محمد اسحاق مدنی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
محمد اسحاق مدنی
Maulana Muhammad Ishaq.jpg

معلومات شخصیت
پیدائش 15 جون 1935  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
چک جھمرہ  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 28 اگست 2013 (78 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فیصل آباد  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب اسلام
عملی زندگی
پیشہ عالم، محقق، واعظ، رجال شناس  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو، فارسی، عربی، انگریزی  ویکی ڈیٹا پر زبانیں (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P islam.svg باب اسلام

مولانا محمد اسحاق مدنی (1935ء – 2013ء) پاکستان کے ایک معروف محقق عالم دین تھے۔

سوانح[ترمیم]

15 جون 1935ء میں فیصل آباد کے ایک چھوٹے سے زمین دار منشی کے گھر میں پیدا ہوئے۔ میٹرک کے بعد گورنمنٹ کالج فیصل آباد سے ایف اے فرسٹ ڈویژن میں پاس کیا۔ ریاضی کا اضافی مضمون پڑھا۔سکول کے زمانہ ہی سے دل و دماغ دینی تعلیم کی طرف مائل تھے۔ مولانا مطالعہ کے اس حد تک شوقین تھے کہ گاؤں میں اپنی زمین میں ہل چلا رہے ہوتے اور ساتھ ساتھ ایک ہاتھ میں کتاب ہوتی اور مطالعہ بھی جاری رہتا۔ دینی کتب کو سمجھنے کے لیے عربی، فارسی، اردو اور انگریزی پر عبور حاصل کیا۔ وہ والد کے ساتھ کھیتی باڑی میں ہاتھ بھی بٹاتے رہے اور دینی کتب کا مطالعہ بھی جاری رہا۔[1] وہ صلاحیتوں سے خوب بہرہ ور تھے۔ مولوی نور محمد سے صرف نحو کی کتب سبقًا پڑھیں۔ پھر کچھ کتب منطق، فلسفہ اور دیگر فنون کی کتب مولانا امداد الحق سے پڑھیں۔ عربی زبان و ادب میں مہارت حاصل کی اور تحقیقی میدان میں داخل ہو گئے۔

مولانا اسحاق اتحاد امت کے حامی اور داعی تھے۔ مختلف دینی مسائل پر وہ اپنے ایک منفرد پرجوش انداز سے کلام کرتے تھے۔ مولانا اسحاق پاکستان کے اُن محقق علمائے دین میں سے تھے جو اہل روایت ہونے کے ساتھ ساتھ شاندار دانش بھی رکھتے تھے اور شریعت کے مختلف مسائل پر کلام کرتے وقت نہ صرف صحیح روایات پر استدلال قائم کرتے تھے بلکہ اس سلسلہ میں عقلی دلائل سے حاضرین کو قائل کیے بنا نہ رہتے۔ مولانا اسحاق جذبات کے ساتھ ساتھ دلائل بھی قوی رکھتے تھے، یہی وجہ تھی کہ انہیں شیعہ سنی سمیت تمام مکاتب فکر میں نمایاں مقام حاصل تھا اور لوگ ان کے خطابات بڑے انہماک سے سنتے تھے۔ 1983ء تک وہ گاؤں کی مسجد میں خطابت کرتے رہے۔ بعد ازاں وہ فیصل اباد جامع مسجد کریمیہ میں ذمہ داری ادا کرنے لگے۔ ان کی شہرت دور دور تک پھیل گئی۔ بہت سے لوگوں نے ان کے خطبات جمعہ سے متاثر ہوکر اپنے عقائد کی اصلاح کی۔

مولانا اسحاق 21 شوال 1434ھ بمطابق 28 اگست 2013ء کو وفات پا گئے۔[1]

نظریات[ترمیم]

مولانا اسحاق اتحاد امت کے زبردست مبلغ تھے۔ وہ کسی مسلک کو بھی شدت سے رد نہیں کرتے تھے، یہی وجہ تھی کہ آپ احباب میں سبھی مسالک کے لوگ تھے۔ اسحاق مدنی برملا کہا کرتے کہ: مذہب نہیں سکھاتا آپس میں بیر رکھنا اور میرا پیغام محبت ہے جہاں تک پہنچے۔[1] دفاع اہل بیت میں ان کا کوئی ثانی نہیں۔ اسلامی تاریخ کے جانگداز واقعات کو جس تحقیق سے حدیث کی روشنی میں پیش کیا اور مخالفت مول لی، وہ اپنا کوئی ثانی نہیں رکھتا۔

تنقید[ترمیم]

مولانا اسحاق اپنی تقریر یا گفتگو میں پورے حوالے سے بات کرتے اور پھر اس پر ڈٹ جاتے، چنانچہ بعض علما آپ سے نالاں رہتے۔ تنقید بھی کرتے کہ مولانا اسحاق نہ اہل حدیث پورے ہیں اور نہ پورے شیعہ، دیوبندی وغیرہم۔[1] مولانا محمد اسحٰق بہت عاجز اور صابر عالم دین تھے۔ سب سے خندہ پیشانی سے ملتے۔ علم اور زہد کی وہ جیتی جاگتی مثال تھے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت "خاموش ہوگیا ہے چمن بولتا ہوا". روزنامہ پاکستان. 14 ستمبر 2013.