احمد علی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں


احمد علی ،نئی دہلی میں 1910 - 14 جنوری مین دہلی میں پیدا ھوئے اور کراچی میں جنوری 1994 مین انتقال ھوا۔ احمد علی ایک بھارتی ناول نگار (جو بعد میں پاکستان)، شاعر، تنقید، مترجم سفارت کار، اور عالم تھے۔ احمد علی نے گڑھ اور لکھنؤ کی یونیورسٹیوں میں تعلیم کی، انھوں نے بی۔اے میں درجہ اؤل امتیازی نمبروں سے حاصل کی۔ 1930میں بی۔اے (اعزازی) کیا، اور ایم اے انگریزی کیا۔ وہ 1932-46 سے لکھنؤ اور الہ آباد سمیت معروف بھارتی یونیورسٹیوں میں تدویس سے منسلک رھے۔ پھر پروفیسر بنے اور پریسیڈینسی کالج میں انگریزی کے شعبے کے سربراہ کے طور پر بنگال سینئر تعلیمی سروس میں شمولیت اختیار کی، علی احمد نے 1942-44 کے دوران بھارت میں بی بی سی کے نمائندے اور ڈائریکٹر رھے. ہندوستان کی تقسیم کے دوران، انہوں نے کے طور پر بھارت کے برطانوی حکومت کی طرف سے انھیں چین کی جامعہ نینکن میں برٹش کونسل کی جانب سے اس چنیی یونیورسٹی کے مہمان پروفیسر ھوئے. جب احمد علی نے 1948 میں بھارت واپس کرنے کے لئے کی کوشش کی،تو کے۔پی۔ایس مینن (اس وقت بھارت کی چین کے سفیر) نے انھیں بھارت واپس نہ آنے دیا اور انھیں پاکستان منتقل کرنے پر مجبور کیا گیا تھا ۔

1948 میں وہ کراچی منتقل ہو گئے - یہ شہر انھیں کبھی پسند نہیں آیا اس کے بعد، وہ پاکستان کی وزارت خارجہ کےپروموشن ڈائریکٹر، مقرر ھوئے. وزیر اعظم لیاقت علی خان کے کہنے پر، انہوں نے 1950 میں پاکستان فارن سروس میں شمولیت اختیار کی. انھیں سب سے پہلے جس فائل سے وہ موصول ہوئی 'چین' نشان لگا دیا گیا ہے کیا گیا تھا اور جب اس نے اسے کھولی، یہ خالی تھی۔ انہوں نے پاکستان کے پہلے سفیر کے طور پر چین گئے تھے اور 1951 میں عوامی جمہوریہ کے ساتھ سفارتی تعلقات قائم کرنے میں اہم کردار ادا کیا۔

احمدعلی نے اپنا پہلا ناول"Twilight in Delhi " لکھا۔ احمد علی نے 1988 ء میں قرآن ایک ʾ معاصر دو لسانی ترجمہ (انگریزی اور اردو) شائع کی ہے.1992 میں وہ میں اردو شاعری کا انگریزی ترجمہ، گولڈن روایت (ان کے انتخاب کے ایک نظر ثانی شدہ ایڈیشن اصل ایڈیشن 1973 میں شائع کیا گیا تھا ۔ (1940)، جو انگریزی میں لکھا گیا ہے کی اشاعت کے ساتھ بین الاقوامی قبولیت حاصل ھوئی. یہ ھندوستان کے مسلمان ناسٹلجیا کے موضوع لکھا گیا۔ ان کے دوسرے ناول، "رات کے سمندرمیں" 1964کے بھارتی ثقافتی بٹوارے کا احوال ہے ۔ 1947 ء میں بھارت اور پاکستان کے قیام سے پہلے کا جائیزہ. "رات کے چوہی "اور سفارتکاروں کے سمندر کی طرح (1984) اس کی اشاعت سے پہلے دہائیوں لکھا گیا ہے. یہ ایک سفارت کار ratlike جن کے دم ان کی اخلاقی تحلیل کی جسمانی اظہار ہے کے بارے میں ایک آبلہ فریبی پر مشتمل ناول ہے. احمدعلی کی دوسری قابل ذکر کام "جامنی سنہری چٹان" (1960)، شاعری کا مجموعہ اور جیل ہاؤس (1985)، مختصر کہانیوں کا ایک مجموعہ شامل ہیں.احمد علی نے 1988 ء میں قرآن ایک ʾ معاصر دو لسانی ترجمہ (انگریزی اور اردو) شائع کی ہے. 1992 میں انہوں نے اردو انگریزی ترجمہ، سنہری روایت (اصل ایڈیشن 1973 میں شائع کیا گیا تھا) میں شاعری کی اور ان کے انتخاب کے ایک نظر ثانی شدہ ایڈیشن شائع کیا۔علی نے 1988 ء میں قرآن ایک ʾ معاصر دو لسانی ترجمہ (انگریزی اور اردو) شائع کی ہے.1992 میں انھوں نے اس میں اردو شاعری کا انگریزی ترجمہ، سنہری روایت (ان کے انتخاب کے ایک نظر ثانی شدہ ایڈیشن 1973 میں شائع ھوا۔ دسمبر 1932 میں " انگارے" شائع ھرئی جس نے ہندوستانی معاشرے کی کھوکلی اقدار اور تحریمات کے خلاف اپنی بے چینٰی کا احتجاج قلم بند کیا۔ "انگارے" کے افسانہ نگارون میں احمد علی، محمود الظفر، سجاد ظہیر اور رشیدہ جہاں شامل تھے۔ "انگارے پر الزام لگایا جاتا ہے کی اس نے مشرقی تمدن کی روایتی بنیادوں پردراڑیں ڈالنے کی کوشش کی لہذا اس کتاب کو حکومت نے ضبط کرلیا اور سڑکوں پر نذر آتش بھی کیا گیا۔اس میں نئے اور نوجوان لکھنے والوں کو رومانویت سے دور رھنے کو کہا اور زندگی کے مسائل پر توجہ دینے کا مشورہ دیا۔ احمد علی نی " انگارے" بھی لکھی۔ 1974۔1976 میں وہ جامعہ کراچی کے مرکزی کتب خانے میں مطالعہ کرنے آتے تھے۔ میں نے ایک دن ان سے پوچھا " آپ کو ترقی پسندوں نے اپنی صفوں سے کیوں نکالا"۔۔۔۔۔ پہلے تو ٹالتے رھے بعد میں کہا کہ "یہ کچے ذہنوں کا گروہ تھا جن کے مقاصد ادبی نہیں بلکہ سیاسی تھے۔"۔۔۔۔ کراچی میں "الفلاح سوسائٹی" ( پرانی سبزی منڈی اور ٹیلی وژن کے درمیان) قیام رہا۔اپنی موت تک لکھنے ُپڑھنے میں مشغول رھے۔ ادبی اور ثقافتی نشتوں میں کم ہی آتے تھے۔(احمد سھیل) ***