ما منگشین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ما منگشین
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1719  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
ضلع وو دو  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات سنہ 1781 (61–62 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
لانژو  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
وجۂ وفات سر قلم  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں وجۂ وفات (P509) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of China (1862–1889).svg چنگ سلطنت  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر

ما مِنگشین (چینی: 馬明心) ایک چینی صوفی عالم تھے جنہوں نے چین میں سلسلہ جہریہ (سلسلہ نقشبندیہ) کی بنیاد رکھی۔[1]

نام[ترمیم]

ما منگشین کا عربی نام ابراہیم تھا۔ عرب سے چین واپس آنے کے بعد انہوں نے خود کو عزیز کہلوانا شروع کر دیا تھا۔[2]

انہیں محمد امین (عربی: محمد أمين) بھی کہا جاتا تھا۔[3] جہریہ کے پیروکار انہیں بعض اوقات وقایت اللہ (عربی: وقاية الله) کے نام سے یاد کرتے ہیں۔[4]

سوانح[ترمیم]

ان کا تعلق گانسو کے چینی بولنے والے مسلمان خاندان سے تھا۔[2] ما منگ شین نے مکہ مکرمہ[2] اور یمن میں سولہ برس رہ کر تعلیم حاصل کی۔[5] وہ نقشبندی صوفی استاد عبد الخالق کے شاگرد تھے۔[6] عبد الخالق، الزین بن محمد عبد الباقی المزجاجی (زبید، یمن کے قریب مزجاجا) کے بیٹے تھے۔ الزین نے مدینہ میں مشہور کرد عالم ابراہیم بن حسن الکورانی (1616ء–1690ء) سے تعلیم کی تھی، جو آہستہ کی بجائے بلند آواز سے ذکر (ذکر بالجبر) کرنے کے قائل تھے۔[1][2]

سنہ 1761ء میں چین واپس آنے کے بعد[7] ما منگ شین نے جہریہ (哲合忍耶; Zhéhérĕnyē) سلسلے کی بنیادی رکھی، جو چین میں ما لائی چی کے خفیہ سلسلے کے بعد دوسرا نقشبندی سلسلہ ہے۔ خفیہ صوفیوں کے ”آہستہ“ ذکر (ذکر بالسر) کرنے کی مذمت میں اور الکورانی کی تعلیمات پر عمل کرتے ہوئے جہریہ کے پیروکار با آواز بلند ذکر کرتے ہیں۔ اس مکتب فکر کا نام بھی اسی لیے جہریہ (عربی: جہر یعنی با آواز بلند) ہے۔[1][2]

ابتدائی 1780ء کی دہائی میں ما مِنگ شین کا سلسلہ جہریہ، گانسو (اس زمانے میں آج کا چنگھائی اور نینگشیا اس کا حصہ تھا) کے صوبے بھر میں زیادہ تر پھیل گیا۔ دونوں سلاسل کے پیروکاروں کے درمیان مناظرے ہوتے رہے، جو اکثر تنازعات اور کشیدگیوں کا باعث بنتے تھے۔[8][9]

جہریہ بغاوت (جہریہ سلسلے اور چنگ خاندان کے حمایت یافتہ خفیہ سلسلے کے مابین جھڑپ) کے دوران جب ما منگ شین لانژو میں گرفتار تھے، تو ان کے حمایتی شہر کے دیواروں پر چڑھ گئے۔ چاروں جانب سے پھنسے ہوئے عہدے داروں نے باغیوں کو ہتھکڑیوں میں ما منگ شین کو دکھایا۔ خوف زدہ عہدے دار ما منگ شین کو دیوار سے نیچے لائے اور اسی وقت سر قلم کر دیا۔[8]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ Dru C. Gladney۔ Muslim Chinese: ethnic nationalism in the People's Republic. Volume 149 of Harvard East Asian monographs۔ Harvard Univ Asia Center۔ صفحات 48–50۔ آئی ایس بی این 0-674-59497-5۔
  2. ^ ا ب پ ت ٹ Jonathan Neaman Lipman، Familiar strangers: a history of Muslims in Northwest China، Hong Kong University Press، صفحات 86–88، آئی ایس بی این 962-209-468-6
  3. James Hastings؛ John Alexander Selbie؛ Louis Herbert Gray۔ Encyclopædia of religion and ethics, Volume 8۔ T. & T. Clark۔ صفحہ 894۔ اخذ شدہ بتاریخ 2010-11-28۔
  4. 张承志۔ 心灵史:揭开哲合忍耶的圣域之谜۔ 台北市: 风云时代۔ آئی ایس بی این 9789576458033۔ 《熱什哈尔》中當然不稱呼「馬明心」三字。一般用他的傳教道號「維尕葉 屯拉」,意為「主道的捍衛者」。
  5. Gladney (1996), p. 50. Gladney says, though, that Ma Mingxin "returned after 16 years of study in Yemen and Arabian Peninsula in 1744". Given his dates of life (1719-1781), it would imply that he'd have to start his study in Arabia at 9 - so possibly there is a typo somewhere in that source.
  6. Lipman (1998), p.202 gives 'Abd al-Khāliq's death date as 1740, without commenting on how that would match with the dates of Ma Mingxin's biography.
  7. Lipman (1998), p. 90
  8. ^ ا ب Lipman, pp. 107-111
  9. Lipman, p. 96 (on fiscal mismanagement)