مندرجات کا رخ کریں

2006-07ء میں بین الاقوامی کرکٹ مقابلے

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے

بین الاقوامی کرکٹ کو 2006-07ء کرکٹ سیزن میں بڑے شماریات دانوں جیسے کرکٹ آرکائیو اور وزڈن کے ذریعہ بیان کیا گیا ہے کیونکہ وہ میچ ستمبر 2006ء اور اپریل 2007ء کے درمیان شروع ہونے والے دوروں پر کھیلے گئے تھے۔ اس سیزن کے لیے 2بڑے آئی سی سی ٹورنامنٹ شیڈول ہیں جن میں چیمپئنز ٹرافی اکتوبر میں بھارت میں کھیلی گئی اور ورلڈ کپ مارچ میں ویسٹ انڈیز میں منعقد ہوا۔ اس کے علاوہ انگلینڈ نومبر میں آسٹریلیا جانے پر ایشز کا دفاع کرے گا اور تمام دس ٹیسٹ ممالک نومبر اور دسمبر کے دوران ایکشن میں ہوں گےحالانکہ زمبابوے جو اس دوران بنگلہ دیش سے کھیل رہے ہیں، 2006ء کے دوران ٹیسٹ میچوں سے دستبردار ہوگئے تھے اور اس طرح صرف ایک روزہ بین الاقوامی میچ کھیلے جائیں گے۔

سیزن کا جائزہ[ترمیم]

بین الاقوامی دورے
شروع کی تاریخ میزبان ٹیم مخالف ٹیم نتائج [میچز]
ٹیسٹ ایک روزہ ٹوئنٹی20
15 ستمبر 2006  جنوبی افریقا  زمبابوے 3–0 [3]
11 نومبر 2006  پاکستان  ویسٹ انڈیز 2–0 [3] 3–1 [5]
19 نومبر 2006  جنوبی افریقا  بھارت 2–1 [3] 4–0 [5] 0–1 [1]
23 نومبر 2006  آسٹریلیا  انگلستان 5–0 [5] 1–0 [1]
28 نومبر 2006  بنگلادیش  زمبابوے 5–0 [5] 1–0 [1]
7 دسمبر 2006  نیوزی لینڈ  سری لنکا 1–1 [2] 2–2 [5] 1–1 [2]
15 دسمبر 2006  بنگلادیش  اسکاٹ لینڈ 2–0 [2]
11 جنوری 2007  جنوبی افریقا  پاکستان 2–1 [3] 3–1 [5] 1–0 [1]
21 جنوری 2007  بھارت  ویسٹ انڈیز 3–1 [4]
4 فروری 2007  زمبابوے  بنگلادیش 1–3 [4]
8 فروری 2007  بھارت  سری لنکا 2–1 [4]
16 فروری 2007  نیوزی لینڈ  آسٹریلیا 3–0 [3]
بین الاقوامی دورے
تاریخ ٹورنامنٹ فاتح
12 ستمبر 2006 ملائیشیا کا پرچم ڈی ایل ایف کپ 2006-07ء  آسٹریلیا
7 اکتوبر 2006 بھارت کا پرچم آئی سی سی چیمپئنز ٹرافی 2006ء  آسٹریلیا
12 جنوری 2007 آسٹریلیا کا پرچم کامن ویلتھ بینک سیریز 2006-07ء  انگلستان
13 مارچ 2007 ویسٹ انڈیز کرکٹ بورڈ کا پرچم کرکٹ عالمی کپ 2007ء  آسٹریلیا
چھوٹے ٹورنامنٹس
شروع کی تاریخ میزبان ٹیم مہمان ٹیم نتائج [میچز]
فرسٹ کلاس لسٹ اے
11 نومبر 2006  کینیا  برمودا 3–0 [3]
چھوٹے ٹورنامنٹس
تاریخ ٹورنامنٹ فاتح
26 نومبر 2006 جنوبی افریقا کا پرچم جنوبی افریقہ میں ایسوسی ایٹس سہ ملکی سیریز 2006–07ء  نیدرلینڈز
17 جنوری 2007 کینیا کا پرچم کینیا میں ایسوسی ایٹس سہ ملکی سیریز 2006–07ء  کینیا
29 جنوری 2007 کینیا کا پرچم آئی سی سی ورلڈ کرکٹ لیگ 2007ء ڈویژن ون  کینیا
25 فروری 2007 ویسٹ انڈیز کرکٹ بورڈ کا پرچم ویسٹ انڈیز میں ایسوسی ایٹس سہ ملکی سیریز 2006–07ء  بنگلادیش

پری سیزن کی درجہ بندی[ترمیم]

بین الاقوامی ٹیسٹ کرکٹ چیمپین شپ 21 اگست 2006ء
پوزیشن ملک میچز پوائنٹس درجہ بندی
1  آسٹریلیا 33 4793 130
2  انگلستان 41 4864 119
3  پاکستان 30 3363 112
4  بھارت 34 3780 111
5  سری لنکا 33 3410 103
6  جنوبی افریقا 34 3182 94
7  نیوزی لینڈ 25 2293 92
8  ویسٹ انڈیز 29 2080 72
9  زمبابوے 15 415 28
10  بنگلادیش 22 48 2
آئی سی سی مردانہ ایک روزہ درجہ بندی 10 ستمبر 2006ء
پوزیشن ملک پوائنٹس
1  آسٹریلیا 131
2  جنوبی افریقا 123
3  بھارت 113
4  پاکستان 111
5  نیوزی لینڈ 111
6  سری لنکا 107
7  ویسٹ انڈیز 99
8  انگلستان 99
9  زمبابوے 35
10  بنگلادیش 33
11  کینیا 0

ستمبر[ترمیم]

ڈی ایل ایف کپ[ترمیم]

بورڈ آف کنٹرول فار کرکٹ ان انڈیا نے اعلان کیا ہے کہ بھارت، آسٹریلیا اور ویسٹ انڈیز کوالالمپور کی کنارا اکیڈمی اوول میں منعقد ہونے والی سہ ملکی سیریز میں حصہ لیں گے۔ ویسٹ انڈیز کرکٹ بورڈ اس سیریز کے بارے میں ویسٹ انڈیز پلیئرز ایسوسی ایشن کے ساتھ ادائیگی کے تنازع میں تھا کیونکہ ڈبلیو آئی پی اے کا دعویٰ ہے کہ ڈبلیو آئی سی بی کے میچوں پر رضامندی سے قبل اسے مطلع نہیں کیا گیا تھا,[1] لیکن بالآخر اگست کے اوائل میں ایک معاہدہ طے پا گیا۔[2] اس ٹورنامنٹ کو ڈی ایل ایف کپ کے نام سے جانا جاتا تھا، دوسرا ون ڈے ٹورنامنٹ جو اس نام سے جانا جاتا ہے، اپریل میں متحدہ عرب امارات میں بھارت بمقابلہ پاکستان سیریز کے بعد۔

ٹیم کھیلے جیتے ہارے بے نتیجہ پوائنٹس نیٹ رن ریٹ
 آسٹریلیا 4 2 1 1 11 +0.55
 ویسٹ انڈیز 4 2 2 0 9 −0.31
 بھارت 4 1 2 1 6 −0.26
نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
گروپ اسٹیج
ایک روزہ بین الاقوامی#2413 12 ستمبر  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  ویسٹ انڈیز برائن لارا کنرارا اکیڈمی اوول, کوالا لمپور  آسٹریلیا 78 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2414 14 ستمبر  بھارت راہول ڈریوڈ  ویسٹ انڈیز برائن لارا کنرارا اکیڈمی اوول, کوالا لمپور  ویسٹ انڈیز 78 رنز سے (ڈی ایل ایس)
ایک روزہ بین الاقوامی#2416 16 ستمبر  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  بھارت راہول ڈریوڈ کنرارا اکیڈمی اوول, کوالا لمپور بے نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2417 18 ستمبر  آسٹریلیا مائیکل ہسی  ویسٹ انڈیز برائن لارا کنرارا اکیڈمی اوول, کوالا لمپور  ویسٹ انڈیز 3 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2419 20 ستمبر  بھارت راہول ڈریوڈ  ویسٹ انڈیز برائن لارا کنرارا اکیڈمی اوول, کوالا لمپور  بھارت 16 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2421 22 ستمبر  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  بھارت راہول ڈریوڈ کنرارا اکیڈمی اوول, کوالا لمپور  آسٹریلیا 18 رنز سے
فائنل
ایک روزہ بین الاقوامی#2422 24 ستمبر  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  ویسٹ انڈیز برائن لارا کنرارا اکیڈمی اوول, کوالا لمپور  آسٹریلیا 127 رنز سے

زمبابوے کا دورہ جنوبی افریقہ[ترمیم]

زمبابوے نے چیمپئنز ٹرافی کے وارم اپ کے طور پر جنوبی افریقہ کا ایک ہفتے کا دورہ کیا۔[3] وہ دورے پر چاروں میچ ہارے، جنوبی افریقہ سے تین ون ڈے اور ڈومیسٹک سائیڈ ایگلز کے ساتھ ایک ٹوئنٹی20 میچ۔

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی سیریز
ایک روزہ بین الاقوامی#2415 15 ستمبر پراسپراتسیا جیک کیلس گڈ ایئر پارک, بلومفونٹین  جنوبی افریقا 5 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2418 17 ستمبر پراسپراتسیا جیک کیلس بفیلو پارک, ایسٹ لندن  جنوبی افریقا 6 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2420 20 ستمبر پراسپراتسیا جیک کیلس سیڈگارس پارک, پاٹشیفٹسروم  جنوبی افریقا 171 رنز سے

اکتوبر[ترمیم]

چیمپئنز ٹرافی[ترمیم]

2006 کی آئی سی سی چیمپئنز ٹرافی 7 اکتوبر سے 5 نومبر 2006 تک بھارت میں منعقد ہوئی۔ 2005 کے وسط تک ٹورنامنٹ کے مقام کی تصدیق نہیں کی گئی تھی جب ہندوستانی حکومت نے اس بات پر اتفاق کیا تھا کہ ٹورنامنٹ کی آمدنی ٹیکس سے پاک ہوگی (2002 کا ٹورنامنٹ ہندوستان میں ہونا تھا، لیکن اسے سری لنکا میں تبدیل کردیا گیا جب ہندوستان میں ٹیکس سے چھوٹ دی گئی۔ نہیں دی گئی)۔ [4]آسٹریلیا نے ٹورنامنٹ جیتا، اس کی پہلی چیمپئنز ٹرافی جیت۔ وہ واحد ٹیم تھی جسے ٹورنامنٹ میں صرف ایک ہی شکست ہوئی کیونکہ باقی تمام ٹیمیں کم از کم دو میچ ہار گئیں۔ ویسٹ انڈیز، ان کے آخری حریف، نے گروپ مرحلے میں آسٹریلیا کو شکست دی لیکن فائنل میں 138 رنز پر آؤٹ ہو گئی اور ڈک ورتھ لوئس طریقہ پر آٹھ وکٹوں سے ہار گئی۔ ویسٹ انڈیز کے اوپننگ بلے باز کرس گیل کو پلیئر آف دی ٹورنامنٹ قرار دیا گیا۔

ابتدائی دور[ترمیم]

نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
ابتدائی دور
ایک روزہ بین الاقوامی#2423 7 اکتوبر  سری لنکا مہیلا جے وردھنے  بنگلادیش حبیب البشر پنجاب سی اے اسٹیڈیم, موہالی  سری لنکا 37 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2424 8 اکتوبر  ویسٹ انڈیز برائن لارا  زمبابوے پراسپراتسیا سردار پٹیل اسٹیڈیم, احمد آباد  ویسٹ انڈیز 9 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2425 10 اکتوبر  سری لنکا مہیلا جے وردھنے  زمبابوے پراسپراتسیا سردار پٹیل اسٹیڈیم, احمد آباد  سری لنکا 144 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2426 11 اکتوبر  ویسٹ انڈیز برائن لارا  بنگلادیش حبیب البشر سوائی مان سنگھ اسٹیڈیم, جے پور  ویسٹ انڈیز 10 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2427 13 اکتوبر  بنگلادیش حبیب البشر  زمبابوے پراسپراتسیا سوائی مان سنگھ اسٹیڈیم, جے پور  بنگلادیش 101 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2428 14 اکتوبر  سری لنکا مہیلا جے وردھنے  ویسٹ انڈیز برائن لارا بریبورن اسٹیڈیم, ممبئی  سری لنکا 9 وکٹوں سے

گروپ اسٹیج[ترمیم]

نمبر گروپ تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
گروپ اسٹیج
ایک روزہ بین الاقوامی#2429 اے 15 اکتوبر  بھارت راہول ڈریوڈ  انگلستان اینڈریو فلنٹوف سوائی مان سنگھ اسٹیڈیم, جے پور  بھارت 4 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2430 بی 16 اکتوبر  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ  جنوبی افریقا گریم اسمتھ بریبورن اسٹیڈیم, ممبئی  نیوزی لینڈ 87 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2431 بی 17 اکتوبر  پاکستان یونس خان  سری لنکا مہیلا جے وردھنے سوائی مان سنگھ اسٹیڈیم, جے پور  پاکستان 4 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2432 اے 18 اکتوبر  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  ویسٹ انڈیز برائن لارا بریبورن اسٹیڈیم, ممبئی  ویسٹ انڈیز 10 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2433 بی 20 اکتوبر  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ  سری لنکا مہیلا جے وردھنے بریبورن اسٹیڈیم, ممبئی  سری لنکا 7 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2434 اے 21 اکتوبر  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  انگلستان اینڈریو فلنٹوف سوائی مان سنگھ اسٹیڈیم, جے پور  آسٹریلیا 6 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2435 بی 24 اکتوبر  جنوبی افریقا گریم اسمتھ  سری لنکا مہیلا جے وردھنے سردار پٹیل اسٹیڈیم, احمد آباد  جنوبی افریقا 78 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2436 بی 25 اکتوبر  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ  پاکستان یونس خان پنجاب سی اے اسٹیڈیم, موہالی  نیوزی لینڈ 51 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2437 اے 26 اکتوبر  بھارت راہول ڈریوڈ  ویسٹ انڈیز برائن لارا سردار پٹیل اسٹیڈیم, احمد آباد  ویسٹ انڈیز 3 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2438 بی 27 اکتوبر  پاکستان یونس خان  جنوبی افریقا گریم اسمتھ پنجاب سی اے اسٹیڈیم, موہالی  جنوبی افریقا 124 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2439 اے 28 اکتوبر  انگلستان اینڈریو فلنٹوف  ویسٹ انڈیز برائن لارا سردار پٹیل اسٹیڈیم, احمد آباد  انگلستان 3 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2440 اے 29 اکتوبر  بھارت راہول ڈریوڈ  آسٹریلیا رکی پونٹنگ پنجاب سی اے اسٹیڈیم, موہالی  آسٹریلیا 6 وکٹوں سے

ناک آؤٹ مرحلہ[ترمیم]

نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
سیمی فائنلز
ایک روزہ بین الاقوامی#2441 1 نومبر  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ پنجاب سی اے اسٹیڈیم, موہالی  آسٹریلیا 34 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2442 2 نومبر  ویسٹ انڈیز برائن لارا  جنوبی افریقا گریم اسمتھ سوائی مان سنگھ اسٹیڈیم, جے پور  ویسٹ انڈیز 6 وکٹوں سے
فائنلز
ایک روزہ بین الاقوامی#2443 5 نومبر  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  ویسٹ انڈیز برائن لارا پنجاب سی اے اسٹیڈیم, موہالی  آسٹریلیا 8 وکٹوں سے (ڈی ایل ایس)

نیوزی لینڈ کی خواتین آسٹریلیا میں[ترمیم]

نیوزی لینڈ کی خواتین کو اکتوبر میں آسٹریلیا کا دورہ کرنا ہے۔ سیریز کا آغاز 18 اکتوبر سے ہوگا اور یہ ایک ٹوئنٹی 20 اور پانچ ایک روزہ بین الاقوامی میچوں پر مشتمل ہے۔ فروری میں بھارت کو شکست دینے کے بعد آسٹریلیا نے اپنی ٹیم میں ایک تبدیلی کی ہے، زخمی ایلکس بلیک ویل کی جگہ لیہ پولٹن کو شامل کیا گیا ہے۔[5] آسٹریلیا نے سیریز 5-0 سے جیت لی حالانکہ پہلے تین میچ آخری اوور تک آئے تھے۔

نومبر[ترمیم]

افرو–ایشیا کپ[ترمیم]

دوسرے افریقی ایشیا کپ میں افریقی کرکٹ ایسوسی ایشن الیون کا مقابلہ ایشین کرکٹ کونسل الیون سے ایک روزہ بین الاقوامی میچوں کی سیریز میں ایک دوسرے سے کھیلنا تھا لیکن اسے جون 2007ء تک ملتوی کر دیا گیا۔[6]

آئی سی سی انٹر کانٹی نینٹل کپ[ترمیم]

2006ء کا انٹرکانٹی نینٹل کپ اس سیزن میں جاری ہے، نومبر میں کینیا اور برمودا کے درمیان میچ کے ساتھ۔ تفصیلات 2006 کے سیزن کے تحت دی گئی ہیں۔

ویسٹ انڈیز کا دورہ پاکستان[ترمیم]

ویسٹ انڈیز نے پاکستان میں تین ٹیسٹ اور پانچ ایک روزہ بین الاقوامی میچ کھیلے۔ اس دورے میں ایلن اسٹینفورڈ کے زیر اہتمام ایک ٹوئنٹی 20 میچ کی تاریخ سے تصادم ہوا لیکن آخر کار وہ کھیل منسوخ ہو گیا اور یہ دورہ آگے بڑھ گیا۔[7] ٹیسٹ سیریز میں محمد یوسف نے ایک کیلنڈر سال میں سب سے زیادہ رنز بنانے کے ویو رچرڈز کے ریکارڈ کو پاس کیا، سال کا اختتام 1,788 ٹیسٹ رنز کے ساتھ کیا جن میں سے 665 اس تین میچوں کی سیریز میں آئے۔ پاکستان نے ون ڈے سیریز میں دو صفر کی برتری حاصل کی اس سے پہلے کہ کپتان انضمام الحق انجری کا شکار ہو گئے اور مارلن سیموئلز نے چوتھے میچ میں اپنی ناقابل شکست سنچری سے ویسٹ انڈیز کو آؤٹ کرنے میں مدد کی۔

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ٹیسٹ سیریز
ٹیسٹ#1815 11–15 نومبر برائن لارا انضمام الحق قذافی اسٹیڈیم، لاہور  پاکستان 9 وکٹوں سے
ٹیسٹ#1816 19–23 نومبر برائن لارا انضمام الحق ملتان کرکٹ اسٹیڈیم، ملتان میچ ڈرا
ٹیسٹ#1818 27 نومبر – 1 دسمبر برائن لارا انضمام الحق نیشنل اسٹیڈیم، کراچی  پاکستان 199 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی سیریز
ایک روزہ بین الاقوامی#2458a 5 دسمبر برائن لارا یونس خان راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم، راولپنڈی میچ ملتوی کردیا گیا
ایک روزہ بین الاقوامی#2460 7 دسمبر برائن لارا انضمام الحق اقبال اسٹیڈیم، فیصل آباد  پاکستان 2 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2463 10 دسمبر برائن لارا انضمام الحق قذافی اسٹیڈیم، لاہور  پاکستان 7 وکٹوں سے (ڈی ایل ایس)
ایک روزہ بین الاقوامی#2464 13 دسمبر برائن لارا عبد الرزاق ملتان کرکٹ اسٹیڈیم، ملتان  ویسٹ انڈیز 7 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2466 16 دسمبر برائن لارا انضمام الحق نیشنل اسٹیڈیم، کراچی  پاکستان 7 وکٹوں سے

برمودا کا دورہ کینیا[ترمیم]

[[برمودا نے 11 اور 14 نومبر کے درمیان ممباسا اسپورٹس کلب میں تین ایک روزہ بین الاقوامی میچوں کے لیے کینیا کا دورہ کیا۔[8] یہ میچ انٹر کانٹی نینٹل کپ میں ان کی میٹنگ کے بعد ہے، جو پچ کے حالات کی وجہ سے کھیل کے آخری دو دن کے منسوخ ہونے کے بعد ڈرا ہوا تھا۔ کینیا نے تینوں میچز جیت لیے۔;[9] برمودا کا سیریز کا سب سے زیادہ اسکور 50 اوورز میں 201 تھا جب کہ دوسرے میچ میں ہدف کا تعاقب کرتے ہوئے کینیا کا سب سے کم اسکور 37.5 اوورز میں 186 تھا۔ کریک انفو کے مینیجنگ ایڈیٹر مارٹن ولیمسن نے تبصرہ کیا کہ کینیا نے "برمودا کو پیچھے چھوڑ دیا، اور ... میدان میں زیادہ پیشہ ورانہ پہلو دیکھا"۔[10] کینیا کے ڈوین لیوروک، برمودا اور تھامس اوڈویو نے سیریز میں سب سے زیادہ سات وکٹیں حاصل کیں جبکہ اسٹیو ٹکولو نے آخری ون ڈے میں 111 رنز بنا کر 214 رنز بنائے۔ ٹکولو کے علاوہ صرف تنمے مشرا، کینیا اور ڈین مائنز، برمودا نے تین میچوں میں 100 سے زائد رنز بنائے۔

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی سیریز
ایک روزہ بین الاقوامی#2444 11 نومبر سٹیوٹکولو ارونگ رومین ممباسا اسپورٹس کلب, ممباسا  کینیا 79 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2445 12 نومبر سٹیوٹکولو ارونگ رومین ممباسا اسپورٹس کلب, ممباسا  کینیا 7 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2446 14 نومبر سٹیوٹکولو ارونگ رومین ممباسا اسپورٹس کلب, ممباسا  کینیا 104 رنز سے

بھارت کا دورہ جنوبی افریقہ[ترمیم]

بھارت نے اپنا پہلا ٹور میچ 16 نومبر کو جنوبی افریقہ میں کھیلا۔ یہ دورہ 6 جنوری تک جاری رہے گا، جب نیو لینڈز میں تیسرا اور آخری ٹیسٹ ختم ہونا ہے۔

ون ڈے سیریز میں، ہندوستان صرف ایک بار 50 اوورز تک بیٹنگ کرنے میں کامیاب ہوا چار مکمل کھیلوں میں، سات میں سے چھ سب سے زیادہ سکور جنوبی افریقیوں نے بنائے،[11] اور سیریز میں پانچ سب سے زیادہ بیٹنگ اوسط جنوبی افریقیوں نے درج کیں۔[12] پانچ سے زیادہ وکٹیں لینے والے چھ گیند بازوں میں سے پانچ جنوبی افریقہ کے تھے۔[12] اس طرح جنوبی افریقہ نے ون ڈے سیریز 4-0 سے جیت لی۔ بھارت نے اپنا پہلا ٹوئنٹی 20 انٹرنیشنل بھی کھیلا جس میں ایک گیند اور چھ وکٹیں باقی رہ گئیں۔

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی سیریز
ایک روزہ بین الاقوامی#2446a 19 نومبر گریم اسمتھ راہول ڈریوڈ نیو وانڈررز اسٹیڈیم, جوہانسبرگ میچ ملتوی کردیا گیا
ایک روزہ بین الاقوامی#2447 22 نومبر گریم اسمتھ راہول ڈریوڈ کنگزمیڈ, ڈربن  جنوبی افریقا 157 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2449 26 نومبر گریم اسمتھ راہول ڈریوڈ نیولینڈز, کیپ ٹاؤن  جنوبی افریقا 106 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2452 29 نومبر گریم اسمتھ وریندر سہواگ سینٹ جارج پارک, پورٹ الزبتھ  جنوبی افریقا 80 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2458 3 دسمبر گریم اسمتھ وریندر سہواگ سپر سپورٹ پارک, سینچورین  جنوبی افریقا 9 وکٹوں سے
صرف ٹوئنٹی20 بین الاقوامی
ٹوئنٹی20 بین الاقوامی#10 1 دسمبر گریم اسمتھ وریندر سہواگ نیو وانڈررز اسٹیڈیم, جوہانسبرگ  بھارت 6 وکٹوں سے
ٹیسٹ سیریز
ٹیسٹ#1823 15–19 دسمبر گریم اسمتھ راہول ڈریوڈ نیو وانڈررز اسٹیڈیم, جوہانسبرگ  بھارت 123 رنز سے
ٹیسٹ#1825 26–30 دسمبر گریم اسمتھ راہول ڈریوڈ کنگزمیڈ, ڈربن  جنوبی افریقا 174 رنز سے
ٹیسٹ#1827 2–6 جنوری گریم اسمتھ راہول ڈریوڈ نیولینڈز, کیپ ٹاؤن  جنوبی افریقا 5 وکٹوں سے

انگلینڈ کا دورہ آسٹریلیا[ترمیم]

انگلینڈ 10 نومبر کو آسٹریلیا پہنچا اور 23 نومبر کو اپنا پہلا ٹیسٹ کھیلا۔ باکسنگ ڈے ٹیسٹ سیریز کا چوتھا ٹیسٹ ہوگا جو 6 جنوری کو ختم ہوگا۔ اس دورے میں ایس سی جی میں ٹوئنٹی 20 انٹرنیشنل اور وی بی سیریز بھی شامل ہے۔ اس دورے میں انگلینڈ اور آسٹریلیا کے مقامی اسکواڈز کے درمیان کئی نمائشی میچ بھی شامل ہیں۔

آسٹریلیا نے سیریز 5-0 سے جیتی، 1920-21ء کے بعد 86 سالوں میں پہلی وائٹ واش۔ گلین میک گرا، جسٹن لینگر اور شین وارن سبھی ایس سی جی میں فائنل کھیل کے بعد ٹیسٹ کرکٹ سے ریٹائر ہو گئے۔

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ٹیسٹ سیریز
ٹیسٹ#1817 23–27 نومبر رکی پونٹنگ اینڈریو فلنٹوف گابا، برسبین  آسٹریلیا 277 رنز سے
ٹیسٹ#1819 1–5 دسمبر رکی پونٹنگ اینڈریو فلنٹوف ایڈیلیڈ اوول، ایڈیلیڈ  آسٹریلیا 6 وکٹوں سے
ٹیسٹ#1821 14–18 دسمبر رکی پونٹنگ اینڈریو فلنٹوف ڈبلیو اے سی اے گراؤنڈ، پرتھ  آسٹریلیا 206 رنز سے
ٹیسٹ#1824 26–30 دسمبر رکی پونٹنگ اینڈریو فلنٹوف ملبورن کرکٹ گراؤنڈ، ملبورن  آسٹریلیا ایک اننگز اور 99 رنز سے
ٹیسٹ#1826 2–6 جنوری رکی پونٹنگ اینڈریو فلنٹوف سڈنی کرکٹ گراؤنڈ، سڈنی  آسٹریلیا 10 وکٹوں سے
صرف ٹوئنٹی20 بین الاقوامی
T20I 13 9 جنوری رکی پونٹنگ اینڈریو فلنٹوف سڈنی کرکٹ گراؤنڈ، سڈنی  آسٹریلیا 77 رنز سے

جنوبی افریقہ میں ایسوسی ایٹس سہ ملکی سیریز[ترمیم]

برمودا، کینیڈا اور ہالینڈ نے نومبر اور دسمبر کے دوران جنوبی افریقہ میں چھ میچوں کی سہ رخی سیریز کھیلی۔[13] برمودا نے اپنی شکست کا سلسلہ جاری رکھا، چھٹے اور آخری ون ڈے میں نیدرلینڈز کو 91 رنز پر آؤٹ کرنے سے پہلے اپنے تین پہلے میچ ہارے۔ تاہم نیدرلینڈز پہلے ہی تین میچز اور ٹرائنگولر سیریز جیت چکا ہے۔ کینیڈا نے دونوں میچوں میں برمودا کو ہرا کر رنر اپ کے طور پر ختم کیا لیکن نیدرلینڈز کے خلاف فائنل گیم میں ایک وکٹ سے ہار گیا جہاں بلی سٹیلنگ اور مارک جونک مین نے آخری وکٹ کے لیے 20 گیندوں پر 27 رنز بنائے جب ڈچ نے 42 اوورز میں 205 رنز کا تعاقب کیا۔

ٹیم کھیلا جیتے ہارے NR پوائنٹس نیٹ رن ریٹ
 نیدرلینڈز 4 3 1 0 13 −0.423
 کینیڈا 4 2 2 0 9 +0.242
 برمودا 4 1 3 0 5 +0.166
نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی سیریز
ایک روزہ بین الاقوامی#2448 26 نومبر  کینیڈا جارج کوڈرنگٹن  نیدرلینڈز لوک وین ٹروسٹ سیڈگارس پارک، پاٹشیفٹسروم  نیدرلینڈز 17 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2450 27 نومبر  برمودا ارونگ رومین  کینیڈا جارج کوڈرنگٹن سیڈگارس پارک، پاٹشیفٹسروم  کینیڈا 5 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2451 28 نومبر  برمودا ارونگ رومین  نیدرلینڈز لوک وین ٹروسٹ سیڈگارس پارک، پاٹشیفٹسروم  نیدرلینڈز 8 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2452 30 نومبر  برمودا ارونگ رومین  کینیڈا جارج کوڈرنگٹن ولوومورپارک, بینونی  کینیڈا 3 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2455 1 دسمبر  کینیڈا جارج کوڈرنگٹن  نیدرلینڈز لوک وین ٹروسٹ ولوومورپارک, بینونی  نیدرلینڈز 1 وکٹوں سے (ڈی ایل ایس)
ایک روزہ بین الاقوامی#2456 2 دسمبر  برمودا ارونگ رومین  نیدرلینڈز لوک وین ٹروسٹ ولوومورپارک, بینونی  برمودا 6 وکٹوں سے

زمبابوے کا دورہ بنگلہ دیش[ترمیم]

[[زمبابوے نے کہا تھا کہ وہ 2006ء میں کوئی ٹیسٹ نہیں کھیلے گا، اس لیے بنگلہ دیش کے اس دورے میں صرف ون ڈے انٹرنیشنل شامل تھے۔ وہ بنگلہ دیش کے خلاف اپنے چھ میچوں میں سے کوئی بھی نہیں جیتے، ٹوئنٹی 20 انٹرنیشنل کے ساتھ ساتھ لگاتار پانچ ون ڈے ہارے۔

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
صرف ٹوئنٹی20 بین الاقوامی
ٹوئنٹی20 بین الاقوامی#9 28 نومبر شہریار نفیس پراسپراتسیا کھلنا ڈویژنل اسٹیڈیم, کھلنا  بنگلادیش 43 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی سیریز
ایک روزہ بین الاقوامی#2453 30 نومبر حبیب البشر پراسپراتسیا کھلنا ڈویژنل اسٹیڈیم, کھلنا  بنگلادیش 9 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2457 3 دسمبر حبیب البشر پراسپراتسیا شہید چندو اسٹیڈیم, بوگرا  بنگلادیش 6 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2459 5 دسمبر حبیب البشر پراسپراتسیا شہید چندو اسٹیڈیم, بوگرا  بنگلادیش 26 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2461 8 دسمبر حبیب البشر پراسپراتسیا شیربنگلہ نیشنل کرکٹ اسٹیڈیم, ڈھاکہ  بنگلادیش 8 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2462 10 دسمبر حبیب البشر پراسپراتسیا شیربنگلہ نیشنل کرکٹ اسٹیڈیم, ڈھاکہ  بنگلادیش 3 وکٹوں سے

دسمبر[ترمیم]

سری لنکا کا دورہ نیوزی لینڈ[ترمیم]

[[سری لنکا مسلسل تیسرے موسم گرما میں نیوزی لینڈ کا دورہ کر رہا ہے، اس بار وہ دو ٹیسٹ، پانچ ایک روزہ بین الاقوامی اور دو ٹوئنٹی 20 بین الاقوامی میچوں کی سیریز کھیل رہا ہے۔[14]

2006-07ء میں سری لنکا کا دورہ نیوزی لینڈ۔ 2-ٹیسٹ سیریز 1-1 سے ڈرا ہوگئی۔ ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل سیریز 1-1۔ ون ڈے سیریز 2-2

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ٹیسٹ سیریز
ٹیسٹ#1820 7–11 دسمبر سٹیفن فلیمنگ مہیلا جے وردھنے جیڈ اسٹیڈیم, کرائسٹ چرچ  نیوزی لینڈ 5 وکٹوں سے
ٹیسٹ#1822 15–19 دسمبر سٹیفن فلیمنگ مہیلا جے وردھنے بیسن ریزرو، ویلنگٹن  سری لنکا 217 رنز سے
ٹوئنٹی20 بین الاقوامی سیریز
ٹوئنٹی20 بین الاقوامی#11 22 دسمبر سٹیفن فلیمنگ مہیلا جے وردھنے ویسٹ پیک اسٹیڈیم, ویلنگٹن  سری لنکا 18 رنز سے (ڈی ایل ایس)
ٹوئنٹی20 بین الاقوامی#12 26 دسمبر سٹیفن فلیمنگ مہیلا جے وردھنے ایڈن پارک، آکلینڈ  نیوزی لینڈ 5 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی سیریز
ایک روزہ بین الاقوامی#2468 28 دسمبر ڈینیل وٹوری مہیلا جے وردھنے مکلین پارک, نیپیئر  سری لنکا 7 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2469 31 دسمبر ڈینیل وٹوری مہیلا جے وردھنے کوئنزٹاؤن ایونٹس سینٹر, کوئنزٹاؤن  نیوزی لینڈ 1 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2470 2 جنوری ڈینیل وٹوری مہیلا جے وردھنے جیڈ اسٹیڈیم, کرائسٹ چرچ  نیوزی لینڈ 4 وکٹوں سے (ڈی ایل ایس)
ایک روزہ بین الاقوامی#2471 6 جنوری سٹیفن فلیمنگ مہیلا جے وردھنے ایڈن پارک، آکلینڈ  سری لنکا 189 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2472a 9 جنوری سٹیفن فلیمنگ مہیلا جے وردھنے سیڈون پارک, ہیملٹن میچ ملتوی کردیا گیا

سکاٹ لینڈ کا دورہ بنگلہ دیش[ترمیم]

ایسوسی ایٹ رکن سکاٹ لینڈ نے دسمبر میں دو ایک روزہ بین الاقوامی میچوں کے لیے بنگلہ دیش کا دورہ کیا اور دونوں میچ ہار گئے۔ وہ بنگلہ دیش کرکٹ بورڈ کی اکیڈمی ٹیم سے وارم اپ میچ بھی ہار گئے۔

سکاٹ لینڈ کا دورہ بنگلہ دیش 2006-07ء۔ بنگلہ دیش نے 2 ایک روزہ میچوں کی سیریز 2-0 سے جیت لی۔

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی سیریز
ایک روزہ بین الاقوامی#2465 15 دسمبر کریگ رائٹ حبیب البشر چٹاگانگ ڈویژنل اسٹیڈیم, چٹا گانگ  بنگلادیش 6 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2467 17 دسمبر کریگ رائٹ حبیب البشر شیربنگلہ نیشنل کرکٹ اسٹیڈیم, ڈھاکہ  بنگلادیش 146 رنز سے

جنوری[ترمیم]

پاکستان کا دورہ جنوبی افریقہ[ترمیم]

پاکستان نے جنوبی افریقہ میں تین ٹیسٹ، ایک ٹی ٹوئنٹی اور پانچ ایک روزہ بین الاقوامی میچ کھیلے۔

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ٹیسٹ سیریز
ٹیسٹ#1828 11–15 جنوری گریم اسمتھ انضمام الحق سپر سپورٹ پارک, سینچورین  جنوبی افریقا 7 وکٹوں سے
ٹیسٹ#1829 19–23 جنوری گریم اسمتھ انضمام الحق سینٹ جارج پارک, پورٹ الزبتھ  پاکستان 5 وکٹوں سے
ٹیسٹ#1830 26–30 جنوری گریم اسمتھ انضمام الحق نیولینڈز, کیپ ٹاؤن  جنوبی افریقا 5 وکٹوں سے
صرف ٹوئنٹی20 بین الاقوامی
ٹوئنٹی20 بین الاقوامی#14 2 فروری گریم اسمتھ یونس خان نیو وانڈررز اسٹیڈیم, جوہانسبرگ  جنوبی افریقا 10 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی سیریز
ایک روزہ بین الاقوامی#2506 4 فروری گریم اسمتھ یونس خان سپر سپورٹ پارک, سینچورین  جنوبی افریقا 164 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2513 7 فروری گریم اسمتھ انضمام الحق کنگزمیڈ, ڈربن  پاکستان 141 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2517 9 فروری گریم اسمتھ انضمام الحق سینٹ جارج پارک, پورٹ الزبتھ میچ ملتوی کردیا گیا
ایک روزہ بین الاقوامی#2521 11 فروری گریم اسمتھ انضمام الحق نیولینڈز, کیپ ٹاؤن  جنوبی افریقا 10 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2523 14 فروری گریم اسمتھ انضمام الحق نیو وانڈررز اسٹیڈیم, جوہانسبرگ  جنوبی افریقا 9 وکٹوں سے

کامن ویلتھ بینک سیریز[ترمیم]

کامن ویلتھ بینک سیریز پچھلے سال کی طرح اسی فارمیٹ کی پیروی کرتی ہے جس میں گروپ مرحلے کے 12 میچز (ہر ٹیم کے لیے 8) اور تین میں سے بہترین فائنل سیریز۔ وی بی اس سیریز کا شریک برانڈڈ سپانسر ہے۔

گروپ اسٹیج
نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2473 12 جنوری  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  انگلستان مائیکل وان ملبورن کرکٹ گراؤنڈ، ملبورن  آسٹریلیا 8 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2474 14 جنوری  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ بیللیریواوول, ہوبارٹ  آسٹریلیا 105 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2475 16 جنوری  انگلستان مائیکل وان  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ بیللیریواوول, ہوبارٹ  انگلستان 3 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2478 19 جنوری  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  انگلستان اینڈریو فلنٹوف گابا، برسبین  آسٹریلیا 4 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2479 21 جنوری  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ سڈنی کرکٹ گراؤنڈ، سڈنی  آسٹریلیا 2 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2482 23 جنوری  انگلستان اینڈریو فلنٹوف  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ ایڈیلیڈ اوول، ایڈیلیڈ  نیوزی لینڈ 90 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2486 26 جنوری  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  انگلستان اینڈریو فلنٹوف ایڈیلیڈ اوول، ایڈیلیڈ  آسٹریلیا 9 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2488 28 جنوری  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ ڈبلیو اے سی اے گراؤنڈ, پرتھ  آسٹریلیا 8 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2490 30 جنوری  انگلستان اینڈریو فلنٹوف  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ ڈبلیو اے سی اے گراؤنڈ, پرتھ  نیوزی لینڈ 58 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2497 2 فروری  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  انگلستان اینڈریو فلنٹوف سڈنی کرکٹ گراؤنڈ، سڈنی  انگلستان 92 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2501 4 فروری  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ ملبورن کرکٹ گراؤنڈ، ملبورن  آسٹریلیا 5 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2510 6 فروری  انگلستان مائیکل وان  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ گابا، برسبین  انگلستان 14 رنز سے
فائنلزs
نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2515 9 فروری  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  انگلستان اینڈریو فلنٹوف ملبورن کرکٹ گراؤنڈ، ملبورن  انگلستان 4 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2519 11 فروری  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  انگلستان اینڈریو فلنٹوف سڈنی کرکٹ گراؤنڈ، سڈنی  انگلستان 34 رنز سے (ڈی ایل ایس)

کینیا میں ایسوسی ایٹس سہ ملکی سیریز[ترمیم]

کینیا نے 17 اور 24 جنوری کے درمیان ممباسا اسپورٹس کلب میں سہ رخی سیریز کے لیے کینیڈا اور سکاٹ لینڈ کی میزبانی کی۔[15]

ٹیم کھیلے جیتے ہارے NR پوائنٹس نیٹ رن ریٹ
 کینیا 4 3 1 0 13 +0.847
 اسکاٹ لینڈ 4 2 2 0 8 −0.906
 کینیڈا 4 1 3 0 5 +0.364
گروپ اسٹیج
نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2476 17 جنوری  کینیا سٹیوٹکولو  اسکاٹ لینڈ کریگ وائٹ ممباسا اسپورٹس کلب, ممباسا  کینیا 190 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2477 18 جنوری  کینیڈا جان ڈیوسن  اسکاٹ لینڈ کریگ وائٹ ممباسا اسپورٹس کلب, ممباسا  اسکاٹ لینڈ 2 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2478a 20 جنوری  کینیا سٹیوٹکولو  کینیڈا جان ڈیوسن ممباسا اسپورٹس کلب, ممباسا  کینیا ضبط کر کے
ایک روزہ بین الاقوامی#2481 21 جنوری  کینیا سٹیوٹکولو  اسکاٹ لینڈ ریان واٹسن ممباسا اسپورٹس کلب, ممباسا  کینیا 6 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2483 23 جنوری  کینیڈا جان ڈیوسن  اسکاٹ لینڈ کریگ وائٹ ممباسا اسپورٹس کلب, ممباسا  اسکاٹ لینڈ 2 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2484 24 جنوری  کینیا سٹیوٹکولو  کینیڈا جان ڈیوسن ممباسا اسپورٹس کلب, ممباسا  کینیڈا 69 رنز سے

ویسٹ انڈیز کا دورہ بھارت[ترمیم]

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2480 21 جنوری راہول ڈریوڈ برائن لارا وی سی اے گراؤنڈ, ناگپور  بھارت 14 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2485 24 جنوری راہول ڈریوڈ کرس گیل بارہ بٹی اسٹیڈیم, کٹک  بھارت 20 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2487 27 جنوری راہول ڈریوڈ برائن لارا ایم اے چدمبرم اسٹیڈیم, چنائی  ویسٹ انڈیز 3 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2493 31 جنوری راہول ڈریوڈ برائن لارا آئی پی سی ایل گراؤنڈ, وڈودرا  بھارت 160 رنز سے

ورلڈ کرکٹ لیگ 2007ء ڈویژن ون[ترمیم]

ورلڈ کرکٹ لیگ ٹورنامنٹ کے ٹاپ ٹیر کا پہلا ایڈیشن نیروبی، کینیا میں 29 جنوری سے 7 فروری تک منعقد ہوا۔[16] 2007ء کے کرکٹ ورلڈ کپ کے لیے کوالیفائی کرنے والی چھ غیر ٹیسٹ ٹیموں نے راؤنڈ رابن ٹورنامنٹ میں حصہ لیا جس میں سرفہرست دو ٹیموں نے فائنل کے لیے کوالیفائی کیا اور 2007ء کی ٹوئنٹی 20 عالمی چیمپئن شپ کے لیے بھی کوالیفائی کیا۔

لیگ اسٹیج
نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2489 29 جنوری  برمودا ارونگ رومین  کینیا سٹیوٹکولو جیفری اسپورٹس کلب گراؤنڈ, نیروبی  کینیا 10 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2491 30 جنوری  کینیڈا جان ڈیوسن  نیدرلینڈز لوک وین ٹروسٹ رواراکا اسپورٹس کلب گراؤنڈ, نیروبی  نیدرلینڈز 8 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2492 30 جنوری  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن  اسکاٹ لینڈ کریگ رائٹ نیروبی جم خانہ کلب, نیروبی  اسکاٹ لینڈ 3 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2494 31 جنوری  برمودا ارونگ رومین  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن جیفری اسپورٹس کلب گراؤنڈ, نیروبی  آئرلینڈ 4 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2495 31 جنوری  کینیڈا جان ڈیوسن  اسکاٹ لینڈ کریگ رائٹ رواراکا اسپورٹس کلب گراؤنڈ, نیروبی  اسکاٹ لینڈ 7 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2496 31 جنوری  کینیا سٹیوٹکولو  نیدرلینڈز لوک وین ٹروسٹ نیروبی جم خانہ کلب, نیروبی  کینیا 7 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2498 2 فروری  کینیڈا جان ڈیوسن  برمودا ارونگ رومین نیروبی جم خانہ کلب, نیروبی  کینیڈا 56 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2499 2 فروری  کینیا سٹیوٹکولو  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن رواراکا اسپورٹس کلب گراؤنڈ, نیروبی  کینیا 1 وکٹ سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2500 2 فروری  اسکاٹ لینڈ کریگ رائٹ  نیدرلینڈز لوک وین ٹروسٹ جیفری اسپورٹس کلب گراؤنڈ, نیروبی  اسکاٹ لینڈ 2 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2502 4 فروری  برمودا ارونگ رومین  نیدرلینڈز لوک وین ٹروسٹ رواراکا اسپورٹس کلب گراؤنڈ, نیروبی  نیدرلینڈز 8 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2503 4 فروری  کینیڈا جان ڈیوسن  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن جیفری اسپورٹس کلب گراؤنڈ, نیروبی  کینیڈا 6 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2504 4 فروری  کینیا سٹیوٹکولو  اسکاٹ لینڈ کریگ رائٹ نیروبی جم خانہ کلب, نیروبی  اسکاٹ لینڈ 77 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2507 5 فروری  برمودا ارونگ رومین  اسکاٹ لینڈ کریگ رائٹ رواراکا اسپورٹس کلب گراؤنڈ, نیروبی  برمودا 5 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2508 5 فروری  کینیڈا جان ڈیوسن  کینیا سٹیوٹکولو جیفری اسپورٹس کلب گراؤنڈ, نیروبی  کینیا 158 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2509 5 فروری  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن  نیدرلینڈز لوک وین ٹروسٹ نیروبی جم خانہ کلب, نیروبی  نیدرلینڈز 6 رنز سے
فائنلز
نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2512 7 فروری  اسکاٹ لینڈ کریگ رائٹ  کینیا سٹیوٹکولو نیروبی جم خانہ کلب, نیروبی  کینیا 8 وکٹوں سے

فروری[ترمیم]

بنگلہ دیش کا دورہ زمبابوے[ترمیم]

بنگلہ دیش نے 4 سے 10 فروری تک زمبابوے میں 4 میچوں کی ون ڈے سیریز کھیلی۔

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2505 4 فروری پراسپراتسیا حبیب البشر ہرارے اسپورٹس کلب، ہرارے  بنگلادیش 45 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2511 6 فروری پراسپراتسیا حبیب البشر ہرارے اسپورٹس کلب، ہرارے  زمبابوے 8 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2516 9 فروری پراسپراتسیا حبیب البشر ہرارے اسپورٹس کلب، ہرارے  بنگلادیش 14 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2518 10 فروری پراسپراتسیا حبیب البشر ہرارے اسپورٹس کلب، ہرارے  بنگلادیش 1 وکٹ سے

سری لنکا کا دورہ بھارت[ترمیم]

سری لنکا نے 8 سے 17 فروری تک بھارت میں 4 میچوں کی ون ڈے سیریز کھیلی۔

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2514 8 فروری راہول ڈریوڈ مہیلا جے وردھنے ایڈن گارڈنز، کولکتہ بے نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2520 11 فروری راہول ڈریوڈ مہیلا جے وردھنے مادھوراؤ سندھیا کرکٹ گراؤنڈ, راجکوٹ  سری لنکا 5 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2522 14 فروری راہول ڈریوڈ مہیلا جے وردھنے نہرو اسٹیڈیم, مارگاو  بھارت 5 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2525 17 فروری راہول ڈریوڈ مہیلا جے وردھنے اے سی اے وی ڈی سی اے اسٹیڈیم, وشاکھاپٹنم  بھارت 7 وکٹوں سے

چیپل-ہیڈلی ٹرافی[ترمیم]

ورلڈ کپ سے دو ہفتے قبل بنگلہ دیش، برمودا اور کینیڈا نے سہ رخی سیریز میں حصہ لیا۔ تمام میچز اینٹیگوا ریکری ایشن گراؤنڈ میں کھیلے گئے۔

نمبر تاریخ میزبان کپتان مہمان کپتان مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2524 16 فروری سٹیفن فلیمنگ مائیکل ہسی ویسٹ پیک اسٹیڈیم, ویلنگٹن  نیوزی لینڈ 10 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2526 18 فروری سٹیفن فلیمنگ مائیکل ہسی ایڈن پارک، آکلینڈ  نیوزی لینڈ 5 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2527 20 فروری سٹیفن فلیمنگ مائیکل ہسی سیڈون پارک, ہیملٹن  نیوزی لینڈ 1 وکٹ سے

اینٹیگوا سہ ملکی سیریز[ترمیم]

[[ورلڈ کپ سے دو ہفتے قبل بنگلہ دیش، برمودا اور کینیڈا نے سہ رخی سیریز میں حصہ لیا۔ تمام میچز اینٹیگوا ریکری ایشن گراؤنڈ میں کھیلے گئے۔[17]

ٹیم کھیلے جیتے ہارے بے نتیجہ پوائنٹس نیٹ رن ریٹ
 بنگلادیش 2 2 0 0 9 +0.831
 کینیڈا 2 1 1 0 4 +0.181
 برمودا 2 0 2 0 0 −0.957
سہ ملکی سیریز
نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
ایک روزہ بین الاقوامی#2528 25 فروری  بنگلادیش حبیب البشر  برمودا ارونگ رومین اینٹیگوا ریکری ایشن گراؤنڈ, سینٹ جانز, اینٹیگوا  بنگلادیش 8 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2529 26 فروری  برمودا ارونگ رومین  کینیڈا جان ڈیوسن اینٹیگوا ریکری ایشن گراؤنڈ, سینٹ جانز, اینٹیگوا  کینیڈا 3 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2530 28 فروری  بنگلادیش حبیب البشر  کینیڈا جان ڈیوسن اینٹیگوا ریکری ایشن گراؤنڈ, سینٹ جانز, اینٹیگوا  بنگلادیش 13 رنز سے

مارچ[ترمیم]

ورلڈ کپ[ترمیم]

گروپ اسٹیج[ترمیم]

ورلڈ کپ 2007ء اپنی نوعیت کا نواں، 13 مارچ سے شروع ہو کر 28 اپریل تک جاری رہے گا۔ 16 ٹیمیں حصہ لیں گی، کیونکہ چھ غیر ٹیسٹ ممالک میدان میں شامل ہوں گے۔ ٹیمیں چار کے چار گروپس میں کھیلیں گی، جہاں ٹاپ دو ٹیمیں سپر ایٹ مرحلے کے لیے کوالیفائی کریں گی، جو راؤنڈ رابن کے طور پر کھیلا جائے گا۔ اس کے بعد ٹاپ چار ٹیمیں سیمی فائنل میں پہنچ جاتی ہیں۔

نمبر گروپ تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
گروپ اسٹیج
ایک روزہ بین الاقوامی#2531 ڈی 13 مارچ  ویسٹ انڈیز برائن لارا  پاکستان انضمام الحق سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا  ویسٹ انڈیز 54 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2532 اے 14 مارچ  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  اسکاٹ لینڈ کریگ رائٹ وارنر پارک, باسیتیر, سینٹ کیٹز  آسٹریلیا 203 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2533 سی 14 مارچ  کینیڈا جان ڈیوسن  کینیا سٹیوٹکولو بیوزور اسٹیڈیم, جزیرہ گروس, سینٹ لوسیا  کینیا 7 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2534 بی 15 مارچ  برمودا ارونگ رومین  سری لنکا مہیلا جے وردھنے کوئینزپارک اوول, پورٹ آف اسپین, ٹرینیڈاڈ  سری لنکا 243 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2535 ڈی 15 مارچ  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن  زمبابوے پراسپراتسیا سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا میچ برابر
ایک روزہ بین الاقوامی#2536 اے 16 مارچ  نیدرلینڈز لوک وین ٹروسٹ  جنوبی افریقا گریم اسمتھ وارنر پارک, باسیتیر, سینٹ کیٹز  جنوبی افریقا 221 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2537 سی 16 مارچ  انگلستان مائیکل وان  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ بیوزور اسٹیڈیم, جزیرہ گروس, سینٹ لوسیا  نیوزی لینڈ 6 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2538 بی 17 مارچ  بنگلادیش حبیب البشر  بھارت راہول ڈریوڈ کوئینزپارک اوول, پورٹ آف اسپین, ٹرینیڈاڈ  بنگلادیش 5 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2539 ڈی 17 مارچ  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن  پاکستان انضمام الحق سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا  آئرلینڈ 3 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2540 اے 18 مارچ  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  نیدرلینڈز لوک وین ٹروسٹ وارنر پارک, باسیتیر, سینٹ کیٹز  آسٹریلیا 229 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2541 سی 18 مارچ  کینیڈا جان ڈیوسن  انگلستان مائیکل وان بیوزور اسٹیڈیم, جزیرہ گروس, سینٹ لوسیا  انگلستان 51 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2542 بی 19 مارچ  برمودا ارونگ رومین  بھارت راہول ڈریوڈ کوئینزپارک اوول, پورٹ آف اسپین, ٹرینیڈاڈ  بھارت 257 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2543 ڈی 19 مارچ  ویسٹ انڈیز برائن لارا  زمبابوے پراسپراتسیا سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا  ویسٹ انڈیز 6 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2544 اے 20 مارچ  اسکاٹ لینڈ ریان واٹسن  جنوبی افریقا گریم اسمتھ وارنر پارک, باسیتیر, سینٹ کیٹز  جنوبی افریقا 7 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2545 سی 20 مارچ  کینیا سٹیوٹکولو  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ بیوزور اسٹیڈیم, جزیرہ گروس, سینٹ لوسیا  نیوزی لینڈ 148 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2546 بی 21 مارچ  بنگلادیش حبیب البشر  سری لنکا مہیلا جے وردھنے کوئینزپارک اوول, پورٹ آف اسپین, ٹرینیڈاڈ  سری لنکا 198 رنز سے (ڈی ایل ایس)
ایک روزہ بین الاقوامی#2547 ڈی 21 مارچ  پاکستان انضمام الحق  زمبابوے پراسپراتسیا سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا  پاکستان 93 رنز سے (ڈی ایل ایس)
ایک روزہ بین الاقوامی#2548 اے 22 مارچ  نیدرلینڈز جیروئن سمٹس  اسکاٹ لینڈ کریگ رائٹ وارنر پارک, باسیتیر, سینٹ کیٹز  نیدرلینڈز 8 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2549 سی 22 مارچ  کینیڈا جان ڈیوسن  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ بیوزور اسٹیڈیم, جزیرہ گروس, سینٹ لوسیا  نیوزی لینڈ 114 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2550 بی 23 مارچ  بھارت راہول ڈریوڈ  سری لنکا مہیلا جے وردھنے کوئینزپارک اوول, پورٹ آف اسپین, ٹرینیڈاڈ  سری لنکا 69 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2551 ڈی 23 مارچ  آئرلینڈ کائل میک کالن  ویسٹ انڈیز برائن لارا سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا  ویسٹ انڈیز 8 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2552 اے 24 مارچ  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  جنوبی افریقا گریم اسمتھ وارنر پارک, باسیتیر, سینٹ کیٹز  آسٹریلیا 83 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2553 سی 24 مارچ  انگلستان مائیکل وان  کینیا سٹیوٹکولو بیوزور اسٹیڈیم, جزیرہ گروس, سینٹ لوسیا  انگلستان 7 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2554 B 25 مارچ  بنگلادیش حبیب البشر  برمودا ارونگ رومین کوئینزپارک اوول, پورٹ آف اسپین, ٹرینیڈاڈ  بنگلادیش 7 وکٹوں سے

سپر ایٹ[ترمیم]

نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
سپر ایٹ
ایک روزہ بین الاقوامی#2555 27–28 مارچ  ویسٹ انڈیز برائن لارا  آسٹریلیا رکی پونٹنگ سرویوین رچرڈزاسٹیڈیم, نارتھ ساؤنڈ, اینٹیگوا  آسٹریلیا 103 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2556 28 مارچ  جنوبی افریقا گریم اسمتھ  سری لنکا مہیلا جے وردھنے پروویڈنس اسٹیڈیم, پروویڈنس, گیانا  جنوبی افریقا 1 وکٹ سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2557 29 مارچ  ویسٹ انڈیز برائن لارا  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ سرویوین رچرڈزاسٹیڈیم, نارتھ ساؤنڈ, اینٹیگوا  نیوزی لینڈ 7 وکٹ سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2558 30 مارچ  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن  انگلستان مائیکل وان پروویڈنس اسٹیڈیم, پروویڈنس, گیانا  انگلستان 48 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2559 31 مارچ  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  بنگلادیش حبیب البشر سرویوین رچرڈزاسٹیڈیم, نارتھ ساؤنڈ, اینٹیگوا  آسٹریلیا 10 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2560 1 اپریل  ویسٹ انڈیز برائن لارا  سری لنکا مہیلا جے وردھنے پروویڈنس اسٹیڈیم, پروویڈنس, گیانا  سری لنکا 113 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2561 2 اپریل  آئرلینڈ حبیب البشر  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ سرویوین رچرڈزاسٹیڈیم, نارتھ ساؤنڈ, اینٹیگوا  نیوزی لینڈ 9 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2562 3 اپریل  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن  جنوبی افریقا گریم اسمتھ پروویڈنس اسٹیڈیم, پروویڈنس, گیانا  جنوبی افریقا 7 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2563 4 اپریل  انگلستان مائیکل وان  سری لنکا مہیلا جے وردھنے سرویوین رچرڈزاسٹیڈیم, نارتھ ساؤنڈ, اینٹیگوا  سری لنکا 2 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2564 7 اپریل  بنگلادیش حبیب البشر  جنوبی افریقا گریم اسمتھ پروویڈنس اسٹیڈیم, پروویڈنس, گیانا  بنگلادیش 67 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2565 8 اپریل  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  انگلستان مائیکل وان سرویوین رچرڈزاسٹیڈیم, نارتھ ساؤنڈ, اینٹیگوا  آسٹریلیا 7 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2566 9 اپریل  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ پروویڈنس اسٹیڈیم, پروویڈنس, گیانا  نیوزی لینڈ 129 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2567 10 اپریل  ویسٹ انڈیز برائن لارا  جنوبی افریقا گریم اسمتھ کوئینز پارک, سینٹ جارجز, گریناڈا  جنوبی افریقا 67 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2568 11 اپریل  انگلستان مائیکل وان  بنگلادیش حبیب البشر کینسنگٹن اوول, برج ٹاؤن, بارباڈوس  انگلستان 4 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2569 12 اپریل  سری لنکا مہیلا جے وردھنے  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ کوئینز پارک, سینٹ جارجز, گریناڈا  سری لنکا 6 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2570 13 اپریل  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن کینسنگٹن اوول, برج ٹاؤن, بارباڈوس  آسٹریلیا 9 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2571 14 اپریل  جنوبی افریقا گریم اسمتھ  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ کوئینز پارک, سینٹ جارجز, گریناڈا  نیوزی لینڈ 5 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2572 15 اپریل  بنگلادیش حبیب البشر  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن کینسنگٹن اوول, برج ٹاؤن, بارباڈوس  آئرلینڈ 74 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2573 16 اپریل  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  سری لنکا مہیلا جے وردھنے کوئینز پارک, سینٹ جارجز, گریناڈا  آسٹریلیا 7 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2574 17 اپریل  جنوبی افریقا گریم اسمتھ  انگلستان مائیکل وان کینسنگٹن اوول, برج ٹاؤن, بارباڈوس  جنوبی افریقا 9 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2575 18 اپریل  آئرلینڈ ٹرینٹ جانسٹن  سری لنکا مہیلا جے وردھنے کوئینز پارک, سینٹ جارجز, گریناڈا  سری لنکا 8 وکٹوں سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2576 19 اپریل  ویسٹ انڈیز برائن لارا  بنگلادیش حبیب البشر کینسنگٹن اوول, برج ٹاؤن, بارباڈوس  ویسٹ انڈیز 99 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2577 20 اپریل  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ کوئینز پارک, سینٹ جارجز, گریناڈا  آسٹریلیا 215 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2578 21 اپریل  ویسٹ انڈیز برائن لارا  انگلستان مائیکل وان کینسنگٹن اوول, برج ٹاؤن, بارباڈوس  انگلستان 1 وکٹ سے

ناک آؤٹ مرحلہ[ترمیم]

نمبر تاریخ ٹیم 1 کپتان 1 ٹیم 2 کیپٹن 2 مقام نتیجہ
سیمی فائنلز
ایک روزہ بین الاقوامی#2579 24 اپریل  سری لنکا مہیلا جے وردھنے  نیوزی لینڈ سٹیفن فلیمنگ سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا  سری لنکا 81 رنز سے
ایک روزہ بین الاقوامی#2580 25 اپریل  آسٹریلیا رکی پونٹنگ  جنوبی افریقا گریم اسمتھ بیوزور اسٹیڈیم, جزیرہ گروس, سینٹ لوسیا  آسٹریلیا 7 وکٹوں سے
فائنلز
ایک روزہ بین الاقوامی#2581 28 اپریل  سری لنکا مہیلا جے وردھنے  آسٹریلیا رکی پونٹنگ کینسنگٹن اوول, برج ٹاؤن, بارباڈوس  آسٹریلیا 53 رنز سے (ڈی ایل ایس)

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Tri-series scheduled for Singapore and Malaysia, from Cricinfo. Retrieved 31 July 2006
  2. Windies contract dispute settled, from BBC. Retrieved 19 August 2006
  3. Zimbabwe tour of South Africa, 2006/07, from Cricinfo. Retrieved 19 August 2006
  4. https://en.wikipedia.org/wiki/International_cricket_in_2006%E2%80%9307#cite_note-4
  5. https://en.wikipedia.org/wiki/International_cricket_in_2006%E2%80%9307#cite_note-5
  6. Asia Cup and Afro-Asia Cup postponed, retrieved from Cricinfo, on 21 May 2006
  7. https://en.wikipedia.org/wiki/International_cricket_in_2006%E2%80%9307#cite_note-7
  8. Africa trip extended آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ theroyalgazette.com (Error: unknown archive URL), from Royal Gazette. Retrieved 24 September 2006
  9. Bermuda in Kenya, November 2006[مردہ ربط], from Cricmania.com. Retrieved 30 November 2006.
  10. Associates heading in opposite directions, from Cricinfo. Retrieved 15 December 2006
  11. India in South Africa, 2006–07 One-Day Series Highest Individual Scores, from Cricinfo. Retrieved 15 December 2006
  12. ^ ا ب India in South Africa, 2006–07 One-Day Series Averages, from Cricinfo. Retrieved 15 December 2006
  13. ICC Associates South Africa Tri-Series 2006/07 آرکائیو شدہ 14 ستمبر 2012 بذریعہ وے بیک مشین, from CricketArchive. Retrieved 19 August 2006
  14. Sri Lanka in New Zealand 2006/07 آرکائیو شدہ 28 ستمبر 2012 بذریعہ وے بیک مشین, from CricketArchive. Retrieved 7 August 2006
  15. "Associates Tri-Series (In Kenya), Associates Tri-Series (In Kenya) 2006/07 score, Match schedules, fixtures, points table, results, news" 
  16. ICC World Cricket League 2007, from Cricinfo. Retrieved 29 January 2007
  17. ICC Associates West Indies Tri-Series 2006/07 آرکائیو شدہ 28 ستمبر 2012 بذریعہ وے بیک مشین, from CricketArchive. Retrieved 19 August 2006