پاکستانی روپیہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پاکستانی روپیہ
پاکستانی روپیہ (اردو)
PKR Rs 1000.jpg
Rs.1000 بینک نوٹ (سامنے)
آئیسو4217 کوڈ
کوڈPKR
نمبر586
علامت2
نام اور قیمت
ذیلی اکائی
1100پیسہ
عرفیتروپیہ، پیسے
بینک نوٹ
 عام استعمال10, 20, 50, 100, 500, 1000 روپئے
 کم استعمال5000 روپئے
سکے
 عام استعمال1, 2, 5 روپئے
 کم استعمال10 روپئے
آبادیات
سرکاری صارفینFlag of Pakistan.svg پاکستان
غیرسرکاری صارفینFlag of Afghanistan.svg افغانستان[1][2]
اجرا
مرکزی بینکبینک دولت پاکستان
 ویب سائٹwww.sbp.org.pk
مقررہ قیمت
افراطِ زر7% (اکتوبر 2018)[3]
 ماخذState Bank of Pakistan[4]

پاکستانی روپیہ (Pakistani Rupee) پاکستان کی کرنسی کا نام ہے۔

زرکاغذ[ترمیم]

بینک نوٹ 2005 سے قبل سلسلہ[5]
تصریر قیمت ابعاد مرکزی رنگ تفصیلات – معکوس رخ حیثیت
سیدھا رخ معکوس رخ
Rs. 1 95 × 66 ملی میٹر بھورا مقبرہ علامہ اقبال، لاہور گردش میں نہیں
Rs. 2 109 × 66 ملی میٹر ارغوانی بادشاہی مسجد، لاہور
Rs. 5 127 × 73 ملی میٹر قرمزی خوجک سرنگ، بلوچستان
Rs. 10 141 × 73 ملی میٹر سبز موئن جو دڑو، ضلع لاڑکانہ اب طباعت نہیں – گردش میں ہے
Rs. 50 154 × 73 ملی میٹر ارغوانی اور سرخ عالمگیری دروازہ ،شاہی قلعہ، لاہور
Rs. 100 165 × 73 ملی میٹر سرخ اور نارنجی اسلامیہ کالج یونیورسٹی
Rs. 500 175 × 73 ملی میٹر سبز، ٹین، سرخ اور نارنجی بینک دولت پاکستان، اسلام آباد
Rs. 1000 175 × 73 ملی میٹر نیلا مقبرہ جہانگیر، لاہور
These images are to scale at 0.7 pixels per millimetre.
2005 سلسلہ[6]
تصویر قیمت ابعاد مرکزی رنگ تفصیلات دورانیہ
سیدھا رخ معکوس رخ سیدھا رخ معکوس رخ
Rs. 5 115 x 65 ملی میٹر سبزی مائل سرمئ محمد علی جناح گوادر بندرگاہ، بلوچستان 8 جولائی 2008–31 دسمبر 2012
Rs. 10 115 × 65 ملی میٹر سبز درۂ خیبر، خیبر ایجنسی، قبائلی علاقہ جات 27 مئی 2006 – تاحال
Rs. 20 123 × 65 ملی میٹر نارنجی سبز موئن جو دڑو، ضلع لاڑکانہ 22 مارچ 2008 – تاحال
Rs. 50 131 x 65 ملی میٹر ارغوانی کے ٹو، دنیا کی دوسری بلنر ترین چوٹی، پاکستان 8 جولائی 2008 – تاحال
Rs. 100 139 × 65 ملی میٹر سرخ قائداعظم ریزیڈنسی، زیارت 11 نومبر 2006 – تاحال
Rs. 500 147 × 65 ملی میٹر گہرا سبز بادشاہی مسجد، لاہور
Rs. 1000 155 × 65 ملی میٹر گہرا نیلا اسلامیہ کالج یونیورسٹی 26 فروری 2007 – تاحال
100px Rs. 5000 163 × 65 ملی میٹر سرسوں زرد فیصل مسجد، اسلام آباد 27 مئی 2006 – تاحال
These images are to scale at 0.7 pixels per millimetre.

تاریخ[ترمیم]

یکم اپریل 1948ء کو حکومت نے ایک پائی‘ آدھا آنہ‘ دوآنہ‘ پائو روپیہ‘ نصف روپیہ اور ایک روپہ کے سات سکوں کا ایک سیٹ جاری کیا اور اس وقت کے وزیر خزانہ غلام محمد نے ایک خوب صورت تقریب میں یہ سیٹ بابائے قوم محمد علی جناح کی خدمت میں پیش کیا۔ پاکستان میں مالیاتی نظام کا باقاعدہ آغاز جولائی 1948ء میں کراچی میں اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے افتتاح سے ہوا۔ اس افتتاح کے بعد پاکستان میں نئے کرنسی نوٹوں کی تیاری اور پاکستان کے اپنے سیکورٹی پرنٹنگ پریس کے قیام کے لئے کوششیں تیز کردی گئیں‘ ان کوششوں کے نتیجے میں درج ترتیب سے سکوں اور نوٹوں کا اب تک اجراء ہوتا رہا ہے۔ یکم اکتوبر 1948ء کو حکومت پاکستان نے 5 روپے‘ 10 روپے اور 100 روپے کے کرنسی نوٹ جاری کئے۔ یہ نوٹ برطانیہ کی فرم میسرز ڈی لاروا اینڈ کمپنی میں طبع کئے گئے تھے۔ یکم مارچ 1949ء کو حکومت پاکستان نے ایک اور 2 روپے مالیت کے 2 کرنسی نوٹ جاری کئے۔ ایک روپیہ پر وزارت داخلہ کے سیکریٹری وکٹرٹرنر کے دستخط جبکہ 2 روپے پر ’’پہلی مرتبہ‘‘ اسٹیٹ بینک کے گورنر زاہد حسین کے دستخط شائع ہوئے۔

اس سے قبل نوٹوں پر وزیر خزانہ غلام محمد کے دستخط شائع ہوتے تھے۔ اسٹیٹ بینک پاکستان کی طرف سے یکم ستمبر 1957ء کو 5 روپے اور 10 روپے کے نوٹ جاری کئے گئے۔ اسٹیٹ بینک نے 24 دسمبر 1957ء کو 100 روپے مالیت کا نوٹ جاری کیا جس پر بابائے قوم محمد علی جناح کی تصویر پرنٹ تھی۔ اس کی دوسری طرف بادشاہی مسجد لاہور کی تصویر تھی۔ اس پر گورنر اسٹیٹ بینک عبدالقادر کے دستخط تھے۔ پاکستان میں پہلی بار یکم جنوری 1961ء کو اعشاری سکے جاری کئے گئے جن کی وجہ سے ایک پائی‘ پیسہ‘ اکنی‘ دونی‘ چونی اور اٹھنی کی قانونی حیثیت ختم کرکے رفتہ رفتہ‘ ایک‘ دو‘ پانچ‘ پچیس‘ پچاس پیسے کے سکے اور ایک روپیہ کا سکہ رائج ہوا۔ 12 جون 1964ء کو اسٹیٹ بینک نے 50 روپے مالیت کا کرنسی نوٹ جاری کیا۔ اس نوٹ پر گورنر اسٹیٹ بینک شجاعت علی کے دستخط تھے۔ 7جون 1971ء کو پاکستان کی وزارت خزانہ نے اعلان کیا کہ چند ناگزیر وجوہات کی بناء پر ایک سو اور پانچ سو روپے کے نوٹوں کو غیر قانونی قرار دیا جارہا ہے‘ اس لئے عوام ایک سو اور پانچ سو کے نوٹوں کو بینکوں اور مقرر کردہ اداروں میں جمع کرواکر ان کی رسید لے لیں‘ تاکہ بعد میں ان کے متبادل دوسرے نوٹ حاصل کرسکیں۔ پاکستان کی تاریخ میں غالباً پہلی مرتبہ 25 دسمبر 1966ء کو حکومت نے چاندی اور سونے کے 100 اور 500 روپے کے 2 یادگاری سکے جاری کئے جو کہ وینزیلا میں تیار کئے گئے تھے۔ 20 جنوری 1982ء کو حکومت پاکستان نے ایک روپیہ مالیت کا اور بعدازاں اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے پانچ‘ دس‘ پچاس او رایک سو روپے مالیت کے 4 نئے کرنسی نوٹ جاری کئے‘ جن کی ایک خاص بات تو یہ تھی کہ اس پربنگالی زبان کی عبارتیں حذف کردی گئی تھی اور دوسری یہ کہ ان کی پشت پر اردو میں ’’رزق حلال عین عبادت ہے‘‘ کی عبارت طبع تھی۔

یکم اپریل 1986ء کو اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے 5 سو روپے مالیت کا نیا کرنسی نوٹ جاری کیا۔ 18 جولائی 1987ء کو اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے ایک ہزار روپے کا کرنسی نوٹ جاری کیا جو مالیت کے اعتبار سے اس وقت پاکستان کا سب سے بڑا کرنسی نوٹ تھا۔ اقوام متحدہ کو گولڈن جوبلی کے حوالے سے 29 جنوری 1996ء کو حکومت پاکستان نے ایک خصوصی سکہ جاری کیا‘ اس سکے پشت پر اقوام متحدہ کا لوگو اور 50 کا ہندسہ کندہ تھا۔ 22 مارچ 1997ء کو حکومت نے پاکستان کی گولڈن جوبلی تقریبات کے حوالے سے 50 روپے مالیت کا ایک خصوصی سکہ جاری کیا‘ اس سکے پشت پر پاکستان کا پرچم بنا تھا اور 50 سالہ جشن آزادی پاکستان 1947ء تا 1997ء کے حوالے ہی سے اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے 5 روپے کا ایک خصوصی نوٹ جاری کیا جس کی پشت پر ملتان میں واقع شاہ رکن عالم کے مزار کی تصویر شائع کی گئی تھی۔ 26 مئی 2006ء کو اسٹیٹ ینک آف پاکستان کی گورنر ڈاکٹر شمشاد اختر نے ملک کی تاریخ کے سب سے بڑے کرنسی نوٹ جو کہ 5 ہزار مالیت کا تھا کے اجراء کا اعلان کیا۔اسی روز 10 روپے کا نیا نوٹ بھی جاری کیا گیا جس کا رنگ سبز جبکہ اس کی پشت پر باب خیبر کی تصویر شائع کی گئی تھی۔ 26 مئی 2006ء کو اسٹیٹ بینک کی طرف سے 10 روپے مالیت کا یادگاری سکہ جاری کیا گیا‘ اس کا رنگ سفید اور وزن 8.25 گرام تھا۔ اس کے بعد یکم اکتوبر 2009ء کو عوامی جمہوریہ چین کے 60 ویں جشن آزادی کے موقع پر 10 روپے مالیت کا ایک یادگاری سکہ جاری کیا گیا۔ اس کی پشت پر پاکستان اور چین کے پرچموں کی تصویروں کے ساتھ ’’60 سالہ جشن آزادی عوامی جمہوریہ چین‘‘ اور ’’پاک چین دوستی زندہ باد‘‘ کی عبارت درج تھی۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Hanifi، Shah. Connecting Histories in Afghanistan: Market Relations and State Formation on a Colonial Frontier. Stanford University Press. صفحہ 171. ISBN 978-0-8047-7777-3. 
  2. Munoz، Arturo. U.S. Military Information Operations in Afghanistan: Effectiveness of Psychological Operations 2001–2010. Rand Corporation. صفحہ 72. ISBN 978-0-8330-5156-1. 
  3. {{cite web |url=http://www.tradingeconomics.com/pakistan/core-inflation-rate |title=Archived copy |accessdate=2016-11-29 |deadurl=no |archiveurl=https://web.archive.org/web/20161129210235/http://www.tradingeconomics.com/pakistan/core-inflation-rate |archivedate=29 November 2016 |df=dmy-all}}
  4. "The World Factbook — Central Intelligence Agency". www.cia.gov. 3 جولائی 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2018. 
  5. "Banknotes and Coins Under Circulation" (PDF). بینک دولت پاکستان. 26 دسمبر 2018 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 ستمبر 2008. 
  6. "Pakistan's Banknotes". State Bank of Pakistan. 8 جولائی 2008. 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 ستمبر 2008.