جگمے دورجی وانگچوک

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
جگمے دورجی وانگچوک
 

معلومات شخصیت
پیدائش 2 مئی 1929ء  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تھمپو  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 21 جولا‎ئی 1972ء (43 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نیروبی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات دورۂ قلب  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت بھوٹان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد جگمے سنگئے وانگچوک  ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد جگمے وانگچوک[1]  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
خاندان آل وانگچوک  ویکی ڈیٹا پر (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
بادشاہ بھوٹان   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
27 اکتوبر 1952  – 21 جولا‎ئی 1972 
جگمے وانگچوک 
جگمے سنگئے وانگچوک 
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات

جگمے دورجی وانگچوک ( ; 2 مئی 1928 [2] [3] - 21 جولائی 1972) بھوٹان کا تیسرا ڈروک گیالپو تھا۔ [4] انھوں نے بھوٹان کو بیرونی دنیا کے لیے کھولنا شروع کیا، جدیدیت کا آغاز کیا اور جمہوریت کی طرف پہلا قدم اٹھایا۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

جگمے دورجی وانگچوک 1928 میں ترونگسا کے تھروپانگ محل میں پیدا ہوئے۔ [5] وانگچوک نے کالمپونگ میں برطانوی انداز میں تعلیم حاصل کی اور وہ مطالعاتی دوروں پر گئے اور بہت سے غیر ملکی ممالک جیسے سکاٹ لینڈ اور سوئٹزرلینڈ میں قیام کیا ۔ [6] 1943 میں، اسے ٹرونگسا ڈرونیر مقرر کیا گیا اور پھر 24 ویں پارو پینلوپ ، شیرنگ پینجور (1902–1949) کی موت پر 1950 میں 25 ویں پارو پینلوپ کے طور پر نامزد ہوا۔ وانگچک نے ایشی کیسانگ چوڈن وانگچک (پیدائش 1930) سے شادی کی، جو گونگزم (لارڈ چیمبرلین) سونم ٹوپگے دورجی (1896–1953) کی بیٹی تھی، ان کی شادی یوگین پیلی پیلس، پارو میں 5 اکتوبر 1951 کو ہوئی۔ شاہی شادی گارڈن پیلس میں ہوئی۔ اگلے سال، وانگچوک بادشاہ بن گئے جب ان کے والد کوینگا ربٹن محل میں انتقال کر گئے۔ تاجپوشی 27 اکتوبر 1952 کو پوناکھا زونگ میں منعقد ہوئی [6]

دور حکومت[ترمیم]

جولائی 1972 میں ان کے 20 سالہ دور حکومت میں، بھوٹانی معاشرے کی بنیادی تنظیم نو کا آغاز ہوا۔ [7] وانگچک نے نہ صرف معاشرے اور حکومت کی تنظیم نو حاصل کی بلکہ بھوٹان کی خود مختاری اور سلامتی کو بھی مستحکم کیا۔ انھوں نے امداد کے طور پر بین الاقوامی عطیہ دہندگان سے وسائل کو متحرک کیا۔ وانگچک کی حکمت عملی دوسرے ممالک کے ساتھ تعلقات استوار کرکے امداد کے ذرائع کو وسیع کرنا تھی۔ بھوٹان نے 1962 میں بین الاقوامی امداد حاصل کرنے کے لیے کولمبو پلان میں شمولیت اختیار کی۔[8] تاہم، ہندوستان مالی اور تکنیکی مدد کا اہم ذریعہ بن گیا۔ وہ اس لحاظ سے ایک ہوشیار اور دور اندیش منصوبہ ساز تھا کہ اس نے بھوٹان کی ثقافت اور روایت کو غیر مستحکم کیے بغیر اسے جدید بنایا۔ وانگچک بھوٹان کی ثقافت کے تحفظ اور فروغ کے لیے جدید تکنیک اور طریقے لائے، پھر بھی اسی وقت، اس نے مغربی سائنس اور ٹیکنالوجی کو متعارف کرایا۔ [7] وہ دنیا کے اس حصے میں ماہرین ماحولیات میں پیش پیش تھے۔ 1966 میں قائم ہونے والا مانس سینکچری اس خطے میں پہلی جگہوں میں سے ایک تھا۔ [9]

موت[ترمیم]

وانگچوک دل کے مسائل میں مبتلا تھے۔ انھیں 20 سال کی عمر میں پہلا دل کا دورہ پڑا۔ [2] جولائی 1972 میں، وانگچک نے اس حالت کا علاج کروانے کے لیے نیروبی کا سفر کیا، لیکن اس دورے کے دوران وہ اچانک انتقال کر گئے۔ بادشاہ کی لاش کو بعد ازاں واپس بھوٹان لے جایا گیا تاکہ وہاں اس کا آخری رسوم کیا جا سکے۔ [10]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. BDRC Resource ID: https://library.bdrc.io/show/bdr:P8LS1422
  2. ^ ا ب "Patron Kings Part XI: King Jigme Dorji Wangchuck of Bhutan"۔ Khyentse Foundation۔ 11 نومبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 نومبر 2021 
  3. "Holidays Around the World: Bhutan Third King's Death"۔ 11 نومبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 نومبر 2021 
  4. "WANGCHUCK DYNASTY. 100 Years of Enlightened Monarchy in Bhutan. Lham Dorji" (PDF)۔ 05 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مئی 2017 
  5. Lopen Pema Tshewang (1994)۔ 'Brug gi rgyal rabs: 'Brug gsal ba'i sgron me۔ Thimphu: National Library 
  6. ^ ا ب Aris Michael (2005)۔ The Raven Crown: The Origins of Buddhist Monarchy in Bhutan (2 ایڈیشن)۔ Chicago: Serindia Publications۔ ISBN 978-1932476217 
  7. ^ ا ب dpal ‘brug zhib ‘jug lte ba (2008)۔ 'brug brgyd 'zin gyi rgyel mchog gsum pa mi dwang 'jigs med rdo rjé dwang phyug gi rtogs brjod bzhugs so (The Biography of the Third King of Bhutan)۔ Thimphu: The Centre for Bhutan Studies۔ ISBN 978-99936-14-49-4 
  8. Ministry of Foreign Affairs Website آرکائیو شدہ 2017-08-03 بذریعہ وے بیک مشین, Thimphu, Bhutan
  9. Ministry of Foreign Affairs Website آرکائیو شدہ 2015-07-23 بذریعہ وے بیک مشین, Thimphu, Bhutan
  10. "Jigme Dorji Wangchuck Is Dead; King of Tiny Himalayan Bhutan"۔ New York Times۔ 1972-07-23۔ 11 نومبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 نومبر 2021 

بیرونی روابط[ترمیم]