نریش کمار شاد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
نریش کُمار شاد
At Zia Fatehabadi.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش 11 دسمبر 1927ء
یہیپر  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 21 مئی 1969ء
دہلی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
قومیت ہندوستانی
عملی زندگی
پیشہ صحافت
پیشہ ورانہ زبان ہندی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر

نریش کمار شاد (پیدائش: 11 دسمبر 1927ء— وفات: 21 مئی 1969ء) اردو غزل، قطعہ اور رباعی کے شاعر تھے۔

ذاتی سانحہ[ترمیم]

آزادی کے شاد نے دلّی کا رُخ کیا۔ ستمبر 1968ء میں یکایک شاد والد دردنکودری لاپتہ ہو گئے۔ شاد نے بہت تلاش کیا، مگروہ نہیں ملے۔ شاد نے اس صدمے کوبلانے کے لیے شراب پینا شروع کر دیا۔ اس سے ان کی نجی زندگی کا خراب ہو گئی تھی۔ بالآخرمئی 1969ء میں شاد کے والد کی لاش دریائے جمنا سے ملی۔

شعروشاعری[ترمیم]

شاد نے والد کے علاوہ تلوک چند محروم اور جوش ملسیانی سے اشعار کی اصلاح کے لیے مشورہ کیا۔ ان کی نگارشات یہ ہیں:

  • نظم:۔’’بت کدہ‘، ’فریاد‘، ’دستک‘، ’للکار‘، ’آہٹیں‘، ’آیات جنوں‘، ’میرا منتخب کلام‘
  • نثر:۔’’ڈارلنگ‘، ’راکھ تلے‘، ’غالب اور اس کی شاعری‘، ’آواز غالب‘، ’سرقہ اور توارد‘۔[1]
1965ء کی ایک تصویر جس میں ضیاء فتح آبادی کے مکان پر بائیں سے دائیں جانب مشاہیر یوں موجود ہیں: نریش کمار شاد، کیلاش چندر ناز، طالب دہلوی، خوشتر گرامی، بلراج حیرت، ساغر نظامی، طالب چکوالی، منور لکھنؤی، مالک رام، جینیندرا کمار، ضیاء فتح آبادی، رشی پٹیالوی، بہار برنی، جوگندر پال، عنوان چشتی اور کرشن موہن۔

انتقال[ترمیم]

20 مئی/21 مئی 1969ء کی درمیانی شب شاد نے غالباً خودکشی کی۔ 21 مئی 1969ء کی صبح شاد کی نعش دریائے جمنا میں تیرتی ہوئی پائی گئی۔[2]

حوالہ جات[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. https://rekhta.org/poets/naresh-kumar-shad/profile?lang=Ur
  2. مالک رام: تذکرہ ماہ و سال، صفحہ 211، مطبوعہ دہلی، 2011ء۔