کیکڑا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اضغط هنا للاطلاع على كيفية قراءة التصنيف
Crab
دور: Jurassic–Recent
Liocarcinus vernalis

اسمیاتی درجہ ذیلی طبقہ[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں صنف بندی درجہ (P105) ویکی ڈیٹا پر
جماعت بندی
مملکت: جانور
جماعت: Malacostraca
طبقہ: دسپا
ذیلی طبقہ: Pleocyemata
الرتبة الفرعية: Brachyura
لنی اس, 1758
سائنسی نام
Brachyura[1][2]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں صنف بندی نام (P225) ویکی ڈیٹا پر
لنی اس  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں صنف بندی نام (P225) ویکی ڈیٹا پر
Sections and subsections[3]


کیکڑا، السَرَطَانْ (عربی) مشہور جانور ہے۔ اس کا دوسرا نام عقرب الماء (پانی کا بچھو) ہے اس کی کنیت ابو بحر ہے، اس جانور کی پیدائش اگرچہ پانی میں ہوتی ہے لیکن اس کے اندر صلاحیت ہوتی ہے کہ وہ خشکی میں بھی زندگی گزار سکتا ہے۔ یہ نہایت زود رواں ہوتا ہے تیز دوڑتا ہے۔ اس کے دو تالو ہوتے ہیں پنجے اور ناخن بہت تیز ہوتے ہیں، دانت بہت ہوتے ہیں، اس کی کمر سخت ہوتی ہے۔ اگر کوئی انجان شخص اس کو دیکھے تو یہ خیال کریگا کہ اس جانور کے نہ سر ہے اور نہ دم۔ اس کی آنکھیں اس کے شانوں میں اور اس کا منہ اس کے سینہ میں ہوتا ہے۔ اس کے تالو دونوں طرف سے چرے ہوئے ہوتے ہیں اور آٹھ پیر ہوتے ہیں۔ یہ ایک جانب سے پانی کو چیرتا ہوا چلتاہے۔ کیکڑا سال میں کئی مرتبہ اپنی کھال بدلتا ہے اور اپنے رہنے کے مقام میں دور دراز رکھتا ہے، ایک دروازہ پانی کی طرف اور ایک دروازہ خشکی کی طرف، جب یہ اپنی کھال بدلنے کے لیے اتارتا ہے تو پانی کی طرف والا دروازہ بند کرلیتا ہے تاکہ پانی کے جانوروں کے شر سے محفوظ رہے اور خشکی کی طرف کا راستہ کھلا رکھتا ہے تاکہ ہوا پہنچتی رہے اور اس کے بدن کی رطوبت خشک ہوکر اس میں سختی آجائے، جب اس کے بدن میں خشکی آجاتی ہے تو غذا حاصل کے لیے پانی کی طرف کا دروازہ پھر کھول دیتا ہے۔ حکیم ارسطا طالیس نے اپنی کتاب "النعوت" میں لکھا ہے کہ لوگوں کا گمان ہے کہ اگر کسی گڑھے میں مردہ کیکڑا چت پڑا ہواملے تو جس شہر یا جس زمین میں وہ اس حالت میں ہے تو وہاں کے لوگ آفات سماویہ سے محفوظ رہیں گے۔ اگر کیکڑے کو پھل دار درخت پر لٹکا دیاجائے تو ان پر پھل بکثرت آویں گے۔ دیکھتے وقت دیکھنے والوں کو پورا نظر آتا ہے اور جب چلتا ہے تو معلوم ہوتا ہے کہ نصف ہے۔ کہتے ہیں کہ بحر چین میں کیکڑوں کی بہت کثرت ہے جب وہ دریا سے نکل کر خشکی پر آتے ہیں تو پتھروں میں گھس جاتے ہیں۔ حکیم حضرات ان کو پکڑ کر سرمہ بناتے ہیں جو بینائی کو تقویت دینے میں مفید ہے۔ کیکڑا نر مادہ کی جفتی سے پیدا نہیں ہوتا بلکہ سیپ سے نکلتا ہے

کیکڑے کے طبی فوائد: 

کیکڑے کے کھانے سے کمر کے درد میں نفع ہوتا ہے اور کمر مضبوط ہوتی ہے۔ اگر کوئی شخص کیکڑے کا سر اپنے بدن پر لٹکائے تو اگر رات گرم ہوئی تو اس کو نیند نہیں آوے گی اور اگر گرم نہ ہوئی تو نیند آجاوے گی۔ اگر کیکڑے کو جلاکر اس کی راکھ بواسیر پر مل دی جائے تو بواسیر جاتی رہی گی خواہ وہ کیسی ہو۔ کیکڑے کا گوشت سل کے مریضوں کو بہت نفع دیتا ہے، اگر کیکڑے کو تیر کے زخم پر رکھ دیا جائے تو تیر کی نوک وغیرہ کو زخم سے نکال دیتا ہے، سانپ اور بچھو کے کاٹے پر اگر اس کو رکھ دیا جائے تو بھی بہت نفع ہوتا ہے، اگر اس کی ٹانگ کسی درخت پر لٹکا دی جائے تو اس درخت کے پھل بغیر کسی علت کے جھڑ جائیں گے۔ کیکڑا کھانے کا شرعی حکم: کیکڑے کا کھانا درست نہیں ہے کیوں کہ یہ نجس ہوتا ہے اور فقہاء رحمہم اللہ نے اس کو مضر قرار دیا ہے بقول رافعی کیکڑے کا کھانا اس وجہ سے درست نہیں کہ اس کے کھانے سے نقصان ہوتا ہے، امام مالک رح کے مسلک میں اس کا کھانا حلال ہے۔

کیکڑا خواب میں دیکھنے کی تعبیر: 

: کیکڑا خواب میں دیکھنا ایک نہایت باہمت مکار اور فریبی شخص کی دلیل ہے۔ اس کا گوشت کھاتے دیکھنا اس بات کی علامت ہے کہ دیکھنے والے کو کسی دور دراز ملک سے مال حاصل ہوگا،اور کیکڑے کو خواب میں دیکھنا مال حرام کی علامت بھی ہے۔[4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ عنوان : Integrated Taxonomic Information System — شائع شدہ از: 2004
  2.   خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں دائرۃ المعارف حیات آئی ڈی (P830) ویکی ڈیٹا پر"معرف Brachyura دائراۃ المعارف لائف سے ماخوذ"۔ eol.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 9 اپریل 2019۔
  3. Sammy De Grave; N. Dean Pentcheff; Shane T. Ahyong (2009). "A classification of living and fossil genera of decapod crustaceans" (پی ڈی ایف). Raffles Bulletin of Zoology Suppl. 21: 1–109. http://rmbr.nus.edu.sg/rbz/biblio/s21/s21rbz1-109.pdf. 
  4. حیاةالحیوان اردو جلد دوم ص 458-459