میڈم آزوری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search


میڈم آزوری
معلومات شخصیت
پیدائشی نام (انگریزی میں: Anna Marie Gueizelor ویکی ڈیٹا پر (P1477) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیدائش 20 نومبر 1907  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بنگلور  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 22 فروری 1998 (91 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اسلام آباد  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ اداکارہ اور ادکارہ،  رقاصہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

میڈم ایجوری (انگریزی: Madame Azurie؛ ولادت: 20 نومبر 1907ء - وفات: 22 فروری 1998ء) برصغیر پاک جرمن اور ہندوستانی نسل میں کلاسیکی ڈانسر تھیں[1] جو تقسیم کے بعد پاکستان چلی گئیں۔[2] انہوں نے متعدد ہندوستانی ، پاکستانی اور بنگالی فلموں میں اداکاری کی اور فلم انڈسٹری کی پہلی آئٹم سونگ ڈانسر سمجھی جاتی ہیں۔[3] میڈم ایجوری کا اصل نام انا میری گویزیور (Anna Marie Gueizelor) تھا لیکن میڈم ایجوری کے نام سے پہچان ہوئی۔[2]

ذاتی زندگی[ترمیم]

آزوری 1907ء میں بنگلور میں انا میری گویزیور کے طور پر پیدا ہوئے تھے۔ اس کی والدہ ایک ہندوستانی نرس تھیں اور اس کے والد یہودی جرمن ڈاکٹر تھے۔ جب آزوری کے والدین الگ ہو گئے تو آزوری اپنے والد کے ساتھ چلی گئیں۔ اس کے والد نے انہیں حوصلہ افزائی کی کہ وہ بیلے کا مطالعہ کریں لیکن مشرقی رقص نہیں اور اس نے اپنی بیٹی کو روسی تارکین وطن کے ایک گروپ کے ساتھ بیلے اور پیانو پڑھنے دیا۔ ایجووری اور اس کا کنبہ بچپن میں ہی بمبئی چلا گیا تھا۔ اس کے والد تھری آرٹس دائرے کا حصہ بن گئے جس کی وجہ سے آزوری کو اپنے منتظم بیگم عطیہ رحمان کے ساتھ بات چیت کرنے کی اجازت ملی۔ اتیا کے ساتھ، آزوری نے مشرقی فنون اور رقص کی تعلیم حاصل کی۔ جب اس کے والد کی وفات ہوئی تو آزوریہ اتیا کے ساتھ چلی گئی۔ اگوری 1998ء میں آزوری کا انتقال ہو گیا۔ [2][4]

پیشہ وارانہ زندگی[ترمیم]

آزوری نے برصغیر کے مختلف رقص کی کھوج کی اور مختلف آقاؤں کے تحت تعلیم حاصل کی۔ وہ جلد ہی بمبئی فلم انڈسٹری کا حصہ بن گئیں۔ ان کی پہلی فلم نادرا تھی۔ اس کے بعد ، انہوں نے پردیسی سائان ، قتال عام ، دی بمبئی ٹاکیز اور نیا دنیا جیسے کئی فلموں میں کام کیا۔ آزوری نے 700 سے زیادہ فلموں میں اداکاری کی تھی اور وہ اپنے رقص کے سبب مشہور تھی۔ فلمیں آزوری کے ناچ کے لیے فروخت ہوئیں اور وہ ایک مشہور آئٹم نمبر ڈانسر بن گئیں۔ انہیں رقص کی پرفارمنس کے لیے بکنگھم پیلس میں بھی مدعو کیا گیا تھا۔ آذوری نے مایا ، سونار سنسار اور لگنا بندھن جیسی بنگالی فلموں میں بھی کام کیا۔[5][6][7]

اس دوران اس نے ایک مسلمان شخص سے شادی کی اور آزادی کے بعد پاکستان کے شہر راولپنڈی میں سکونت اختیار کی۔ وہاں اس نے کلاسیکل ڈانس کی اکیڈمی کھولی جہاں آزوری نے کئی سالوں تک درس دیا۔ آزوری نے چند پاکستانی فلموں میں بھی اداکاری کی لیکن جلد ہی اس سے ریٹائر ہوگئیں۔ انہوں نے فنکاروں کے ایک گروپ کے ساتھ سفر کیا اور مختلف مقامات پر پرفارم کیا۔[8][9][10]

اسلام آباد میں ، آزوری نیشنل کونسل آف آرٹس کے بورڈ کے ارکان تھے۔ وہ کراچی میں پاک امریکن کلچرل سنٹر کی بانی رکن تھیں ، جہاں انہوں نے کئی برسوں سے کلاسیکل ڈانس پڑھایا۔[11]

فلمی گرافی[ترمیم]

  • پردیسی سائیان۔1935ء
  • قتالِ عام[12] 1935ء
  • بمبئی ٹاکیز
  • نیا دنیا۔ 1941ء
  • جھنکار۔ 1942ء
  • کالجوگ۔ 1942ء
  • نائی دنیا-1944ء [13]
  • شاہجہاں۔ 1946ء
  • پروانہ- 1947ء
  • مایا[13]
  • سونار سنسار[13][14]
  • لگنا بندھن[13]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Homegrown. "How A Half-German Woman Became India's First Item Girl". homegrown.co.in (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  2. ^ ا ب پ "Azurie – Cineplot.com" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  3. "Anna Maria Gueizelor : définition de Anna Maria Gueizelor et synonymes de Anna Maria Gueizelor (italien)". dictionnaire.sensagent.leparisien.fr. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  4. thebusiness.pk. "Madam Azurie" (PDF). 
  5. "Azurie". Cinemaazi (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  6. Kahlon، Sukhpreet. "Brilliant, dazzling Azurie, Indian cinema's first dancing star". Cinestaan. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  7. "Travelplannings, Pakistan". www.travelplannings.it. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  8. "Cinema Citizens". INDIAN MEMORY PROJECT (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  9. Iyer، Usha. "The audacious and amazing Azurie, 'a League of Nations in whom every dance of the world is found'". Scroll.in (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  10. "Did 'U' Know - Additions in April 2020". narthaki.com. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  11. Asmi، Saleem؛ Shāhid، Es Em؛ Rehman، I. A. (2012). Saleem Asmi: interviews, articles, reviews. Karachi: S.M. Shahid. ISBN 978-969-8625-19-1. 
  12. "Suresh Complete Movies List from 2009 to 1935". www.bollywoodmdb.com. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  13. ^ ا ب پ ت "List of Bollywood films of 1936 - Wikiwand". www.wikiwand.com. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  14. "With 'Veere', the Women of Mumbai Cinema Are Taking Back Their Power". The Wire. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020.