نفیسہ شاہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
نفیسہ شاہ
مناصب
رکن چودہویں قومی اسمبلی پاکستان   خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں منصب (P39) ویکی ڈیٹا پر
رکنیت مدت
1 جون 2013  – 31 مئی 2018 
حلقہ انتخاب خواتین کے لیے مخصوص نشست 
پارلیمانی مدت چودہویں قومی اسمبلی 
معلومات شخصیت
پیدائش 20 جنوری 1968 (51 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
جماعت پاکستان پیپلز پارٹی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) ویکی ڈیٹا پر
والد سید قاسم علی شاہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں والد (P22) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی کراچی گرائمر اسکول  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ سیاست دان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

نفیسہ شاہ (انگریزی: Nafisa Shah) ایک پاکستانی سیاست دان ہیں جو چودہویں قومی اسمبلی پاکستان کی رکن تھیں۔ حال ہی میں وہ پندرہویں قومی اسمبلی پاکستان کی رکن منتخب ہوئی ہیں۔

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

نفیسہ 20 جنوری 1968ء [1] کو خیرپور، سندھ میں پیدا ہوئیں۔ [2] سندھ کے سابقہ وزیر اعلیٰ قائم علی شاہ کی بیٹی ہیں۔ [3] انہوں نے سماجی اور ثقافتی بشریات میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری جامعہ اوکسفرڈ سے حاصل کی۔ [2]

سیاسی کیریئر[ترمیم]

2001ء تا 2007ء [2] وہ ضلع خیرپور کی ناظم رہی ہیں۔ [4][3][5]

پاکستان عام انتخابات 2008ء میں انہوں نے خواتین کی مخصوص نشست کے لیے پاکستان پیپلز پارٹی کی امیدوار کی حیثیت سے انتخابات میں حصہ لیا اور کامیاب ہو کر قومی اسمبلی پاکستان کی رکن بنیں۔ .[6][7] 2008ء اور 2013ء کے درمیان نسانی ترقی کے قومی کمیشن کی سربراہ اور خواتین کی پارلیمانی کوکس کی جنرل سیکرٹری کے طور پر کام کیا۔ [3]

وہ دولت مشترکہ پارلیمانی ایسوسی ایشن کی نائب صدر رہہ ہیں۔ .[3] انہوں نے انسانی ترقی کے قومی کمیشن کی سربراہی بھی کی۔ [5] 2011ء میں انہیں سندھ میں ناموسی قتل پر اپنے مطالعہ کے لیے جامعہ اوکسفرڈ سے پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی گئی۔ [5]

پاکستان کے عام انتخابات، 2013ء میں وہ خواتین کی مخصوص نشست کے لیے پاکستان پیپلز پارٹی کی امیدوار کی حیثیت سے انتخابات میں حصہ لیا اور کامیاب ہو کر دوسری بار قومی اسمبلی پاکستان کی رکن بنیں۔ [8][9][10]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "If elections are held on time…"۔ www.thenews.com.pk (انگریزی زبان میں)۔ Archived from the original on 5 دسمبر 2017۔ اخذ شدہ بتاریخ 4 دسمبر 2017۔
  2. ^ ا ب پ "Profiles: International Conference on Civil-Military Relations"۔ www.pildat.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 دسمبر 2017۔
  3. ^ ا ب پ ت "Wondrous women"۔ DAWN.COM (انگریزی زبان میں)۔ 6 مارچ 2016۔ مورخہ 9 مارچ 2017 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 مارچ 2017۔
  4. "SUKKUR: Khairpur Nazim did not attend meeting"۔ DAWN.COM (انگریزی زبان میں)۔ 19 اپریل 2002۔ مورخہ 9 مارچ 2017 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 مارچ 2017۔
  5. ^ ا ب پ "Nafisa Shah gets Ph.D from Oxford"۔ DAWN.COM (انگریزی زبان میں)۔ 3 اپریل 2011۔ مورخہ 12 مارچ 2017 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 مارچ 2017۔
  6. "KARACHI: Opposition parties shortlist candidates : Crucial PML meeting today"۔ DAWN.COM (انگریزی زبان میں)۔ 24 نومبر 2007۔ مورخہ 9 مارچ 2017 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 مارچ 2017۔
  7. "Dual nationality: PM among 450 MPs yet to file declaration"۔ DAWN.COM (انگریزی زبان میں)۔ 23 اکتوبر 2012۔ مورخہ 9 مارچ 2017 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 مارچ 2017۔
  8. "Women, minority seats allotted"۔ DAWN.COM (انگریزی زبان میں)۔ 29 مئی 2013۔ مورخہ 7 مارچ 2017 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 مارچ 2017۔
  9. "Women treated as 'second-rate' parliamentarians, says Dr Nafisa - The Express Tribune"۔ The Express Tribune۔ 21 مارچ 2016۔ مورخہ 9 مارچ 2017 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 مارچ 2017۔
  10. "Women's reserved seats: Top politicians' spouses, kin strike it lucky - The Express Tribune"۔ The Express Tribune۔ 30 مئی 2013۔ مورخہ 12 فروری 2017 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 مارچ 2017۔