الیجو کارپیٹیر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
الیجو کارپیٹیر
Alejo Carpentier.jpg
پیدائش Alejo Carpentier y Valmont
26 دسمبر 1904(1904-12-26)
لوزان, Switzerland
وفات اپریل 24، 1980(1980-40-24) (عمر  75 سال)
پیرس, France
آخری آرام گاہ Colon Cemetery, Havana
قومیت کیوباn
نمایاں کام El reino de este mundo
اہم اعزازات سروانتیس ادبی انعام
1977

الیجو کارپیٹیر (انگریزی: Alejo Carpentier) (26 دسمبر 1904ء تا 24 اپریل 1980ء) کیوبا کے ناول نگار، مضمون ناگر اور موسیقار تھے جنہوں نے اپنے عہد عروج میں لاطینی امریکی ادب کو بہت زیادہ متاثر کیا ہے۔ وہ لوازن، سویٹذرلینڈ میں پیدا ہوئے مگر ہوانا، کیوبا میں پلے بڑھے۔ ایک یورپ نذاد ہونے کے باوجود انہوں نے اپنی زندگی اور تحریر میں کیوبا کی تہذیب و ثقافت کو فروغ دیا ہے اور خود کو بطور کیوبائی متعارف کرایا ہے۔ انہوں نے فرانس، جنوبی امریکا اور میکسیکو کے علاوہ دیگر مقامات کا بہت زیادہ سفر کیا اور لاطینی امریکا کے اہم افراد وہاں کی ثقافت اور فن کے علم برداروں کے ملاقات کی۔ اپنے فن، آرٹ اور کام کے ذرہعے لاطینی امریکا کی ثقافت نماندگی کرنے کے علاوہ انہوں نے کیوبا کی سیاست میں بھی بڑھ چڑھ کر دلچسپی لی اور کئی تحریکوں میں حصہ لیا جیسے 20ویں صدی میں کیوبا میں کمیونسٹ کی تحریک فیدل کاسترو۔ وہ اپنے تحریکوں، مظاہروں، سیاسی تبصروں اور اپنے نظریات کی وجہ سے کئی مرتبہ جیل گئے ملک بدر ہوئے۔

حالات زندگی[ترمیم]

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

کارپیٹنیر کی ولادت 26 دسمبر 1904ء کو لوازن، سویٹزر لینڈ میں ہوئی۔ ان کے والد جارج جولین کارپیٹیئر ایک فرانسیسی معمار تھے اور والدہ لنا والمونٹ روسی زبان کی معملہ تھیں۔[1] ان کی حیات میں سب کو یہی معلوم تھا کہ ان کی ولادت ہوانا میں ہی ہوئی پے کیونکہ ان کی ولادت کے معا بعد ان کا خاندان لوازن سے ہوانا آ گیا تھا مگر ان کی وفات کے بعد سویٹزرلینڈ سے پیدائش کا سرٹیفیکٹ برآمد ہوا۔[2] 1912ء میں الیجو اور ان کا خاندان کیوبا سے پیرس آگیا۔ انہوں نے عہد طفلی میں فرانسیسی زبان سیکھی۔ انہوں نے بالزیک، فلابرٹ اور زولا کا مطالعہ کیا۔[1] 1921ء میں انہوں نے یونیورسٹی آف ہوانا کے اسکول برائے آرکیٹیکچر میں داخلہ لیا۔ ان کی عمر محض 18 سال کی تھی جب ان کے والدین ایک دوسرے سے علاحدہ ہو گئے اور والد نے ان کا ساتھ چھوڑ دیا۔ اگلے سال انہوں نے اپنی والدہ کی مدد کرنے کے لیے اپنی تعلیم چھوڑ دی۔ وہ صحافی بن گئے۔ انہوں نے بعد موسیقی کی تعلیم حاصل کی۔[3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Belnap 1993، صفحات۔ 263–264, cited in Wakefield (2004) p.5
  2. Belnap 1993، صفحات۔ 263–264, cited in Wakefield (2004) p.6
  3. Colchie, Thomas (editor)، A Hammock Beneath the Mangoes: stories from Latin America; Penguin Group, 416–417 (1991)۔