احد ہعام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
احد ہعام
احد ہعام (اشر گنسبرگ)
احد ہعام(اشر گنسبرگ)
پیدائش اشر ذوی ہرش گنسبرگ
18 اگست 1856ء(1856ء-08-18)
اسکویرا, کیو گورنرت, روسی سلطنت
وفات جنوری 2، 1927(1927-10-20) (عمر  70 سال)
تل ابیب, انتداب فلسطین
پیشہ مقالہ نویس ، صحافی
ادبی تحریک أحباءِ صہیون
شریک حیات ریوکے[2]

اشر ذوی ہرش گینسبرگ (18 اگست 1856ء تا 2 جنوری 1927ء)، بنیادی طور پر اپنے عبرانی اور قلمی نام احدہعام ( عبرانی اאחד העם ، ادبی معنی ۔ 'لوگوں میں سے ایک'،از بائبل کتاب ابتدا 26:10)، ایک عبرانی مقالہ نویس اور قبل از ریاست اسرائیل، اولین صیہونی مفکروں میں سے ایک تھے۔ انہیں ثقافتی صیہونیت کے بانی کے طور پر جانا جاتا ہے۔. اسرائیل میں یہودی "روحانی مرکز" کے اپنے سیکولر نقطہ نظر سے، انہوں نےتھیورڈور ہرتزل کی مخالفت کی۔ سیاسی صیہونیت کے بانی تھیورڈور ہرتزل کے برعکس ، احد ہعام نے "یہودی کے لیے ریاست کی جدوجہد کی نہ کہ صرف یہودیوں کی ریاست کے لیے"۔ [3]

سوانح عمری[ترمیم]

اشر ذوی ہرش گنسبرگ (احد ہعام) یوکرین کے شہر اسکویرا ،روسی سلطنت کے کیو گورنرت (موجودہ یوکرین ) میں خوشحال ، نیک حسیدی یہودی والدین کے یہاں پیدا ہوئے ۔ آٹھ سال کی عمر میں، انہوں نے از خود روسی سیکھنی اور پڑھنی شروع کی۔ ان کے والد، یسعیاہ نے ، بارہ برس کی عمر میں انہیں ہیدر بھیجا۔ جب یسعیاہ کیو ضلع کے ایک گاؤں میں ایک بڑی آبادی کے منتظم بنے، تو وہاں وہ اپنا خاندان کو اور اپنے بیٹے احد ہعام کے لیے نجی معلم لے گئے، جس نے پڑھائی میں اعلی مقام حاصل کیا ۔ گنسبرگ راسخ العقیدہ یہودیت کی غطریسیت کے نقاد تھے لیکن وہ اس کی ثقافتی ورثہ، خاص طور پر یہود کے اخلاقی نظریات سے وفادار رہے۔ [4]

1908ء میں، فلسطین سے واپسی پر ، گینسبرگ وئسٹزکی چائے کمپنی کے دفتر کا انتظام سنبھالنے کے لیے لندن منتقل ہوئے۔ وہ 1922ء کے آغاز میں تل ابیب میں آباد ہوئے، جہاں انہوں نے 1926ء تک شہرکےانجمن کی مختار ذیلی مجلس کے ایک رکن کے طور پر کام کیا۔ بیمار صحت کی وجہ سے ، گینسبرگ کا وہاں 1927ء میں انتقال ہوا۔ [4]

  1. "ترجمہ سکھلائی"۔
  2. Steven J. Zipperstein۔ "Ahad Ha-Am"۔ YIVO۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جنوری 2018۔
  3. The Jewish State and Jewish Problem
  4. ^ ا ب Encyclopedia of Zionism and Israel, vol. 1, Ahad Ha'am, New York, 1971, pp. 13–14