مندرجات کا رخ کریں

ورشا ادلجا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
ورشا ادلجا
 

معلومات شخصیت
پیدائش 10 اپریل 1940ء (84 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ممبئی   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت بھارت
برطانوی ہند
ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی قومی ڈراما اسکول
ممبئی یونیورسٹی   ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مصنفہ ،  ناول نگار ،  افسانہ نگار ،  معلمہ   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان گجراتی   ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ورشا مہندرا ادلجا ایک ہندوستانی گجراتی زبان کی نسائی ناول نگار، ڈراما نگار اور مذاکرات کار ہیں جنھوں نے اپنے ناول انصار کے لیے گجراتی زبان کے لیے 1995ء کا ساہتیہ اکادمی ایوارڈ جیتا تھا۔ وہ ایک ڈراما نگار بھی ہیں، اسٹیج ڈراموں، اسکرین پلے اور ریڈیو کے لیے لکھتی ہیں۔

ابتدائی زندگی

[ترمیم]

وہ 10 اپریل 1940ء کو بمبئی (اب ممبئی ) میں گنونترائے آچاریہ، گجراتی ناول نگار اور نیلابین کے ہاں پیدا ہوئیں۔ اس کے خاندان کا تعلق جام نگر سے تھا۔ اس نے 1960ء میں ممبئی یونیورسٹی سے گجراتی اور سنسکرت میں بی اے مکمل کیا [1] بعد ازاں اس نے 1962ء میں سوشیالوجی میں ایم اے مکمل کیا [2][1] اس نے اسکالرشپ کے تحت نیشنل اسکول آف ڈراما، دہلی میں ڈراما کی تعلیم حاصل کی۔ اس نے 1961ء سے 1964ء تک آکاشوانی، ممبئی کی ترجمان کے طور پر کام کیا۔ اس نے 1965ء میں مہندرا ادلجا سے شادی کی۔ انھوں نے 1966ء میں لکھنا شروع کیا۔ ان کی بہن الہ عرب مہتا بھی ایک ناول نگار ہیں۔

ادبی کیریئر

[ترمیم]

ورشا ادلجا نے 1973 – 1976ء تک خواتین کے ہفتہ وار سودھا کے ایڈیٹر کے طور پر اپنے ادبی کیریئر کا آغاز کیا اور بعد میں 1989 – 90ء کے دوران خواتین کے ایک اور میگزین گجراتی فیمینا کے ساتھ۔ وہ 1978ء سے گجراتی ساہتیہ پریشد کے ساتھ ایک ایگزیکٹو عہدہ رکھتی ہیں [2] [3][4] اس نے کوڑھیوں کی کالونیوں، جیل کی زندگی کی تلاش کی ہے اور آدیواسیوں کے درمیان کام کیا ہے۔ [5] انھوں نے 40 کتابیں لکھیں جن میں 22 ناول اور مختصر کہانیوں کی سات جلدیں شامل ہیں۔ [5][6] انصار (1992) کوڑھیوں پر ان کا سب سے مشہور ناول ہے۔ [4]

ایوارڈز

[ترمیم]

اسے اپنے ناول انصار کے لیے ساہتیہ اکادمی ایوارڈ (1995) ملا۔ [7] انھیں سوویت لینڈ نہرو ایوارڈ (1976ء)، گجراتی ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ (1977، 1979، 1980)، گجراتی ساہتیہ پریشد ایوارڈ (1972، 1975) اور کے ایم منشی ایوارڈ (1997) بھی ملا۔ اسے 2005ء میں رنجیترام سوورنا چندرک ملا۔ اسے کہانی لکھنے کے لیے نندشنکر مہتا چندرک، سروج پاٹھک انعام اور رام نارائن پاٹھک مختصر کہانی کا انعام ملا ہے۔ [2] [4]

مزید دیکھیے

[ترمیم]

بھارتی مصنفات کی فہرست

حوالہ جات

[ترمیم]
  1. ^ ا ب Daksha Vyas، Chandrakant Topiwala۔ "સાહિત્યસર્જક: વર્ષા અડાલજા" [Writer: Varsha Adalja] (بزبان گجراتی)۔ Gujarati Sahitya Parishad 
  2. ^ ا ب پ "Varsha Adalja, 1940-"۔ New Delhi: The Library of Congress Office 
  3. Kartik Chandra Dutt (1 جنوری 1999)۔ Who's who of Indian Writers, 1999: A-M۔ Sahitya Akademi۔ صفحہ: 13۔ ISBN 978-81-260-0873-5 
  4. ^ ا ب پ Prasad Brahmabhatt (2010)۔ અર્વાચીન ગુજરાતી સાહિત્યનો ઈતિહાસ - આધુનિક અને અનુઆધુનિક યુગ (History of Modern Gujarati Literature – Modern and Postmodern Era) (بزبان گجراتی)۔ Ahmedabad: Parshwa Publication۔ صفحہ: 258–260۔ ISBN 978-93-5108-247-7 
  5. ^ ا ب "Varsha Adalja visits Tameside"۔ Tameside: Tameside Metropolitan Borough Council۔ 15 اپریل 2009۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 نومبر 2011 
  6. Susie J. Tharu، Ke Lalita (1993)۔ Women Writing in India: The twentieth century۔ Feminist Press at CUNY۔ صفحہ: 465–466۔ ISBN 978-1-55861-029-3 
  7. "Sanskrit Sahitya Akademi Awards 1955–2007"۔ Sahitya Akademi Official website۔ 31 مارچ 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2009