وٹھا بائی بھاو منگ نارائن گاونکر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
وٹھا بائی بھاو منگ نارائن گاونکر
Photo of Vithabai Bhau Mang Narayangaonkar.jpg

معلومات شخصیت
پیدائش جولا‎ئی 1935  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پانڈھراپور  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 15 جنوری 2002 (66–67 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مہاراشٹر  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ گلو کارہ،  رقاصہ،  اداکارہ اور ادکارہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

وٹھا بائی بھاو منگ نارائنگاونکر (انگریزی: Vithabai Bhau Mang Narayangaonkar) (ولادت: جولائی 1935ء - وفات: 15 جنوری 2002ء) بھارتی رقاصہ، گلوکارہ اور تماشا آرٹسٹ تھیں۔

ابتدائی زندگی اور کیریئر[ترمیم]

وٹھا بائی فنکاروں کے ایک خاندان میں پیدا ہوئی اور بڑی ہوئی۔ وہ مہاراشٹر کے ضلع سولا پور کے پنڈھر پور میں پیدا ہوئیں تھیں۔ بھاؤ-باپو منگ نارائنگاونکر خاندانی گروہ تھا جو ان کے والد اور چچا چلاتے تھے۔ ان کے دادا نارائن خدے نے گروہ بنایا تھا۔ ان کا تعلق ضلع پونہ کے تعلقہ شرور میں کاؤتھے یامائی سے تھا۔[1] بچپن سے ہی، ان کو گانے کے مختلف انداز جیسے لاونیا، گیولان، بیدک ، وغیرہ سے روشناس کیا گیا۔ ایک طالب علم کی حیثیت سے وہ اسکول میں زیادہ اچھا نہیں تھا، حالانکہ اس نے بغیر کسی رسمی تربیت کے بہت ہی چھوٹی عمر سے ہی اسٹیج پر بے حد خوبصورتی کے ساتھ پیش کیا تھا۔[2]

وٹھا بائینے اپنے فن کے لیے سن 1957ء اور 1990ءمیں صدر ہند سے تمغے حاصل کیے۔[3] یہ لکھا گیا ہے کہ ان کی شہرت اور ان کی عزت کے باوجود جو اس نے حاصل کیا اس کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ مالی پریشانی میں تھیں اور اس کی پروا نہیں کی گئی۔[4] وٹھا بائی کے مرنے کے بعد ان کے اسپتال کے بلوں کا عطیہ دہندگان نے کیا۔[5]

ایوارڈ اور پہچان[ترمیم]

وٹھا بائی نے بہت سراہی حاصل کی اور اسی طرح تماشا صنف کے فن میں سب سے مشہور صدر کے ایوارڈ کے ساتھ اس کی جماعت کو نوازا گیا۔ انہیں "تماشا سمردینی" (تماشا مہارانی) کہا جاتا تھا۔ ان کے مداحوں نےاور حکومت نے بھی تماشا مہارانی کا اعزاز بخشا تھا۔[5][6]

حکومت مہاراشٹرا نے 2006ء میں ان کی یاد میں سالانہ "وٹھا بائی نارائنکاوکر لائف ٹائم اچیومنٹ ایوارڈ" قائم کیا تھا۔ یہ ایوارڈ ان لوگوں کو دیا گیا ہے جنھوں نے تماشا آرٹ کے تحفظ اور تبلیغ میں بڑے پیمانے پر حصہ لیا تھا۔ یہ ایوارڈ 2006ء سے دیا جارہا ہے اور ایوارڈز کے قابل ذکر افراد کانٹا بائی ستارکر، وسنت اوصاریکر، محترمہ سولوچنا نالاوڑے، ہریباؤ بڈھے، مسٹ منگلا بنسوڈ (وٹھا بائی کی بیٹی)، سادھو پٹسیوٹ، انکوش کھڈے، پربھا شیوینیکر، بھیما سانگاویر، گنگارام کاوٹھیکر، مسٹ رادھا بائی کھڈے ناسیکر، مدھوکر نیرا ہیں۔ لوکشاہیر بشیر مومن کتتھیکر [7] کو یہ ایوارڈ برائے سال 2018ء-2019ء میں ، لوک آرٹ ، لاوانی اور تماشا کے میدان میں ان کی زندگی بھر شراکت کے لیے دیا گیا ہے۔ [8]

گلاب سنگم نرکر کو لیوانی اور تماشا کے میدان میں ان کی شراکت کے لیے سال 2019ء-2020ء کے لیے اس ایوارڈ سے نوازا گیا ہے۔ [9]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Abp Majha (2016-09-08)، माझा कट्टा: लावणी सम्राज्ञी मंगला बनसोडे، اخذ شدہ بتاریخ 2016-12-18 
  2. Lakshmi، C.S. (3 February 2002). "Life and times of a kalakaar". دی ہندو. اخذ شدہ بتاریخ 23 اگست 2012. 
  3. "Bowing out - Indian Express". archive.indianexpress.com. اخذ شدہ بتاریخ 18 دسمبر 2016. 
  4. Bendix، Regina F.؛ Hasan-Rokem، Galit (2012-03-12). A Companion to Folklore (بزبان انگریزی). John Wiley & Sons. ISBN 9781444354386. 
  5. ^ ا ب "Lavani Legend Vithabai is no more". دی ٹائمز آف انڈیا. Pune, India. Times News Network. 17 July 2002. اخذ شدہ بتاریخ 23 اگست 2012. 
  6. "लाज धरा पाव्हणं...". marathibhaskar. 2012-03-03. اخذ شدہ بتاریخ 18 دسمبر 2016. 
  7. बी. के. मोमीन कवठेकर यांना विठाबाई नारायणगावकर पुरस्कार जाहीर “Sakal, a leading Marathi Daily”, 2-Jan-2019
  8. तमाशासम्रादणी विठाबाई नारायणगावकर जीवनगौरव पुरस्कार बशीर कमरूद्दीन मोमीन यांना घोषित "लोकमत, a leading Marathi language Daily", 2-Jan-2019
  9. ज्येष्ठ लोककलावंत गुलाबबाई संगमनेरकर यांना विठाबाई नारायणगावकर जीवनगौरव पुरस्कार जाहीर آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ maharashtratimes.com [Error: unknown archive URL] “Sakal, a leading Marathi Daily”, 24-Jun-2020