کتاب پیدائش

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

کتاب مقدس کی پہلی پانچ کتابوں کے مجموعہ کو تورات کہتے ہیں۔ یہودی علمائے بائبل کی اکثریت نے ان پانچ کتابوں کو حضرت موسیٰ کی تصانیف بتایا ہے۔ پہلی کتاب کی پہلی سطر عبرانی لفظ برا شیت (عبرانی:בְּרֵאשִׁית) سے شروع ہوتی ہے، اس کا مطلب ہے "ابتدا میں"۔ تقریباً ایک سو پچاس قبل مسیح جب بائبل مقدس کا ترجمہ یونانی زبان میں ہوا تو اس ترجمہ میں عبرانی لفظ برا شیت کو تکوین یا پیدائش کائنات (γένεσις) کے معنی میں استعمال کیا گیا۔ اس معنی کے پیش نظر کتاب مقدس کی اولین کتاب کو اس اردو ترجمہ میں پیدائش کا نام دیا گیا ہے۔

کتاب مقدس کو دو حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے: پیدایش سے ملاکی تک کی کتابوں کو عہدنامہ قدیم اور متی کی انجیل سے مکاشفہ تک کی کتابوں کو عہدنامہ جدید کہتے ہیں۔ پرانے اور نئے عہد ناموں میں موسوی شریعت کی اصطلاح متعدد بار استعمال ہوئی ہے۔ چونکہ تورات سے موسوی شریعت بھی مراد ہے اس لیے حضرت موسیٰ ہی تورات کی پہلی کتاب "پیدائش" کے مصنف سمجھے گئے ہیں۔ اس کتاب میں آدم، حوا، نوح، ابراہیم، سارہ، اسحق، ربقہ، یعقوب اور یوسف کے حالات بھی درج ہیں اور حضرت موسیٰ کے موت کا ذکر بھی پایا جاتا ہے جس کے متعلق یہود ی اور مسیحی علماء کا خیال ہے کہ یہ بیان حضرت موسیٰ کے بعد زمانہ کے کسی مصنف نے تحریر کیا ہے۔

کتاب پیدائش سے ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ یہ کائنات کس طرح وجود میں آئی۔ پہلا انسانی جوڑا اس زمین پر کسی طرح نمودار ہوا، گناہ کس طرح انسانی زندگی میں داخل ہوا اور اس کا اثر بنی نو ع انسان پر کیا ہوا۔ خدا نے انسان کی نجات کا کیا انتظام کیا ، خدا کی ذات اور اس کی شخصیت کے بارے میں کیا کچھ معلوم ہو سکتا ہے؟ اس کرہ ارض پر انسان کی ذمہ داری کیا ہے؟ خدا کے عدل و انصاف سے اور اس کے سزا و جزا دینے سے کیا مراد ہے؟

پیدائش میں حضرت موسیٰ سے ماقبل کی تاریخ بھی بیان کی گئی ہے۔

بیرونی روابط[ترمیم]

مطالعہ کتاب پیدائش بر ویکی منبع

کتاب پیدائش
پیشرو
None
عبرانی بائبل جانشین
خروج
عیسائی
عہدنامہ قدیم