طرغت پاشا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
طرغت پاشا
Dragut Monument Palm Globe Istanbul.jpg
Monument to Turgut Reis in Istanbul
Depicted with Palm Resting on Globe
مقامی زبان میں Turgut Reis, "Torghoud"
عرفی نام Dragut Rais, Darghouth
Arabic: درغوث
Italian: Dragura
پیدائش 1485
تورگورریس، سلطنت عثمانیہ
وفات جون 23، 1565(1565-60-23) (عمر  79–80 سال)
مالٹا
وابستگی Flag of the Ottoman Empire.svg سلطنت عثمانیہ
نوکری/شاخ  عثمانی بحریہ
سالہائے کار ت 1500–1565
عہدہ Admiral، بیگ، پاشا
سالار Commander-in-Chief of Ottoman Naval Forces in the Mediterranean (Beylerbey)
جنگیں/محارب Battle of Preveza (1538)
Invasion of Gozo
Siege of Tripoli
Battle of Ponza
Battle of Djerba (1560)
محاصرۂ مالٹا (1565)

طرغت پاشا (1485ء - 23 جون 1565) (اردو: ترگت یا درگوت) عثمانی سلطنت میں ایک لیفٹیننٹ تھا جس کو عثمانی بحریہ میں لانے کا سہرا خیر الدین بارباروسا کے سر ہے۔ عثمانی امیر البحر کپتان پاشا (یا قپودان پاشا) کہلاتا تھا۔ سلطنت کے معروف امیر البحروں میں خیر الدین باربروسا، پیری رئیس، حسن پاشا، پیالے پاشا، سیدی علی اور طرغت پاشا عثمانی تاریخ کے ساتھ یورپ کی بحری تاریخ میں بھی ہمیشہ یاد رکھے جائیں گے۔ طرغت پاشا نے سلطنت عثمانیہ کے لیے بحری فتوحات کے علاوہ ذاتی حیثیت سے کئی کارنامے انجام دئے۔ طرغت پاشا نہ صرف خیر الدین بارباروسا کا سب سے قابل اعتماد لیفٹیننٹ بلکہ قریبی ساتھی تھا، طرغت 1540ء میں گرفتار ہونے کے بعد جینووا میں قید تھا اور ایک جہاز پر غلام کے طور پر کام کر رہا تھا، طرغت کی رہائی کے لیے خیر الدین بارباروسا نے 1544ء میں اطالوی شہر جینووا پر حملے کرنے کی دھمکی دی لیکن تین ہزار دوکات کے عوض اپنے لیفٹیننٹ اور دوست طرغت رئیس کو رہا کرنے پر حملہ سے باز رہا اور چارلس پنجم اور سلیمان اعظم کے درمیان معاہدے کے بعد استنبول پہنچ گیا۔[1]

وفات:[ترمیم]

1573میں ترکی بیڑے نے مالٹا پر حملہ کیا، امیرالبحر طرغت پاشا طرابلس سے اپنا بحری بیڑا لے کر عثمانی بیڑے کی مدد کو پہنچے اور اسی جنگ میں23جون1565کو ایک گولہ لگنے سے شہید ہوئے۔

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. سلطنت عثمانیہ کی تاریخ تحریر کردہ احمد سجاد ہاشمی