فیڈو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
فیڈو
(یونانی میں: Φαίδων ویکی ڈیٹا پر (P1476) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Chodowiecki Socrates.jpg
 

مصنف افلاطون  ویکی ڈیٹا پر (P50) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اصل زبان قدیم یونانی  ویکی ڈیٹا پر (P407) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سلسلہ افلاطونی مکالمہ  ویکی ڈیٹا پر (P179) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ادبی صنف مکالمہ  ویکی ڈیٹا پر (P136) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

فیڈو (/ˈfd/; یونانی: Φαίδων، فیڈون، یونانی تلفظ : [pʰaídɔːn])، جسے قدیم قاری آن دی سول/روح پر کے نام سے یاد کرتے تھے،[1]یہ افلاطون کے سب سے مشہور مکالمات جمہوریت اور سمپوزیم کی طرح قرون وسطی میں مشہور تھا۔ فلسفیانہ مکالمے کا موضوع روح کی ابدیت ہے۔ سقراط کی موت سے قبل آخری گھنٹے کے واقعات پر مشتمل ہے اور یہ افلاطون کا چوتھا اور آخری مکالمہ ہے جو فلسفی کے آخری دنوں کا تفصیلی حال بیان کرتی ہے، دیگر تین تحریریںیوتھفرو، معذرت اور کریٹو ہیں۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

ملاحظات[ترمیم]

  1. Lorenz, Hendrik (22 اپریل 2009). "Ancient Theories of Soul". Stanford Encyclopedia of Philosophy. اخذ شدہ بتاریخ 10 دسمبر 2013. 

حوالہ جات[ترمیم]

مزید پڑھیے[ترمیم]

  • Bobonich, Christopher. 2002. "Philosophers and Non-Philosophers in the Phaedo and the Republic." In Plato’s Utopia Recast: His Later Ethics and Politics، 1–88. Oxford: Clarendon.
  • Dorter, Kenneth. 1982. Plato’s Phaedo: An Interpretation۔ Toronto: Univ. of Toronto Press.
  • Frede, Dorothea. 1978. "The Final Proof of the Immortality of the Soul in Plato’s Phaedo 102a–107a"۔ Phronesis، 23.1: 27–41.
  • Futter, D. 2014. "The Myth of Theseus in Plato's Phaedo"۔ Akroterion، 59: 88-104.
  • Gosling, J. C. B.، and C. C. W. Taylor. 1982. "Phaedo" [In] The Greeks on Pleasure، 83–95. Oxford, UK: Clarendon.
  • Holmes, Daniel. 2008. "Practicing Death in Petronius' Cena Trimalchionis and Plato's Phaedo"۔ Classical Journal، 104(1): 43-57.
  • Irwin, Terence. 1999. "The Theory of Forms"۔ [In] Plato 1: Metaphysics and Epistemology، 143–170. Edited by Gail Fine. Oxford Readings in Philosophy. Oxford, UK: Oxford University Press.
  • Most, Glenn W. 1993. "A Cock for Asclepius"۔ Classical Quarterly، 43(1): 96–111.
  • Nakagawa, Sumio. 2000. "Recollection and Forms in Plato's Phaedo." Hermathena، 169: 57-68.
  • Sedley, David. 1995. "The Dramatis Personae of Plato’s Phaedo." [In] Philosophical Dialogues: Plato, Hume, and Wittgenstein، 3–26 Edited by Timothy J. Smiley. Proceedings of the British Academy 85. Oxford, UK: Oxford University Press.

بیرونی روابط[ترمیم]