2016ء ڈھاکہ حملہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ڈھاکہ حملہ
بسلسلہ Internal conflict in Bangladesh
Gulshan attack location.png
Location of the attack within Dhaka
مقام روڈ نمبر 79، ہاؤس 5، گلشن 2
ہولے آرٹیسئین بیکوری، گلشن، ڈھاکہ، بنگلہ دیش
تاریخ 1–2 جولائی 2016
21:20 – 08:30 (بنگلا دیش معیاری وقت، UTC+06:00)
حملے کی قسم Mass shooting، گولہ، hostage-taking
ہلاکتیں 28 (20 شہری، 6 حملہ آور، 2 پولیس افسران)[1]
زخمی 50[2]
متاثرین 20–60 یرغمال[3][4][5]
مرتکبین عراق اور الشام میں اسلامی ریاست (متنازع)
Jamaat-ul-Mujahideen[6]
شرکا کی تعداد 7

1 جولائی 2016 کی رات 21:20 مقامی وقت کے مطابق [8] سات عسکریت پسندوں نے ڈھاکہ بنگلہ دیش کے گلشن کے علاقے میں موجود  ہولی آرٹیسان بیکری پر فائرنگ شروع کر دی۔[4][5] بم پھینکے اور کئی درجن لوگوں کو یرغمال بنا لیا اور دو پولیس اہلکاروں کو ایک جھڑپ میں مار ڈالا۔[4] وہ مبینہ  طور پر "اللہ اکبر!" ("خدا سب سے بڑا ہے ") چلاتے ہوئے رپورٹ کیے گئے تھے۔[5][9]

17 غیر ملکیوں، دو پولیس اہلکاروں، چھ مسلح افراد کے ساتھ اٹھائیس افراد ہلاک ہو ئے۔[1][10][11]  [12]

پس منظر[ترمیم]

بنگلہ دیش  کی آبادی 171 ملین، ایک ترقی پزیر ملک  ہونے ساتھ اس کی  جی ڈی پی فی کس آمدنی $1٫284 فی سال ہے۔ عسکریت پسند اسلامی تنظیم جماعت-لمجاہدین کو 1998 میں قائم کیا گیا تھا اور 2005 میں اسے کالعدم قرار دے دیا گیا تھا جب انہوں نے بم دھماکوں کا ایک سلسلہ کا ارتکاب کیا تھا، لیکن بعد میں ان سرگرمیوں کو  ایک بار پھر شروع کر دیا۔  2013 کے بعد سے، ملک میں مذہبی اقلیتوں، سیکولر اور لادین مصنفین اور ہم جنس پرستوں پر حملوں میں اضافہ ہوا ہے۔ ستمبر 2015 سے اب تک 30 ایسے حملے ہو چکے ہیں اور عراق اور الشام میں اسلامی ریاست نے ان حملوں کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ گلشن ڈھاکہ  کا ایک امیر علاقہ ہے، جہاں پر بہت سے غیر ملکی سفارتخانے موجود ہیں۔[5]

حملے اور ریسکیو[ترمیم]

حملہ مقامی وقت کے مطابق  21:20 بجے شروع ہوا۔[13] سات حملہ آور ریستوران میں بم اور بندوقوں سے مسلحہ ہو کر داخل ہوئے اور ایک حملہ آور کے پاس ایک تلوار بھی تھی۔ انہوں نے فائرنگ شروع کر دی اور لوگوں کو یرغمال بنانے سے پہلے بہت سے بم لگا دیے تھے۔ پولیس کے ساتھ ان کی جھڑپیں ہوئیں جس سے کئی اہلکار زخمی بھی ہوئے جن میں سے دو بعد میں مر گئے۔  پولیس نے ریستوران کا گردونواح گھیرے میں لے لیا اور ایک ریسکیو چھاپے کی منصوبہ بندی کی۔[4]

یرغمال کرنے والوں نے تین مطالبات کیے :[14]

  • جماعت  لمجاہدین، کے رہنما خالد سیف اللہ کو رہا کر دیا جائے۔
  • یرغمال کرنے والوں باہر نکلنے کے لیے ایک محفوظ راستہ فراہم کیا جائے۔
  • یرغمال کرنے والوں نے مطالبہ کیا کہ انکا انتہا پسند تشریح کا اسلام قبول کیا جائے۔

ریستوران کے اندر سے مبینہ طور پر لی گئی تصاویر داعش کے حامی ٹویٹر اکاؤنٹس پر دیکھی گئیں تھیں ۔[4]

بنگلہ دیش کی فوج، بحریہ، ایئر فورس، سرحدی گارڈز، پولیس، ریپڈ ایکشن بٹالین سے کمانڈو یونٹس اور مشترکہ افواج نے ریسکیو آپریشن 07:40 مقامی وقت پر شروع کیا۔[15] 13 یرغمالیوں کو بچا لیا گیا ہے۔ چھ حملہ آور ہلاک ہو گئے تھے کمانڈوز کے ساتھ ایک جھڑپ میں، جبکہ ساتویں کو زندہ پکڑ لیا گیا ۔[16]

دی ڈیلی کالر کانتھو نے رپورٹ کیا کہ انتہا پسند گروہ انصار السلام نے ایک ٹویٹ کے ذریعے 10 گھنٹے پہلے ہی حملوں کا اعلان کر دیا تھا ۔[17]

ہلاکتوں[ترمیم]

بیس عام شہری، چھ مسلح افراد اور دو پولیس افسران کی ہلاکت کی تصدیق کر دی گئی تھی، جبکہ دوسرے 50، زیادہ تر پولیس اہلکار تھے زخمی ہوئے تھے۔[18][19]، دو پولیس اہلکاروں میں ایک اسسٹنٹ کمشنر تھا اور دوسرا نزدیکی بنانی پولیس سٹیشن کا آفیسر انچارج تھا۔[20][21] جاپانی اور اطالوی شہری متاثرین میں شامل تھے۔[4] بنگلہ دیشی فوج نے ابتدائی طور پر اعلان کیا کہ تمام 20 یرغمالیوں کو ہلاک کر دیا گیا ہے اور تمام مقتولین غیر ملکی تھے۔[18] وہ لوگ جو قرآن کی کوئی آیت کی تلاوت کرسکتے تھے، انہیں چھوڑ دیا گیا تاکہ صرف غیر مسلموں کو ہی قتل کیا جائے ۔[22][23][24]

مقتولین میں سات جاپانی شہری-پانچ مرد اور دو عورتیں -جو جاپان انٹرنیشنل کوآپریشن ایجنسی سے منسلک تھے۔[25]

اموات بلحاظ قومیت
ملک تعداد
Flag of اطالیہ اٹلی 9
Flag of جاپان جاپان 7
Flag of بنگلادیش بنگلہ دیش 4
Flag of بھارت بھارت 1
Flag of ریاستہائے متحدہ ریاست ہائے متحدہ امریکا 1
کل 22[26]

ذمہ داری[ترمیم]

عماق نیوز ایجنسی جو عراق اور الشام میں اسلامی ریاست سے وابستہ ہے، نے ابتدائی طور 25 افراد کو قتل اور 40 افراد کو زخمی کرنے کا دعوی کیا۔[27]  عراق اور الشام میں اسلامی ریاستایک دوسری رپورٹ جاری کی طرف سے براہ راست داعش کے چند گھنٹے بعد، انہوں نے ا کہ اس گروپ نے ہلاک کر دیا "22 صلیبیوں " اور ان کے ہمراہ تھے کی طرف سے تصاویر کے حملہ آوروں کے سامنے کھڑے داعش کے بینر۔[28][29]

تاہم بنگلہ دیشی ہوم منسٹر ، اسد الزمان خان نے کہا ہے کہ قصورواروں کا تعلق جماعت لمجاہدین  سے ہے اور وہ عراق اور الشام میں اسلامی ریاست سے تعلق نہیں رکھتے تھے اور نہیں کر رہے تھے وہ زیادہ تر اعلیٰ تعلیم یافتہ اور امیر گھرانوں سے تعلق رکھتے تھے ۔[30][31]

رد عمل[ترمیم]

  • Bangladeshبنگلہ دیشی وزیر اعظمحسینہ واجد نے لوگوں کے قتل کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ حکومت انتہا پسندی اور دہشت گردی کو ختم کرنے کے لیے ہر ممکن کوشش کرے گی۔[32]
  • civilians."[33]
  •   evil."[34]
  •   loss."[35]
  • ۔[36]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب "Police kill 6 militants, rescue 13 hostages in Dhaka attack"۔ Boston Globe۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 جولائی 2016۔
  2. IANS (1 جولائی 2016)۔ "Gunmen kill 5, injure 50, take 20 hostages in Dhaka's diplomatic quarter"۔ Yahoo۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 جولائی 2016۔
  3. Wajahat S. Khan؛ Erik Oritz (جولائی 1, 2016)۔ "Gunmen Kill 4 Officers, Take Dozens Hostage in Bangladesh"۔ NBC News۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ جولائی 1, 2016۔
  4. ^ ا ب پ ت ٹ ث "Gunmen take at least 20 hostages in Dhaka diplomatic quarter, Bangladesh – reports"۔ rt.com۔ Russia Today۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 جولائی 2016۔
  5. ^ ا ب پ ت "Hostages taken in attack on restaurant in Bangladesh capital; witness says gunmen shouted 'Allahu Akbar'"۔ Fox News۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 جولائی 2016۔
  6. Trevor Hughes (3 جولائی 2016)۔ "Bangladesh official doubts ISIL's claim for hostage-taking attack"۔ USA Today۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 4 جولائی 2016۔
  7. "Chronology of Gulshan café crisis"۔ bdnews24.com۔ 1 جولائی 2016۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 جولائی 2016۔
  8. "Gunmen take hostages in Bangladeshi capital Dhaka"۔ BBC News (انگریزی زبان میں)۔ 1 جولائی 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 جولائی 2016۔
  9. "Bangladeshi police prepare to storm restaurant where Islamist terrorists are holding 20 hostages – including foreigners – after shooting two officers dead in Dhaka"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 جولائی 2016۔ Worker who escaped reported gunmen shouted 'Allahu Akbar' as they fired
  10. "Hostage crisis leaves 28 dead in Bangladesh diplomatic zone"۔ واشنگٹن پوسٹ۔ 2 جولائی 2016۔
  11. "20 foreigners killed in 'Isil' attack on Dhaka restaurant"۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 جولائی 2016۔
  12. "Gulshan attackers Bangladeshi citizens: IGP"۔ The Daily Star۔ 2 جولائی 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 جولائی 2016۔
  13. "Bangladesh Hostage Crisis: What Happened And Why"۔ NDTV۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 جولائی 2016۔
  14. "আত্মসমর্পণের আহ্বান যৌথ বাহিনীর، জঙ্গিদের তিন শর্ত" (Bengali زبان میں)۔ Bangla Tribune۔ 1 جولائی 2016۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 جولائی 2016۔
  15. "Security forces begin offensive to end hostage crisis"۔ The Daily Star۔ 2 جولائی 2016۔
  16. "Bangladesh PM Hasina says 13 hostages rescued alive from Gulshan café"۔ BDNews24۔ 2 جولائی 2016۔
  17. "এবিটির সকালে ঘোষণা، রাতে হামলা!"۔ Daily Kaler Kantho۔ 2 جولائی 2016۔
  18. ^ ا ب "Dhaka attack: 20 hostages killed Friday night, says ISPR"۔ The Daily Star۔ 2 جولائی 2016۔
  19. IANS (1 جولائی 2016)۔
  20. "Police officer killed as gunmen attack Bangladesh restaurant"۔ BDNews24۔ 2 جولائی 2016۔
  21. "2 Officers Dead, Dozens Wounded in Ongoing Bangladeshi Hostage Situation: Reports"۔ People Magazine۔ 1 جولائی 2016۔
  22. "'Those who could cite Quran were spared'"۔ The Daily Star۔ 2 جولائی 2016۔
  23. "20 hostages killed in 'Isil' attack on Dhaka restaurant popular with foreigners"۔ The Daily Telegraph۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 جولائی 2016۔
  24. SYED ZAIN AL-MAHMOOD۔ "Bangladesh Hostage's Father Says Son Didn't Expect to Live"۔ The Wall Street Journal۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 جولائی 2016۔ the militants, who Hasnat Karim said seemed to be in their early 20s, were hunting for foreigners and non-Muslims. They asked the hostages to recite verses from the Quran, he said. “Those who could [recite]، were treated well, but those who couldn’t were separated,”
  25. "「日本人7人死亡確認」 バングラデシュ人質事件" (Japanese زبان میں)۔ NHK۔ 2 جولائی 2016۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 جولائی 2016۔
  26. Ishaan Tharoor (جولائی 2, 2016)۔ "Three American students among 20 people hacked to death in Bangladesh by ISIS terrorists – who only spared those who could recite the Koran – before armored troops moved in"۔ واشنگٹن پوسٹ۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ جولائی 2, 2016۔
  27. "Amaq Agency Claims 24 Killed & 40 Wounded In Dhaka Attack."۔ 2 جولائی 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 جولائی 2016۔
  28. "Islamic State Officially Claims Responsibility For Dhaka Attack"۔ 3 جولائی 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 جولائی 2016۔
  29. Chris Summers؛ Chris Pleasance (3 جولائی 2016)۔ "Pictured: The grinning ISIS terrorists who hacked 20 innocent victims including westerners to death but spared those who could recite the Koran in Bangladesh attack"۔ Daily Mail۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 جولائی 2016۔
  30. AFP (جولائی، 2016 Hostage-takers were from Bangladesh group, not IS: minister Yahoo.com
  31. "Not ISIS, All Local Militants, Says Bangladesh Government On Dhaka Attack"۔ ndtv.com۔ NDTV۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 جولائی 2016۔
  32. "President condemns Gulshan café attack"۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 جولائی 2016۔
  33. "Deeply saddened at the loss of life in dastardly Dhaka attack: Pranab Mukherjee"۔ The Indian Express۔ 2 جولائی 2016۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 جولائی 2016۔
  34. "Iran's Zarif slams terror attack in Bangladesh"۔ Nikkei۔ 2 جولائی 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 جولائی 2016۔
  35. "Italians, 7 Japanese confirmed dead in Bangladesh terror attack"۔ Nikkei۔ 2 جولائی 2016۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 جولائی 2016۔
  36. "Gulshan attack: Japan PM Abe assures co-operation to battle terrorism"۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 جولائی 2016۔

بیرونی روابط[ترمیم]