شبیر احمد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
شبیر احمد خان ٹیسٹ کیپ نمبر 174
Shabbir Ahmed (cricketer).jpeg
ذاتی معلومات
مکمل نامشبیر احمد خان
پیدائش21 اپریل 1976ء (عمر 46 سال)
خانیوال، پنجاب، پاکستان
قد6 فٹ 5 انچ (1.96 میٹر)
بلے بازیدائیں ہاتھ سے
گیند بازیدائیں باوور سے درمیانی تیز
حیثیتگیند باز
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 174)20 اگست 2003  بمقابلہ  بنگلہ دیش
آخری ٹیسٹ12 نومبر 2005  بمقابلہ  انگلستان
پہلا ایک روزہ (کیپ 127)19 ستمبر 1999  بمقابلہ  ویسٹ انڈیز
آخری ایک روزہ22 مئی 2005  بمقابلہ  ویسٹ انڈیز
واحد ٹی20(کیپ 14)2 فروری 2007  بمقابلہ  جنوبی افریقا
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ ایف سی ایل اے
میچ 10 32 100 128
رنز بنائے 88 10 1,144 474
بیٹنگ اوسط 8.80 1.66 10.49 10.53
100s/50s 0/0 0/0 0/1 0/0
ٹاپ اسکور 24* 2 50 42
گیندیں کرائیں 2,576 1,642 18,713 6,573
وکٹ 51 53 406 167
بالنگ اوسط 23.03 36.12 22.32 28.92
اننگز میں 5 وکٹ 2 0 19 n/a
میچ میں 10 وکٹ 0 0 0 n/a
بہترین بولنگ 5/48 3/32 7/70 4/23
کیچ/سٹمپ 3/- 10/– 34/– 26/–
ماخذ: Cricinfo، 10 دسمبر 2013

شبیر احمد خان ( پیدائش:21 اپریل 1976ء خانیوال) پاکستان کرکٹ ٹیم کے کھلاڑی ہیں جنھوں نے 2003ء اور 2007ء کے درمیان پاکستانی قومی کرکٹ ٹیم کے لیے 10 ٹیسٹ میچ اور 32 ایک روزہ کرکٹ کھیلے۔ اس سے پہلے کہ ان پر ایک غیر قانونی باؤلنگ ایکشن کی وجہ سے پابندی لگائی گئی۔2003-04ء کی تین ٹیسٹ میچوں کی سیریز کے پہلے میچ میں بنگلہ دیش کے خلاف اپنے ٹیسٹ ڈیبیو پر 109 رنز کے عوض آٹھ وکٹیں لینے والے لمبے فاسٹ باؤلر، جس میں دوسری اننگز میں پانچ وکٹیں بھی شامل تھیں۔ اس نے ٹورنٹو میں ویسٹ انڈیز کے خلاف اپنے پہلے ہی اوور میں دو وکٹیں لے کر تین وکٹیں لینے کے بعد اپنے ایک روزہ بین الاقوامی کیریئر کا بھی شاندار آغاز کیا۔

انداز[ترمیم]

شبیر احمد خان ایک لمبا (6'5 انچ) پاکستانی فاسٹ باؤلر ہے۔ وہ بے جان وکٹوں پر بھی بہت اچھا باؤنس نکالتا ہے، اور اسٹمپ کے قریب سے گیند کرنا - بالکل گلین میک گرا کی طرح - اسے سخت وکٹ پر چپکنے کی اجازت دیتا ہے۔ -ٹو-وکٹ لائن۔ وہ اپنے جھولوں سے زیادہ سیون اور کاٹتا ہے، اکثر تیز اور دونوں طرح سے اور ریورس سوئنگ کا ایک اچھا اثر ہے۔

ایک سال کی پابندی[ترمیم]

شبیر احمد خان نے 10 ٹیسٹ میں 51 وکٹیں حاصل کی تھیں، جب 2005ء میں انگلینڈ کے خلاف پہلا ٹیسٹ کھیلنے کے بعد ان کا غیر قانونی باؤلنگ ایکشن آئی سی سی کو رپورٹ کیا گیا تھا۔ ان کے ایکشن کی تحقیقات کے بعد، احمد پر دسمبر 2005ء میں ایک سال کے لیے کرکٹ سے پابندی عائد کر دی گئی۔

کرکٹ کی طرف واپسی[ترمیم]

شبیر احمد خان 21 دسمبر 2006ء تک، اپنی ایک سالہ مدت پوری کرنے کے بعد، شبیر ایک بار پھر بین الاقوامی کرکٹ کھیلنے کے اہل ہو گئے۔ تاہم شق یہ تھی کہ اگر شبیر احمد خان کو دوبارہ رپورٹ کیا گیا تو ان کے ایکشن کا دوبارہ جائزہ لینے تک انہیں بین الاقوامی سطح پر باؤلنگ سے روک دیا جائے گا۔

حوالہ جات[ترمیم]