مظہر شاہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

مظہر شاہ (انگریزی: Mazhar Shah) کا اصلی نام سید منور علی شاہ تھا اور وہ ایک ریٹائرڈ پولیس کانسٹیبل تھے. وہ 31 جنوری، 1923 کو لاہور میں پیدا ہوئے اور 11 اکتوبر، 1989 کو وفات کی. انہوں نے پنجابی فلموں میں ھلنایک کے طور پر ایک نیا انداز متعارف کرایا. ان کے بارک (جھگڑا) ان کے تجارتی نشان تھا، جو 1960ء میں بہت مقبول تھا. مظہر شاہ کی پہلی 1958 میں ایک اردو فلم بے گناہ میں تھا، لیکن 1960 میں مشہور پنجابی فلم بہراوپیا سے کامیابی حاصل ہوئی. رانی خان ایک ہی مشہور فلم تھی جو سال میں ھلنایک تھا اور اس کی جوڑی کے ساتھ ساتھ اس فلم میں افسانوی فلم ہیرو اکمل خان کی جوڑی قائم کی گئی تھی. انہیں بہت سے فلموں میں مفت بر، چوڑیاں، چاچا خامخواہ، وارث شاہ، پانی، بھریاٸی، ہتھ جوڑی، ڈولی، پنجاب دا شیر، سوکن، من موجی، پپلپلی صاحب، ملنگی، بانکی نار، جگری یار، یاراں نال بہاریاں، چاچا جی، مقابلہ، اکبرا اور شیر جوان کے طور پر دیکھا گیا تھا. 1963 میں حبیب کے ساتھ موج میلہ اپنی بڑی فلم میں فنکار کے طور پر تھا. وہ 1965 میں سدھیر اور حبیب کے ساتھ پاکستان کے پہلے پلاٹینم جیللی فلم میں اہم ویلن تھے. اعجاز درانی کے ساتھ دل دا جانی کے ساتھ حبیب اور مرزا جٹ کے ساتھ مظہر شاہ کی طرف سے ایک اور بڑی فلمیں تھیں. انہوں نے فلمی فلموں جیسے ملنگی، بابل دا ویڑا، دلاں دے سودے اور شرابی میں عنوان کردار ادا کیے ہیں، سر دا ساہیں، مہرم دل دا اور بابل دیاں گوڈیاں. ان کی بنیادی اردو فلمز مظلوم، غدار اور فرنگی تھی.

مظہر شاہ نے باراک (جھگڑا) کے طور پر فلم ڈائیلاگ کی ایک نئی طرز متعارف کرایا جس میں بہت سے پاکستانیوں کا قومی رویہ بھی ہے.

اوے، میں تبر کھ جاواں تہ ڈکار نا مارا

اوے تیری لاش نو وی مچھیا ای خان گیا

اوے جنے ساڈے نال متھا لیایا اے، اوندی ماں نے وی وین ای پائے نے

بیرونی روابط[ترمیم]