سبھدرا جوشی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سبھدرا جوشی
Subhadra Joshi 2011 stamp of India.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 23 مارچ 1919  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سیالکوٹ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 30 اکتوبر 2003 (84 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی فورمن کرسچین کالج  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان ہندی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

سبھدرا جوشی ( نئی دتا ؛ 23 مارچ 1919ء - 30 اکتوبر 2003ء؛ سیالکوٹ، پنجاب ) ایک مشہور ہندوستانی آزادی کی کارکن، سیاست دان اور انڈین نیشنل کانگریس کی رکن پارلیمان تھیں۔ انھوں نے 1942ء کی ہندوستان چھوڑو تحریک میں حصہ لیا، اور بعد میں دہلی پردیش کانگریس کمیٹی (ڈی پی سی سی ) کی صدر رہیں۔ ان کا تعلق سیالکوٹ (اب پاکستان میں) کے ایک معروف خاندان سے تھا۔ [1] ان کے والد وی این دتا جے پور ریاست کے پولیس افسر تھے اور ایک کزن، کرشنن گوپال دتا پنجاب میں ایک سرگرم کانگریسی تھے۔

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

انھوں نے اپنی اسکول کی تعلیم مہاراجہ گرلز اسکول، جے پور، لیڈی میکلیگن ہائی اسکول، لاہور اور کنیا مہاودیالیہ جالندھر سے حاصل کی۔ انہوں نے فارمن کرسچن کالج لاہور سے پولیٹیکل سائنس میں ماسٹرز کی ڈگری حاصل کی۔ [2] کالج کے زمانے میں ہی وہ سیاسی سرگرمیوں سے منسلک ہوگئیں۔

عملی زندگی[ترمیم]

جدوجہد آزادی میں کردار[ترمیم]

گاندھی جی کے نظریات سے متاثر ہو کر وہ وردھا میں ان کے آشرم میں اس وقت گئیں جب وہ لاہور میں پڑھ رہی تھیں۔ ایک طالب علم کے طور پر انھوں نے 1942ء میں ہندوستان چھوڑو تحریک میں حصہ لیا اور ارونا آصف علی کے ساتھ کام کیا۔ [3] اس دوران میں وہ دہلی منتقل ہو گئیں جہاں وہ زیر زمین چلی گئیں اور ایک جریدے 'ہمارا سنگرام' کی تدوین کی۔ انہیں گرفتار کر لیا گیا اور لاہور ویمن سینٹرل جیل میں وقت گزارنے کے بعد اس نے صنعتی کارکنوں میں کام کرنا شروع کر دیا۔

آزاد بھارت میں کردار[ترمیم]

سبھدرا جوشی ایک پرجوش سیکولرسٹ تھیں جنہوں نے اپنی زندگی بھارت میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی کے لیے وقف کر دی۔ انھوں نے ساگر میں کئی مہینے گزارے جب 1961ء میں بھارت میں آزادی کے بعد کے پہلے بڑے فسادات پھوٹ پڑے تھے۔ اگلے سال انھوں نے ایک مشترکہ مخالف فرقہ وارانہ سیاسی پلیٹ فارم کے طور پر 'سمپراڈائیکتا ویرودھی کمیٹی' قائم کی اور 1968ء میں سیکولر ڈیموکریسی جریدہ شروع کیا۔ 1971ء میں، ملک میں سیکولرازم اور فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو آگے بڑھانے کے لیے قومی ایکتا ٹرسٹ کا قیام عمل میں آیا۔[4]

موت اور میراث[ترمیم]

سبھدرا جوشی 30 اکتوبر 2003ء کو رام منوہر لوہیا اسپتال دہلی میں 84 سال کی عمر میں طویل علالت کے بعد انتقال کر گئیں انکی کوئی اولاد نہیں تھی۔ [5] 23 مارچ 2011ء کو ان کے یوم پیدائش پر محکمہ ڈاک نے ان کے اعزاز میں ایک یادگاری ڈاک ٹکٹ جاری کیا تھا۔ [6]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Press Information Bureau English Releases۔ Pib.nic.in. اخذکردہ بتاریخ on 11 نومبر 2018.
  2. Subhadra Joshi (nee Datta) – A Brief Biographical Account۔ Commemoration Volume. p. 30. seculardemocracy.in
  3. Commemorative Postage Stamp on Freedom Fighter Subhadra Joshi released by Pratibha Patil۔ Jagranjosh.com (28 مارچ 2011)۔ اخذکردہ بتاریخ on 2018-11-11.
  4. Subhadra Joshi (nee Datta) – A Brief Biographical Account۔ Commemoration Volume. p. 32. seculardemocracy.in
  5. MB's Stamps of India: Subhadra Joshi۔ Mbstamps.blogspot.in (23 مارچ 2011)۔ اخذکردہ بتاریخ on 2018-11-11.