہے جبکہ امریکا اور روس کے درمیان محض 38 بلین ڈالر کا ہی سالانہ کاروبار ہے۔ یورپ اپنی ضرورت کی 30 فیصد گیس روس سے حاصل کرتا ہے۔ بعض یورپی ملک تو اپنی خود کی ضرورت کی سو فیصد گیس روس سے ہی حاصل کرتے ہیں۔ ان وجوہات سے یورپی یونین کی پابندیوں کے معاملے میں اس طرح قدم نہیں اٹھا رہا تھا جیسے امریکا اٹھا رہا تھا۔ یورپی یونین کے ممالک کا یہ کہنا ہے کہ یورپی سلامتی و تعاون کی تنظیم (Organisation for security and Co-operation in Europe- OSCE) سے یوکرائن کے متنازع علاقوں میں زیادہ تعداد میں سپروائزر بھیجے جانے چاہیے۔ دوسری طرف روس کا کہنا ہے کہ یوکرین کی حکومت بنیاد پرست گروپوں کے ساتھ مل کر یوکرین کے مشرقی اور جنوب مشرقی حصوں میں کشیدگی اور عدم استحکام پیدا کر رہا ہے۔ اس نے الزام لگایا کہ مغربی ممالک یوکرین میں پرتشدد جدوجہد اور عدم استحکام کو فروغ دے رہے ہیں۔ اب یوکرائن میں ایک فوجی نگرانی مشن (Military Observation Mission) موجود ہے لیکن اسے کریمیا میں جانے سے روک دیا گیا ہے۔ یوکرین نے یورپی سلامتی تعاون تنظیم سے ایک سفارتی نگرانی مشن (Diplomatic Monitoring Mission) بھیجنے کی مانگ بھی کی تھی۔

روس کے وزیر خارجہ سرگئی لاوروف نے 16 اپریل 2014 کو یوکرائن میں کشیدگی کم کرنے کے لیے روس، امریکا، یورپی یونین اور یوکرین کے درمیان جنیوا معاہدہ ہونے کی بات کہی تھی۔ جنیوا معاہدے کے تحت چار اہم نکات پر زور دیا گیا تھا، جس میں تمام غیر قانونی فوجی تنظیموں کو تحلیل کرنا، غیر قانونی طور پر سرکاری اور دیگر عمارتوں سے قبضے کو ختم کرنا اور ان عمارتوں کو ان کے جائز مالکان کو لوٹانا، تمام حکومت مخالف مظاہرین کو معافی دینا اور روسی بولنے والے علاقوں کو زیادہ خود مختاری دینا شامل تھے۔ ان نفاذ کی نگرانی یورپی سلامتی و تعاون کی تنظیم کے مبصرین کی طرف سے کیا جانا تھا۔ لیکن یہ مؤثر نہیں ہو سکا۔ یورپی یونین کے جرمنی اور فرانس جیسے رکن ملک اب جنیوا -2 کا مطالبہ کر رہے ہیں تاکہ یوکرائن بحران کا جلد سے جلد حل کیا جا سکے۔[4]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

حواشی

a.^ As President of the Ukrainian Soviet Socialist Republic.

b.^ Per Chapter V, Article 103 of the Constitution, the President is allowed to serve a maximum of two full 5-year terms. However, in 2003, the Constitutional Court of Ukraine permitted then-President Leonid Kuchma to run for a third term in the 2004 presidential election (he chose not to run). "Summary to the Decision no. 22-rp/2003 of the Constitutional Court of Ukraine as of 25 December 2003" (Microsoft Word document)۔ Constitutional Court of Ukraine۔ 25 December 2003۔ اخذ کردہ بتاریخ 22 March 2009۔ 

C.^ Official Ukrainian text of the oath: "Я, (ім'я та прізвище), волею народу обраний Президентом України, заступаючи на цей високий пост, урочисто присягаю на вірність Україні. Зобов'язуюсь усіма своїми справами боронити суверенітет і незалежність України, дбати про благо Вітчизни і добробут Українського народу, обстоювати права і свободи громадян, додержуватися Конституції України і законів України, виконувати свої обов'язки в інтересах усіх співвітчизників, підносити авторитет України у світі." Source: Constitution of Ukraine (Ukrainian زبان میں)۔ Verkhovna Rada of Ukraine http://zakon5.rada.gov.ua/laws/show/254к/96-вр/page2 |url= کو ایک عنوان کی ضروت ہے (معاونت)۔ اخذ کردہ بتاریخ 13 December 2008۔ 

D.^ Although Leonid Kravchuk's official inauguration ceremony was conducted on 22 August 1992, he carried out most of the presidential responsibilities temporarily ceded to him as Chairman of the Verkhovna Rada until 5 December 1991 when he became President.

حواشی
  1. (ru زبان میں)۔ obozrevatel.com۔ 17 June 2014 http://obozrevatel.com/politics/67359-zarplata-poroshenko-budet-na-tret-menshe-chem-u-yanukovicha.htm۔  |title= غائب یا خالی (معاونت)
  2. [Poroshenko and Lozhkin's salaries have become known] |trans-title= requires |title= (معاونت)۔ Ukrainian Pravda (uk زبان میں)۔ 4 December 2014۔ اخذ کردہ بتاریخ 26 January 2016۔ 
  3. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ New Ukrainian president 5-year term نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  4. ^ ا ب Ukraine-crisis-and-India

بیرونی روابط[ترمیم]

Balakiryeva, O. (2014). Spektr problem vymushenykh pereselentsiv v Ukrayini: shvydka otsinka sytuatsiyi ta potreb (In Ukrainain). Retrieved from: http://www.uisr.org.ua/news/36/83.html

  • Bašić, S. (2015). Educating for Peace in the Aftermath of Genocide: Lessons (not) learnt from Bosnia. Social Dialogue, 10, 22–25. Beebe, J. (1995). Basic Concepts and Techniques of Rapid Appraisal. Human Organization, 54, 1, 42-51.

Becker, D. (2006). Die Erfindung des Traumas – verflochtene Geschichten. Freiburg: Kore. Canning, V. (2013). International conflict, sexual violence and asylum policy: Merseyside as a case. Critical Social Policy, 34 (1), 23–45. Chaparro-Pacheco, R., Pinto-Velásquez, E. (2015). A historical approach to social work’s responses to the Colombian armed conflict context. Social Dialogue, 10, 50–59.

  • Cox, D. & Pawar, M. (2006). The Field of Displacement and Forced Migration: Programs and Strategies. International Social Work: Issues, Strategies, and Programs. London: Sage, 291–323.
  • Demchenko, I. et al. (2014). Rezyume analytycheskoho otcheta po rezul'tatam operatsyonnoho yssledovanyya «VYCh-servys dlya vynuzhdennvkh pereselentsev yz chysla uyazvymykh k VYCh-ynfektsyy hrupp» (In Russian). Kyiv: International HIV/AIDS Alliance in Ukraine.
  • Domenilli, L. (2002). Anti-Oppressive Social Work Theory and Practice. New York: Palgrave Macmillan.

Doucet, D. & Denov, M. (2012). The Power of Sweet Words: Local Forms of Intervention with War-affected Women in Rural Sierra Leone. International Social Work, 55(5), 612–628.

  • Ferguson, I. (2007). Reclaiming Social Work. London: Sage.

Frederico, M. M. & Picton, C.J. (2007). Building Community Following Displacement due to Armed Conflict. International Social Work, 50, 2, 171–184.

  • Freire, P. (1990). A critical understanding of social work. Journal of Progressive Social Services, 1 (1), 1–10.

21 Armed Conflict in Ukraine and Social Work Response to It SHCS Journal Volume 2 No. 1, 2015: Conflict and the Social Body

  • Hines, D. & Balletto, R. (2002). Assessment of Needs of Internally Displaced Persons in Colombia. – London: Overseas Development Institute.
  • IFSW (2012a). Displaced Persons. Retrieved from: http://ifsw.org/policies/displaced-persons.
  • IFSW (2012b). The Global Agenda for Social Work and Social Development. Retrieved from: www.globalsocialagenda.org.
  • Ioakimidis, V. (2015). The two-faces of Janus: Rethinking social work in the context of conflict. Social Dialogue, 10, 6 -11.
  • IOM (2014). IOM Supports Women Displaced in Ukraine. Retrieved from: http://www.iom.org.ua/en/iom-supports-women-displaced-ukraine Jacobsen, K. & Landau, L. B. (2003). The Dual Imperative in Refugee Research: Some Methodological and Ethical Considerations in Social Science Research on Forced Migration. Disasters, 27, 1, 185–206.
  • Jones, C. & Lavalette, M. (2013) Two Souls of Social Work. Critical and Radical Social Work, Vol. 1, no. 2 (2013), p. 147-165.

Kaldor, M. (2000). Neue und alte Kriege. Gewalt im Zeitalter der Globalisierung. Frankfurt am Main: Suhrkamp.

  • Kang, H.-K. (2013). Claiming Immigrant Cultural Citizenship: Applying Postcolonial Theories to Social Work Practice with Immigrants. Critical and Radical Social Work, 1, 2, 233–245.
  • Lai, K. & Toliashvili, B. (2010). Community-based Programme for War-affected Children: the Case of Georgia. Social Work and Social Policy in Transition, l(2), 92–118.
  • Lavalette, M. & Ferguson, I. (2007) Democratic language and neo-liberal practice: The problem with civil society. International Social Work, 50, 447–459.
  • LHSI (2015). Research of the needs of internally displaced persons in Ukraine. Retrieved from: http://lhsi.org.ua/index.php/en/home-en-gb/43-lhsi-invites-you-to-read-the-full-text-of-the-research-of-the-needs-of-internally-displaced-persons-in-ukraine
  • Lindgren, E. R. (2013). The Internally Displaced People of Colombia. Goteborgs Universitet.
  • Lorenz, W. (1993). Social work in a changing Europe. London: Routledge
  • 22 Armed Conflict in Ukraine and Social Work Response to It
  • SHCS Journal Volume 2 No. 1, 2015: Conflict and the Social Body
  • Mahdi, S. (2007). Where do IDPs Go? Evidence of Social Capital from Aceh Conflict and Tsunami IDPs. Paper for the First International Conference of Aceh and Indian Ocean Studies (24 – 27 February 2007).
  • McDermott, D. (2014). The two souls of social work: exploring the roots of ‘popular social work’ – popular or radical social work? Critical and Radical Social Work Critical and Radical Social Work, 2(3), 381–384.
  • McLaughlin, K. (2008). Social Work, Politics and Society: From radicalism to orthodoxy. Bristol, Policy Press.
  • Mitrokhin, N. (2015) Infiltration, Instruction, Invasion: Russia’s War in the Donbass. Journal of Soviet and Post-Soviet Politics and Society, 1, 1, 219–250.
  • MSPU, Ministry of Social Police of Ukraine (2015). Information for Internally Displaced People. Retrieved from: http://www.mlsp.gov.ua.
  • Petrini, B. (2014). Employment and Livelihoods of Sudanese Refugees in Cairo. Oxford Monitor of Forced Migration, 4, 1, 51–56.
  • Pyles, L. (2007). Community organizing for post-disaster social development. Locating social work. International Social Work, 50, 3, 321-333.
  • Quintanilla J., Parafeniuk O., Moroz V. (2015). Understanding Information and Communication Needs Among IDPs in Eastern Ukraine: Trapped in a Propaganda War. Abandoned. Frustrated. Stigmatized . Retrieved from: http://www.cdacnetwork.org/tools-and-resources/i/20150211141736-dcj5u
  • Ramon, S. & Maglajlic, A. (2012). Social Work, Political Conflict and Displacement. The SAGE Handbook of International Social Work, London: SAGE, 311–324.
  • Ramon, S. et al. (2006). The Impact of Political Conflict on Social Work: Experiences from Northern Island, Israel and Palestine. British Journal of Social Work, 36, 435–450.
  • Sadan, E. (1997). Empowerment and Community Planning: Theory and practice. Tel Aviv: HakibbutzHameuchad Publishers.
  • Seifert, R. (2015). Social Work and Armed Conflict: How the Everyday Practice of Social Work is Affected by International Politics. Social Dialogue, 10, 44-47.
  • Semigina, T. & Boyko, O. (2014). Social work education in post-socialist and post-modern era: case of Ukraine. In Global social work education- crossing borders blurring boundaries. Sydney: Sydney University Press, 257 – 269.
  • 23 Armed Conflict in Ukraine and Social Work Response to It
  • SHCS Journal Volume 2 No. 1, 2015: Conflict and the Social Body
  • Semigina, T., Gryga, I., &Volgina, O. (2005). Social Work Education in Ukraine. In F. Hamburger, S, Hirschler,G. Sander, & M. Wobcke (Ed.) AusbildungforsozialeBerufe in Europa. Band 3: MitBeitragenuberFinnland, Russland, Belgien (Flandern), Frankreich, Luxemburg, Tschechien, Ukraine, Ungarn, Rumanien, Moldawien, Liechtenstein. Frankfurt am Main: Institut fur Sozialarbeit und Sozialpadagogik, 152-170.
  • Sewpaul, V. (2015). Alien demons: Xenophobia and violence in South Africa. Social Dialogue, 10, 18-21.
  • Staples, L. H. (1990). Powerful Ideas About Empowerment. Administration in Social Work, 14(2), 29–42.
  • Staub-Bernasconi, S. (2004). Kriegerische Konflikte und Soziale Arbeit - ein altes und neues Thema der Sozialarbeit. In Ruth Seifert (Hsg.), Soziale Arbeit und kriegerische Konflikte. Muenster, LIT. Soziologie: Forschung und Wissenschaft, S. 9-19.
  • Stubbs, P. (1999). From Pathology to Participation? Reflections on Local Community Development Programmes in Bosnia and Croatia and Prospects for the Future, IUC Journal of Social Work Theory and Practice, 1.
  • UN (2004). Guiding Principles of International Displacement. Retrieved from: http://www.unhcr.org/43ce1cff2.html
  • UN (1999). Manual on Field Practices of Internal Displacement. Retrieved from: http://www.refworld.org/pdfid/460ce2f72.pdf
  • UN (1992). Internally displaced persons. Retrieved from: http://www.refworld.org/docid/3b00f0e71c.html
  • UN (2014).UNDP-EU project will support recovery and help IDPs in Eastern Ukraine. Retrieved from: http://www.un.org.ua/en/information-centre/news/1919 .
  • UNHCR (2015). Internal Displacement Statistics in Ukraine. Retrieved from: http://unhcr.org.ua/en/2011-08-26-06-58-56/news-archive/1231-internally-displaced-people.
  • UNIAN (2015) UN update: Death toll in Donbas conflict nearing 7,000 men. Retrieved from: http://www.unian.info/war/1106015-un-update-death-toll-in-donbas-conflict-nearing-7000-men.html
  • Walter, J. & Ahearn, F. L.Jr. (2008). Displaced People. The Encyclopedia of Social Work. Washington, DC: NASW, 4, 73–76.
  • 24 Armed Conflict in Ukraine and Social Work Response to It
  • SHCS Journal Volume 2 No. 1, 2015: Conflict and the Social Body
  • Webb, S. A. (2003). Local orders and global chaos in social work. European Journal of Social Work, 6(2), 191–204.
  • Woodiwiss, A. (2005). Human Rights. Abingdon: Routledge.

سانچہ:Politics of Ukraine (small) سانچہ:Presidency of Ukraine سانچہ:Ukraine topics سانچہ:Europe heads of state and government