مندرجات کا رخ کریں

پاکستان نیشنل شپنگ کارپوریشن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
پاکستان نیشنل شپنگ کارپوریشن
شپنگ انڈسٹری
صنعتمال برداری اور ویسل صنعت
نوعMegacorporation
پیشرونیشنل شپنگ کارپوریشن(این اسی سی)
محمدی سٹیمشپ کمپنی لمیٹڈ
ایسٹ اینڈ ویسٹ سٹیمشپ کمپنی
قیام1971
صدر دفترکراچی، پاکستان
کلیدی افراد
رضوان احمد[1]
(چیئرمین، سی ای او)
مصنوعاتکارگو جہاز، ٹینکر، کنٹینر شپ
2.47 ارب روپے[2]
(جون 2017 میں ٹیکس کی ادائیگی کے بعد منافع)
مالکحکومت پاکستان 77.13%
پی این اسی سی ایمپلائز ایمپاورمنٹ ٹرسٹ(12%)
نیشنل ڈویلپمنٹ فنانس کارپوریشن (3.80%)
دیگر(7.07%)
مالک کمپنیپاکستان شپنگ کارپوریشن آرڈیننس 1979
ویب سائٹwww.pnsc.com.pk
دائیں طرف پی این ایس سی بلڈنگ

پاکستان نیشنل شپنگ کارپوریشن یا قومی ادارہ جہازرانی پاکستان جسے پی این ایس سی بھی لکھا جاتا ہے، قومی پرچم کی حامل اور حکومت پاکستان کے سمندری امور برائے سکریٹری کے انتظامی کنٹرول میں سرکاری ملکیت کی میگا کارپوریشن ہے۔ کارپوریشن کا مرکزی دفتر کراچی میں واقع ہے۔ لاہور میں واقع ایک علاقائی دفتر، ملک میں شپنگ کی ضروریات کو پورا کرتا ہے۔ کارپوریشن کے پاس دنیا بھر میں شپنگ کے کاروبار کی دیکھ بھال کرنے والے ایجنٹوں کا ایک وسیع بین الاقوامی نیٹ ورک بھی ہے۔ پاکستان مرچنٹ نیوی سرکاری تاجروں کا بحری بیڑا ہے جو پاکستان نیشنل شپنگ کارپوریشن اور سول انسائن آف پاکستان کا جھنڈا لہراتاہے ۔

پی این ایس سی کا چیئرمین وفاقی حکومت کی طرف سے مقرر کیا جاتا ہے اور عام طور پر تین ستارہ نیوی افسر ہوتا ہے (یا دیگر خدمات سے مساوی رینک کا ہوتا ہے)۔ جولائی 2018 تک پی این ایس سی کے چیئرمین رضوان احمدہیں ۔ سابق پی این اسی سی چیئرمین میں ایڈمرل یستور الحق ملک نے ایڈمرل سعید محمد خان اور ایڈمرل منصور الحق شامل ہیں۔ [3] [4]

تاریخ[ترمیم]

پاکستان مرچنٹ نیوی 1947 میں آزادی کے بعد تشکیل دی گئی تھی، جب پاکستان کو چار نجی ملکیت والے کارگو جہازوں کا ایک بیڑا وراثت میں ملا تھا۔ حکومت پاکستان کے ذریعہ قائم کردہ سمندری امور کی وزارت، مرکنٹائل میرین ڈیپارٹمنٹ اور گورنمنٹ شپنگ آفس کو جہازوں پر پرچم لگانے کا اختیار دیا گیا تھا اور یہ بھی یقینی بنایا گیا تھا کہ بحری جہاز سمندر کے قابل ہے۔

1963 میں، نیشنل شپنگ آرڈیننس نافذ کیا گیا اور نیشنل شپنگ کارپوریشن (این ایس سی) قائم کیا گیا جس نے اپنا پہلا استعمال شدہ جہاز ایم وی روپسا 1965 میں خریدا۔ قومی بیڑے میں 53 جہاز شامل تھے جن کی ملکیت 10 نجی شپنگ کمپنیوں کے پاس تھی۔ مشرقی پاکستان کی علیحدگی اور 1971 میں بنگلہ دیش کے وجود میں آنے سے قبل قومی بیڑے میں جہازوں کی تعداد بڑھ کر 71 ہو گئی تھی۔ جبکہ بنگلہ دیش کی علیحدگی کے بعد یہ تعداد 57 جہازوں پر آ گئی تھی۔

پاکستان نیشنل شپنگ کارپوریشن کی ماتحت کمپنیاں[ترمیم]

  • چترال شپنگ (پرائیویٹ) لمیٹڈ
  • حیدرآباد شپنگ (پرائیویٹ) لمیٹڈ
  • مالاکنڈ شپنگ (پرائیویٹ) لمیٹڈ
  • ملتان شپنگ (پرائیویٹ) لمیٹڈ
  • سبی شپنگ (پرائیویٹ) لمیٹڈ
  • کراچی شپنگ (پرائیویٹ) لمیٹڈ
  • لاہور شپنگ (پرائیویٹ) لمیٹڈ
  • کوئٹہ شپنگ (پرائیویٹ) لمیٹڈ
  • شالامار شپنگ (پرائیویٹ) لمیٹڈ

سابق کمپنی کے لقب[ترمیم]

محمدی اسٹیمشپ کمپنی لمیٹڈ کو 12 مئی 1947 کو شامل کیا گیا۔ [5] 1949 میں، یہ کراچی اسٹاک ایکسچینج میں عوامی طور پر درج ہونے والی پہلی پاکستانی شپنگ لائن بن گئی۔ [6]

میک لوڈ روڈ پر واقع محمدی ہاؤس (اب آئی آئی چندریگر روڈ ) کمپنی کا صدر مقام تھا۔ [7]

اس کمپنی کو حکومت پاکستان نے اس وقت کے صدر ذوالفقار علی بھٹو کے دور میں قومیا لیا تھا۔ بعد ازاں اسے پاکستان نیشنل شپنگ کارپوریشن بنانے کے لیے دیگر پاکستانی قومی جہاز رانی کمپنیوں کے ساتھ ملا دیا گیا۔

ڈیک آفیسرز اور انجینئر آفیسرز کا مرچنٹ نیوی رینک انسائنیا[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "پاکستان نیشنل شپنگ کارپوریشن> ہمارے بارے میں> ہمارے بارے میں> چئر مین کی تاریخ"۔ pnsc.com.pk 
  2. "پاکستان نیشنل شپنگ کارپوریشن کے مالی نتائج"۔ propakistani.pk۔ 28 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  3. "PNSC to be given priority in oil and LNG transportation"۔ The Express Tribune۔ June 29, 2019 
  4. "Pakistan adds two more oil tankers to PNSC fleet"۔ Arab News۔ April 25, 2019 
  5. Malik, Iftikhar Ahmed, "History of Pakistan Merchant Navy 1947- 2009" Karachi 2010 (privately published) pg 5
  6. Malik, Iftikhar Ahmed, History of Pakistan Merchant Navy 1947- 2009 Karachi 2010 (privately published) pg 6
  7. Malik, Iftikhar Ahmed, History of Pakistan Merchant Navy 1947- 2009 Karachi 2010 (privately published) pg 7

بیرونی روابط[ترمیم]