دولت عقیلیہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
دولت عقیلیہ
الدولة العقيلية
مقام دولت عقیلیہ
دار الحکومتموصل
سرکاری زبانیںعربی
سریانی، کرد، ترکی، عبرانی
مذہب
شیعہ اسلام، سنی اسلام، عیسائیت، یزیدی، صابئین، یہودیت
حکومتامارت
امیر - بادشاه 
• 990-992
محمد بن المسیب (پہلہ)
• 1093-1096
علی بن مسلم (آخری)
وزیر 
• 1000
ابو القاسم المغربی
• 1061
ابو العز بن صدقہ
قیام990
ماقبل
مابعد
امارت حمدانیہ
امارت مرداسيہ
نمیری شاہی سلسلہ
سلجوقی سلطنت
موجودہ حصہ

دولت عقیلیہ یا امارت عقیلیہ (عربی: الدولة العقيلية) یہ ایک شیعہ اسلامی امارت ہے،[1] جس کی بنیاد امیر العقیلی ابو الذواد محمد بن المسیاب نے موصل[2] میں رکھی تھی اور یہ 100 سال سے زائد عرصے تک، بالکل 990 عیسوی سے 1096 عیسوی تک جاری رہی۔  دولت کوفہ[3] تک پھیل گئی اور بغداد کے مضافات تک پہنچ گئی۔[4][5] اگلے سالوں میں، وہ نے حلب اور حران کو عبور کرنے میں کامیاب ہو گئے، اس طرح جزیرہ نما فرات اور شمالی لیونٹ کو کنٹرول کرنا۔[6]

یہ ریاست گیارہویں صدی میں اپنی وسعت کے عروج پر پہنچی، جب بنو عاقل حلب میں داخل ہونے اور 1080ء میں مرداسد ریاست کا خاتمہ کرنے میں کامیاب ہو گئے، اس کے بعد انھوں نے حران پر قبضہ کر لیا اور 1081ء میں نمیری ریاست کا تختہ الٹ دیا۔[7] یہ شاہ مسلم بن قریش کے دور میں تھا جسے "شرف الدولہ" کہا جاتا تھا۔

کچھ معاصر مورخین مذکورہ بالا بادشاہ کے دور کے خاتمے کو موصل، عراق اور لیونٹ میں عقیلیہ ریاست کے خاتمے کا آغاز سمجھتے ہیں، کیونکہ امارت اندرونی اور بیرونی بے امنی میں اضافے کے ساتھ ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو گئی۔ اکتوبر 1096 عیسوی میں، ذوالقعدہ 4، 489ھ کو سلجوقیوں کے حملے کے بعد ریاست غائب ہو گئی۔

حکمرانوں کی فہرست[ترمیم]

المسيب خاندان کے حکمرانوں کی فہرست:[8]

  • اقبال الدولہ ابو الدود محمد بن المسیب العقيلی (990–996)
  • حسام الدولہ المقلد بن المسيب (996–1001)
  • معتمد الدولہ قرواش بن المقلد (1001–1050)
  • زعيم الدولہ بركہ بن المقلد (1050–1052)
  • علم الدین قریش بن بدران بن المقلد (1052–1061)
  • شرف الدولہ مسلم بن قريش (1061–1085)
  • ابراہیم بن قریش (1085–1089/90 اور 1092–1093)
  • علی بن مسلم (1089/90-1092 اور 1093-1096)

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Bosworth 1996, p. 92.
  2. ابن خلدون۔ تأريخ ابن خلدون۔ 4۔ صفحہ: 545 
  3. خاشع المعاضيدي۔ دولة بني عقيل في الموصل۔ صفحہ: 71 
  4. Kennedy 2004, pp. 296–297
  5. Busse 2004, p. 75.
  6. ابو الفدا۔ تأريخ الملك المؤيد۔ 2۔ صفحہ: 205 
  7. ابو الفدا۔ تأريخ الملك المؤيد۔ 2۔ صفحہ: 205 
  8. "الدولة العقيلية بالموصل"۔ 24 دسمبر 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 دسمبر 2012  آرکائیو شدہ 2016-10-03 بذریعہ وے بیک مشین

مزید دیکھیے[ترمیم]