محمد صادق (گلوکار)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
محمد صادق (گلوکار)
Muhammad Sadiq (singer).jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 17 دسمبر 1957 (65 سال)[2]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg ہندوستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ اداکار،  سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان ہندی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

محمد صادق (انگریزی: Muhammad Sadiq) ایک ممتاز پنجابی گلوکار، اداکار اور سیاست دان ہیں۔ وہ اور رنجیت کور اپنے ڈبلز کے لیے مشہور ہیں۔ انہوں نے پنجاب اسمبلی کے 2012ء کے انتخابات میں بھدور کے حلقہ سے الیکشن لڑ کر اور جیت کر ایک سرگرم سیاست دان کے طور پر بھی اپنا نام روشن کیا ہے۔ محمد صادق کو جوڑیوں کا بادشاہ کہا جاتا ہے لیکن انہوں نے کئی سولو گانے بھی ریکارڈ کرائے ہیں۔ دیدار سندھو کے لکھے ہوئے، میری ایسی جھانجر چھانکے، چھنکاٹا پنڈا گلی گلی، صادق کے سب سے پسندیدہ گانوں میں سے ایک ہے۔ اس نے زیادہ تر بابو سنگھ مان مارہن والے کے گانے گائے ہیں۔ دیگر گیت نگاروں میں گرمیل سنگھ ڈھلوں (بھکھیانوالی)، گامی سنگت پورہ، بھٹی بھڑی والا وغیرہ شامل ہیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

صادق 1939ء میں ایک پنجابی مسلمان خاندان میں پیدا ہوئے، ان کے والد ولایت علی اور والدہ پارسنی تھی۔ وہ برطانوی صوبہ پنجاب کے گاؤں کپ کلاں (موجودہ ضلع سنگرور (ضلع لدھیانہ) میں پیدا ہوئے۔ [3] ان کے مطابق ان کا تعلق ڈوم ذات (میراثی) ذیلی ذات سے ہے۔ ان کے چچا ایک لوک گلوکار تھے جنہوں نے انہیں بہت متاثر کیا۔

سیاست[ترمیم]

وہ 2012ء میں بھدور کے حلقے سے پنجاب اسمبلی کے لیے منتخب ہوئے اور ایم ایل اے بنے۔ لیکن انہیں سیاست پسند نہیں تھی۔ [4] پنجاب ودھان سبھا میں جدید پنجابی شاعری کے مشہور گلوکار محمد صادق کی ایک بہت ہی خوبصورت اور بامعنی کمپوزیشن پیش کرنے پر پنجاب اسمبلی میں غیر ضروری تنازع کھڑا ہوگیا۔ محمد صادق کی مقننہ کو منسوخ کر دیا۔ 2012ء کے اسمبلی انتخابات میں محمد صادق نے کانگریس کے ٹکٹ پر الیکشن لڑا تھا۔ شرومنی اکالی دل کے ہارے ہوئے امیدوار دربارا سنگھ گرو نے ہائی کورٹ میں عرضی داخل کرتے ہوئے الزام لگایا تھا کہ صادق نے ریزرویشن کا جھوٹا سرٹیفکیٹ دکھا کر الیکشن لڑا تھا۔ پٹیشن کے مطابق بھدور سیٹ پسماندہ طبقے کے لیے مخصوص تھی لیکن صادق درحقیقت ریزرو کیٹیگری میں نہیں آتے تھے۔ [5]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Members : Lok Sabha — اخذ شدہ بتاریخ: 13 ستمبر 2021
  2. http://loksabhaph.nic.in/Members/MemberBioprofile.aspx?mpsno=5168
  3. "ਆਰਸੀ ਰਿਸ਼ਮਾਂ: ਸੁਰਿੰਦਰ ਰਾਮਪੁਰੀ -ਲੇਖ". aarsivartak.blogspot.in. 29 جنوری 2009. اخذ شدہ بتاریخ 2 مارچ 2012. 
  4. "ਗਾਇਕੀ ਛੱਡ ਸਿਆਸਤ ਰਾਸ ਨਾ ਆਈ ਮੁਹੰਮਦ ਸਦੀਕ ਨੂੰ…!!!". ਹਿੱਮਤਪੁਰਾ. 
  5. "ਮੁਹੰਮਦ ਸਦੀਕ ਦੀ ਵਿਧਾਇਕੀ ਸੁਪਰੀਮ ਕੋਰਟ ਨੇ ਰੱਖੀ ਕਾਇਮ". ਸਿੱਖ ਸੰਘਰਸ਼. [مردہ ربط]سانچہ:ਮੁਰਦਾ ਕੜੀ