آفرین لاہوری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
آفرین لاہوری
قومیت پاکستان
مقام لاهور
لقب شاه فقیرالله
نظموں کے دیوان کلیات آفرین لاهوری
تخلص آفرین
مؤثر حاکم لاہوری

آفَرینِ لاهوری مشہور بہ شاه ‎فقیرالله (دور 1070-1154ق)بارہویں قمری صدی میں پاکستان کے ایک شیعہ شاعر تھا۔ اس کی مشہور تصنیف میں تین مثنوی راز و نیاز یا هیر و رانجها، انبان معرفت، ابجد فکر اور متعدد نظمیں اور گیت کے اشعار شامل ہیں ، جن کو کلیات آفرین کے عنوان سے دو حصوں میں مرتب کیا گیا ہے۔ انہوں نے اپنی نظموں میں پیغمبر اسلام (ص) ، ائمہ کرام (ع) اور شہدائے کربلا کا احترام سے تذکرہ کیا ہے اور ان کی تعریف میں اور امام حسن اور امام حسین (ع) کی شہادت کے بارے میں ترجیحات میں دھنیں نظمیں مرتب کیں ہیں۔ وہ صائب سے متاثر تھا اور خود حاکم لاہوری جیسے شاعروں کو بھی متاثر کرتا تھا۔

نام اور نسب[ترمیم]

آفرین کا تعلق لاہور میں جوئیہ قبیلے اور گوجر کے شیعہ خاندان سے تھا۔ [1] سوانح نگاروں نے آفرین کی تاریخ پیدائش کا ذکر نہیں کیا ہے ، لیکن اس امر پر غور کیا ہے کہ آفرین کے ایک طالب علم اور اس کے ساتھی شہری ، حاکم لاہور نے لکھا ہے اس کی عمر اسی سال تھی اور ان کی وفات کی تاریخ 1154 ھ تھی [2] ، یہ کہا جاسکتا ہے کہ اس کی پیدائش 1074 یا اس سے تھوڑی پہلے ہی ہوئی تھی۔ [3]

آغا بزرگ تہرانی الذریعة وج تے مدرس تبریزی ریحانة الادب میں ، وہ شاہ فقیر اللہ کے نام سے جانا جاتا ہے ، جو لاہور کے زرتشتی بزرگوں میں سے ایک ہے جس نے مذہب تبدیل کیا۔ اسلام میں اور ان کی وفات 1143 یا 1153 ھ میں ہوئی۔ [4] کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ آغا بزرگ تہرانی اور صاحب ریحانة الادب نے اسے ایک اور افرین سے الجھادیا ہے۔ کیونکہ انھوں نے بالکل اسی طرح کا ترجمہ کیا ہے جو میڈیا کی لغت میں سمیع نے لکھا تھا [5] اور سمیع ، بغیر کسی ماخذ کے ، اس کو لاہور کے اکابر مجوسیوں میں سمجھا جو اسلام لائے۔ موت کی دو تاریخوں کا تذکرہ بھی اس الجھن کے ثبوت کے طور پر لیا گیا ہے۔ [6]آفتاب راے لکھنوی نے دو دیگر شعرا کا ذکر کیا ہے جن کا نام شمس الدین اور مرزا زین العابدین اصفہانی اصفہانی کا ذکر افرین تخلص کے ساتھ کیا ہے۔۔ [7] افرین الہ آبادی کا بھی ذکر گلشن صبح میں ہوا ہے۔ ، [8] آقا بزرگ نے اس کےدیوان کو بطور " دیوان آفرین الہ آبادی "، ذکر کیا ہے جو اس الجھن کا ایک اور ثبوت بھی ہوسکتا ہے۔ [9]

زندگی[ترمیم]

افرین لاہور میں پیدا ہوئے تھے[10] اور وہ شہر کے بخاری محلے میں رہائش پزیر تھے[11]۔ حاکم لاهوری، از دیدار آفرین میں ناصر علی سرہندی (1108-1048) کے ساتھ بچپن کا دورہ یاد کرتا ہے[12]۔ صائب جس کا نام حاجی فریدون تھا، سے ملاقات کی حفظ اللہ خان کی مجلس میں اشعار پڑھتے تھے۔وہ اپنے وقت کے بیشتر ادب سے رابطے میں تھے۔ خان آروز نے اپنے خطوط کا تذکرہ کیا[13]

جوانی میں ہی ، وہ فارسی شاعری میں بہت دلچسپی لیتے تھے اور اس زبان کے عظیم شاعروں کی بہت سی نظموں کو محفوظ رکھتے تھے۔ بعد میں اس نے رومی کی مسثنوی (مثنوی مولوی) پڑھائی۔ لیکن اس میں بہت سارے نئے موضوعات اور نظریات ہیں۔ [14][14]

آفرین کا انتقال سن 1154 ہجری میں ہوا اور انہیں اپنے گھر میں سپرد خاک کر دیا گیا۔حاکم لاهوری نے ان کی موت کی تاریخ «رفت نقاد معنی از عالم» میں بیان کی ۔[15]

آفرین نے درویشانہ زندگی بسر کی ، اس ای مقامی منگولوں سے آشنائی تھی جنھوں نے ہندوستان پر حکومت کی۔ اس نے حکمرانوں سے وابستہ ہونے سے گریز کیا ، کیوں کہ عبد الصمد خان اور اس کے بیٹے زکریا خان نے بار بار ان سے ملنے کے لیے کہا تھا ، لیکن افرین نے انکار کر دیا۔[16]

اپنے اشعار میں سلوک درویشانہ اور صوفیانہ موضوعات کے استعمال اور شاعری میں پیر چشت کا ذکر تصوف کی طرف راغب ہونے والا ظاہر کرتا ہے۔[17] اگرچہ اس کی فطرت صوفیانہ تھی لیکن اس کا تعلق کسی صوفی سلسلے سے نہیں تھا۔

آفرین لاہوری نے لاہور میں وزیر خان مسجد کے صحن میں منعقدہ ادبی محفلوں میں شرکت کی اور اپنے اعلی مقام کی وجہ سے صدر نشیں رہے۔[18]، تذکره نویسوں سوانح نگاروں نے اپنے تذکروں میں، جو ان کی شاعری اور ذہن پن کا اظہار کرتے ہیں ، ان کے مناسب پڑھنے اور شاعرانہ مسائل کے جوابات کا حوالہ دیتے ہیں۔[19] والہ داغستانی[20] 1147 میں اوو آزاد بلگرامی[21] نے سال 1143 اور 1147 لاهور میں اس سے ملاقات کی ۔

نمونہ اشعار[ترمیم]

ان کی شاعری عارفانہ جذبات سے بھری ہوئی ہے۔ انہوں نے اپنے اشعار میں ، پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اور ائمّہ اطہار اور شہدائے کربلا کے بارے میں بڑے احترام اور شیفتگی کے ساتھ گفتگو کی ہے۔ ان کی شاعری خامیوں کے بغیر نہیں ہے۔[22] آفرین اہل بیت سے ارادت رکھتے تھے، اس نے ان کی ستایش میں اشعار اور نظمیں لکھیں[23]اور امام حسن اور امام حسین (علیہ السلام) کی شہادت میں ایک تفصیلی ترجیح مندرجہ ذیل معلومات پر مشتمل ہے۔

دل می‌تپد به یاد شهیدان کربلا جانم فدای همت مردان کربلا

آثار[ترمیم]

فائل:احوال و افکار و آثار آفرین لاهوری.jpg
احوال و افکار و آثار آفرین لاهوری

کلیات آفرین لاهوری کی عمومیات کی پہلی جلد 1967 میں پنجابی ادبی آکادمی لاهور نے غلام ربانی عزیر کے ذریعہ شائع کی تھی۔اس دیوان میں 869 غزل، 14 رباعی، 13 تضمین صائب، طالب آملی، امیرخسرو دہلوی، سعدی، فغانی، نظیری، حافظ اور فصیحی هروی کے ہیں دیگر نظموں میں ، ایک مخمس ، آنحضرت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی مدح میں، امام حسن اور امام حسین کی شہادت پر ترجیع بند ، مستزاد ، تاریخ کے دو مضامین اور ایک مذہبی رہنما کی وفات پر ایک ٹکڑا ہے۔ دوسری جلد میں 38 قصیدے اور تین مثنویاں ہیر اور رانجھا ، انبان معرفت اور ابجد فکر پر مشتمل ہے، جو 1390ش (2011) تک شائع نہیں ہوئیں۔[24]، ذبیح اللہ صفا نے برطانوی میوزیم کی لائبریری میں دیوانِ افرین کا 1147 ھ کا لکھا ہوا نسخہ دیکھا ، جس میں 40،000 سے زیادہ اشعار ہیں۔[25]، لیکن والہ داغستانی نے دیوان آفرینمیں 12 ہزار بیت بتائے ہیں[26] اور حاکم لاهوری پانج، چھ ہزار بیت[27] کاتذکوہ کیا ہے ۔ پاکستانی مخطوطات کی مشترکہ فہرست میں ، اس دیوان کی چار کاپیاں متعارف کروائی گئیں ، جن میں شروع اور اختتامی نسخوں میں 7،300 اشعار ہیں۔[28] [29] آقابزرگ تہرانی نے "دیوان آفرین الہ آبادی" کا تعارف کرایا ، جس میں فارسی زبان میں نظمیں ان کی تخلیقات سے جمع کی گئیں۔[30]

  • مثنوی ابجد فکر:یہ ایک صوفیانہ نظم ہے جو حقیق بحر میں لکھی گئی ہے۔آفرین نے ابتدا میں اورنگزیب کی تعریف کی۔ ابجد فکر میں مناجات، مدح خدا، وصف پیامبر (ص)، مدح اورنگ زیب، ظہور آدم، صبر، توکل، ہوا و ہوس، رضا، حکایت ابراہیم ادہم، ، اس معنی میں اور اس کتاب کے آخر میں عشق اور حکایت ہے۔ کراچی میوزیم کی لائبریری میں ابجد فکر کی دو کاپیاں(N.M 1963-262) و گنج بخش(ش 3768) موجود ہیں[31]
  • مثنوی مہتاب و کتان (جان و دل)؛ یہ دل نامی شہزادے اور جان نامی ایک لڑکی کی محبت کی کہانی ہے اور اسے بحر ہزج مسدس محذوف میں لکھا گیا ہے۔اس مثنوی کی نامکمل کاپیاں پنجاب یونیورسٹی ،مجموعه آذر(نمبر o7309) میں رکھی گئی ہیں۔[32]
  • مثنوی ہیر و رانجھا: رانجھا کی محبت کی کہانی ہیر نامی اس لڑکی کے بارے میں ہے ، جو ایک قدیم ہندوستانی لیجنڈ سمجھی جاتی ہے۔ آفرین نے اس مثنوی کی بحر متقارب مثمن میں تقریبا 2132 اشعار میں تالیف کی ہے۔آزاد بلگرامی نے 1143 ہجری میں آفرین کے ساتھ اپنی پہلی ملاقات میں اس کو مثنوی کی تصنیف میں مصروف دیکھا ہے ، یہ نظم فرخ سیر (1125-1131) کو پیش کی ہے اور یہ امرتسر (1319 ہجری) اور کراچی (1957) میں دو بار شائع ہوچکی ہے۔
  • انبان معرفت: یہ مثنوی بحر رمل مسدس میں لکھی گئی ہے[33] اور یہ بہادر شاہ کے زمانے میں مرتب ہوئی تھی[34] اور ابھی تک اس کا کوئی نسخہ پیش نہیں کیا گیا ہے۔

نوازش‌های ناکس عاقبت آفت بودای دل!کُشد آخر همان بادی که سازد زنده آتش را

شاگردان[ترمیم]

مختلف یادداشتوں میں ، شاعروں کو یا تو شاگرد یا نظم اصلاحات کے طور پر ذکر کیا گیا ہے

  • حاکم لاهوری؛ به شاگردی آفرین افتخار می‌کند.[35]
  • میرمحمد زمان لاهوری (مفتون)
  • حاجی بیگ لاهوری (هنر)
  • میرزا نصرالله بیگ لاهوری (یتیم)
  • میر عالی نسب لاهوری(وجدان)
  • نورالعین بتالوی (واقف)
  • ابوالحسن قابل خان لاهوری (میرزا)
  • صوفی مشتاق احمد لاهوری (مشتاق)
  • کشمیری ثم لاهوری (سرآمد)
  • محمد احسن لاهوری (خبرت)
  • عبدالعزیز لاهوری (تحسین)[36]

حاکم لاهوری، از میراحمد فائق، خواجه عبدالله سامی و میر محمد علی رائج سیالکوٹی نے مشق اور منصوبہ ساز دونوں کے طور پر ذکر کیا ہے۔[37]

تک نگاری[ترمیم]

فارسی میں افرین کا کم تعارف نہیں کیا گیا ، سوائے عظیم اسلامی انسائیکلوپیڈیا کی چند سطروں کے اور جس مضمون سے یہ مضمون لیا گیا ہے ، فارسی مضامین کی فہرست میں ، افرین لاہوری کے بارے میں کوئی مضمون متعارف نہیں کرایا گیا ہے۔ لاہوری کے جنرل ایڈیٹر نے اردو میں چار صفحات پر مشتمل تعارف میں آفرین کا تعارف کرایا ہے۔ اور پاکستان میں شائع ہونے والی کتاب «پاکستان مین فارسی و ادب» کی تیسری جلد میں ، اردو میں ایک مضمون میں افرین کی زندگی اور کاموں کا بھی جائزہ لیا گیا ہے۔ [38] اردو میں افرین کے بارے میں شاہ فقیر اللہ آفرین لاہوری کی سوانح عمری کی کتاب محمد عرفان نے 1986 میں اردو میں شائع کی تھی۔ اس کتاب کے کاتب انصار احمد عمری ہیں۔[39][40]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. آزاد بلگرامی، خزانه عامر، 1900م، ص30؛ صدیق حسن، شمع انجمن، 1292ق، ص34.
  2. حاکم لاهوری، تذکره مردم دیده، دانشگاه پنجاب، ص22.
  3. بزرگ بیگدلی، «بررسی و تحلیل جایگاه آفرین لاهوری...»، ص37.
  4. مدرس تبریزی، ج1، ص51؛ آقا بزرگ، الذریعه، ج9، ص10.
  5. قاموس الاعلام، ج1، ص245.
  6. بزرگ بیگدلی، «بررسی و تحلیل جایگاه آفرین لاهوری...»، ص49.
  7. لکنهوی، تذکره ریاض العارفین، اسلام آباد، ص13-14.
  8. حسن خان، صبح گلشن، 1295ق، ص7.
  9. آقا بزرگ، الذریعه، ج9، ص10.
  10. آزاد بلگرامی، خزانه عامر، 1900م، ص30؛ صدیق حسن، شمع انجمن، 1292ق، ص34.
  11. آزاد بلگرامی، آزاد بلگرامی، مآثر الکلام، 1328ق، ص205.
  12. حاکم لاهوری، تذکره مردم دیده، دانشگاه پنجاب، ص19 .
  13. خان آرزو، مجمع النفایس، 1385ش، ص43.
  14. مولوی، «آفرین لاهوری»، ج1، ص449.
  15. حاکم لاهوری، تذکره مردم دیده، دانشگاه پنجاب، ص23.
  16. حاکم لاهوری، تذکره مردم دیده، دانشگاه پنجاب، ص30.
  17. کلیات، ص92؛ بزرگ بیگدلی، «بررسی و تحلیل جایگاه آفرین لاهوری...»، ص39.
  18. حاکم لاهوری، تذکره مردم دیده، دانشگاه پنجاب، ص20.
  19. مظفر، روز روشن، 1297ق، ص794؛ آزاد بلگرامی، خزانه عامر، ص29؛ حاکم لاهوری، تذکره مردم دیده، دانشگاه پنجاب، ص19-21.
  20. واله داغستانی، تذکرة ریاض الشعراء، 1384ش، ج1، ص309.
  21. آزاد بلگرامی، خزانه عامر، 1900م، ص29؛ آزاد بلگرامی، مآثر الکلام، 1328ق، ص206.
  22. خوشگو، سفینه، 1959م، ج3، ص240.
  23. آفرین لاهوری، کلیات، غزل‌های ص33، 170،187، 472، 539 .
  24. بزرگ بیگدلی، «بررسی و تحلیل جایگاه آفرین لاهوری...»، ص39.
  25. صفا، ج5، بخش2: 1402.
  26. واله داغستانی، تذکرة ریاض الشعراء، 1384ش، ج1، ص309.
  27. حاکم لاهوری، تذکره مردم دیده، دانشگاه پنجاب، ص18.
  28. منزوی، ج8، ص1093.
  29. کتابخانه و مرکز اسناد مجلس شورای اسلامی[مردہ ربط].
  30. آقا بزرگ، الذریعه، ج9، ص10.
  31. منزوی، ج8، ص1093.
  32. منزوی، ج8، ص1093.
  33. آزاد بلگرامی، خزانه عامر، 1900م، ص29 و آزاد بلگرامی، مآثر الکلام، 1328ق، ص205.
  34. حاکم لاهوری، تذکره مردم دیده، دانشگاه پنجاب، ص18.
  35. حاکم لاهوری، تذکره مردم دیده، دانشگاه پنجاب، ص192.
  36. بزرگ بیگدلی، «بررسی و تحلیل جایگاه آفرین لاهوری...»، ص38-39.
  37. حاکم لاهوری، تذکره مردم دیده، دانشگاه پنجاب، ص19.
  38. منزوی، ج8، ص1093؛ بزرگ بیگدلی، «بررسی و تحلیل جایگاه آفرین لاهوری...»، ص36.
  39. پایگاه اطلاع رسانی کتابخانه‌های ایران.
  40. کتابخانه و اسناد دیجیتال.

ذرائع[ترمیم]

  • آزاد بلگرامی، میرغلام علی، خزانه عامر، کانپور، لونکشور، 1900م.
  • آزاد بلگرامی، میرغلام علی، مآثر الکلام: موسوم به سرو آزاد، به اهتمام محمد قادر علیخان صوفی، حیدرآباد دکن، 1328ق.
  • لکنهوی، آفتاب رای، تذکرة ریاض العارفین، تصحیح سید حسام الدین راشدی، انتشارات مرکز تحقیقات فارسی ایران و پاکستان، اسلام آباد.
  • آفرین لاهوری، فقیر الله، کلیات آفرین لاهوری، ج1، به اهتمام غلام ربانی عزیر، لاهور، پنجابی ادبی آکادمی، 1967م.
  • بزرگ بیگدلی، سعید و احسان پورابریشم، «بررسی و تحلیل جایگاه آفرین لاهوری در شعر فارسی شبه قاره»، در فصلنامه سبک‌شناسی نظم و نثر فارسی، شماره 12، سال 1390ش.
  • حاکم لاهوری، عبدالحکیم، تذکره مردم دیده، به اهتمام سید عبدالله لاهور، دانشگاه پنجاب.
  • حسن خان، علی، صبح گلشن، بهوپال، مطبع شاهجهانی، 1295ق.
  • خان آرزو، سراج الدین علی، مجمع النفایس (بخش معاصران)، تصحیح میرهاشم محدث، تهران، انجمن آثار و مفاخر فرهنگی، 1385ش.
  • خوشگو، بنْدر ابن ‎داس، سفینه، به کوشش محمد عطاء الرحمن عطا کاکوی، ج3، پتنه، اداره تحقیقات عربی و فارسی، 1959م.
  • سامی، شمس الدین، قاموس الاعلام، ج1، استانبول، مطبعه مهران، 1306ق.
  • آقا بزرگ تهرانی، محمدمحسن، الذریعة إلی تصانیف الشیعة، قم و تهران، اسماعیلیان و کتابخانه اسلامیه، 1408ق.
  • صدیق حسن، محمد، شمع انجمن، بهوپال، مطبع شاهجهانی، 1292ق.
  • صفا، ذبيح الله، تاريخ ادبيات در ايران، تهران، انتشارات فردوس، 1371ش.
  • مدرس تبریزی، میرزا محمدعلی، ریحانة الادب در شرح احوال و آثار علما، عرفا، فقها، فلاسفه، شعرا و خطاطین بزرگ اسلامی از آغاز تا عصر حاضر، انتشارت خیام، 1369ش.
  • مظفر، محمدحسین، روز روشن، بهوپال، مطبع شاهجهانی، 1297ق.
  • منزوی، احمد، فهرست مشترک نسخه‌های خطی فارسی پاکستان، ج8، اسلام‌آباد، انتشارات مرکز تحقیقات فارسی ایران و پاکستان، 1366ش.
  • واله دغستانی، علینقی بن محمدعلی، تذکرة ریاض الشعراء، تصحیح‌محسن ناجی نصرآبادی، تهران، انتشارات اساطیر، 1384ق.
  • مولوی، محمدعلی، «آفرین لاهوری»، در دایرة المعارف بزرگ اسلامی، ج1.

بیرونی پیوند[ترمیم]

سانچہ:مرثیہ سرایان عاشورا سانچہ:برصغیر پاک و ہند سانچہ:شاعران شیعہ

]