مارگریٹ الوا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
مارگریٹ الوا
 

مناصب
گورنر اتراکھنڈ   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
6 اگست 2009  – 14 مئی 2012 
 
عزیز قریشی 
گورنر راجستھان   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
12 مئی 2012  – 5 اگست 2014 
شیوراج پاٹیل 
را م نائیک 
گورنر گجرات   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
7 جولا‎ئی 2014  – 5 اگست 2014 
کملا بینیوال 
اوم پرکاش کوہلی 
گورنر گوا   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
12 جولا‎ئی 2014  – 7 اگست 2014 
 
اوم پرکاش کوہلی 
معلومات شخصیت
پیدائش 14 اپریل 1942ء (82 سال)[1][2]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
منگلور  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت بھارت
برطانوی ہند
ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان،  وکیل  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان ہندی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مارگریٹ الوا (پیدائش 14 اپریل 1942ء) ایک بھارتی سیاست دان ہیں جو گوا کی 17ویں گورنر، گجرات کی 23ویں گورنر، راجستھان کی 20ویں گورنر اور اتراکھنڈ کے چوتھی گورنر کے طور پر خدمات انجام دیں۔ وہ اس سے قبل کابینہ کی وزیر رہ چکی ہیں۔ انھوں نے راجستھان میں پنجاب کے گورنر شیوراج پاٹل سے عہدہ سنبھالا، جو اس ریاست کا اضافی چارج سنبھالے ہوئے تھے۔ گورنر مقرر ہونے سے پہلے، وہ انڈین نیشنل کانگریس میں ایک اہم شخصیت تھیں اور آل انڈیا کانگریس کمیٹی کی جوائنٹ سکریٹری تھیں۔ ان کی ساس، وائلٹ الوا، 1960ء کی دہائی میں راجیہ سبھا کی اسپیکر تھیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

مارگریٹ الوا 14 اپریل 1942ء [3] کو کرناٹک کے مینگلور میں ایک مسیحی گھرانے میں پیدا ہوئیں۔ انھوں نے ماؤنٹ کارمل کالج، بنگلور سے بی اے کی ڈگری حاصل کی اور اسی شہر کے گورنمنٹ لا کالج سے قانون کی ڈگری حاصل کی۔ [4] وہ کالج میں اپنے وقت کے دوران میں ایک گہری اور سراہنے والی بحث کرنے والی تھیں اور طلبہ کی تحریکوں میں کچھ حصہ لیتی تھیں۔ [5]

الوا نے ایک وکیل کے طور پر اپنے کام کو فلاحی تنظیموں میں شمولیت کے ساتھ جوڑ دیا، آخر کار وہ ینگ ویمن کرسچن ایسوسی ایشن کی صدر بن گئیں۔ ان کی ابتدائی شمولیتوں میں سے ایک کرونا غیر سرکاری تنظیم کے ساتھ تھی، جس کی بنیاد اس نے رکھی تھی اور جو خواتین اور بچوں سے متعلق مسائل پر مرکوز تھی۔ [4] [6]

انھوں نے 24 مئی 1964ء کو نرنجن تھامس الوا سے شادی کی، جس سے ان کی ایک بیٹی اور تین بیٹے ہیں، جن میں نیرت الوا بھی شامل ہیں۔ جوڑے کی ملاقات گورنمنٹ لا کالج میں طالب علم کے طور پر ہوئی تھی [5] اور اس کے شوہر اب ایک کامیاب برآمدی کاروبار چلا رہے ہیں، جس نے اسے مالی تحفظ فراہم کیا ہے جو اس کے بعد کی سیاست کے لیے فائدہ مند ثابت ہوا۔ [4]

سیاست[ترمیم]

شروعات[ترمیم]

الوا کے 1969ء میں سیاست میں آنے کے فیصلے پر ان کے شوہر اور سسر، جوآخم الوا اور ان کی اہلیہ، وائلٹ الوا، انڈین نیشنل کانگریس کی نمائندگی کرنے والی رکن پارلیمان ہونے کی وجہ سے سخت متاثر ہوئے۔ انھوں نے اس حوصلہ افزائی کا اعتراف کرتے ہوئے کہا ہے کہ "مجھے اپنی سیاسی سرگرمیوں میں کبھی بھی خاندانی رکاوٹوں کا سامنا نہیں کرنا پڑا" اور انھوں نے یہ بھی کہا ہے کہ 1969ء میں وائلٹ کی موت نے یہ حوصلہ فراہم کیا۔ اس نے خود کو اندرا گاندھی کی قیادت میں کانگریس (اندرا) دھڑے کے ساتھ جوڑ دیا اور کرناٹک میں اس کی ریاستی اکائی کے لیے کام کیا۔ [4] [5] انھوں نے 1975ء اور 1977ء کے درمیان میں آل انڈیا کانگریس کمیٹی کی جوائنٹ سکریٹری اور 1978ء اور 1980ء کے درمیان میں کرناٹک پردیش کانگریس کمیٹی کی جنرل سکریٹری کے طور پر خدمات انجام دیں، [3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://www.in.com/margaret-alva/biography-184471.html
  2. http://www.mapsofindia.com/maps/rajasthan/quick-facts/
  3. ^ ا ب "Rajya Sabha Members Biographical Sketches 1952 – 2003" (PDF)۔ Rajya Sabha website 
  4. ^ ا ب پ ت Commonwealth Secretariat (1999)۔ Women in Politics: Voices from the Commonwealth۔ Commonwealth Secretariat۔ صفحہ: 75–77۔ ISBN 978-0-85092-569-2 
  5. ^ ا ب پ Gita Vittal (2007)۔ Reflections: Experiences of a Bureaucrat's Wife۔ Academic Foundation۔ صفحہ: 68–69۔ ISBN 9788171884711 
  6. "Hon'ble Governor of Rajasthan: Smt. Margaret Alva"۔ Government of Rajasthan۔ 25 فروری 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 فروری 2014