کملا سوہونی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
کملا سوہونی
معلومات شخصیت
پیدائش 14 ستمبر 1912  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اندور  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 28 جون 1998 (86 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نئی دہلی  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب ہندو مت
عملی زندگی
مادر علمی ممبئی یونیورسٹی  ویکی ڈیٹا پر تعلیم از (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ حیاتی کیمیا دان  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل حیاتی کیمیاء
اعزازات

کملا سوہونی(انگریزی: Kamala Sohonie) ایک بھارت کی خاتون ماہر حیاتی کیمیاء (biochemist) تھی۔ وہ پہلی بھارتی خاتون تھی جسے سائنس کے تعلیمی شعبے میں پی ایچ ڈی کی سند حاصل ہوئی۔[2][3]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

کملا سوہونی (قبل از شادی: بھاگوت) اندور، مدھیہ پردیش، بھارت میں پیدا ہوئیں تھیں۔ ان کے والد ناراین راؤ بھاگوت ایک ماہر کیمیاء تھے۔ کملا نے 1933ء میں گریجویشن مکمل کی تھی۔ انہوں نے بی ایس سی میں کیمیا (پہلا اختیاری مضمون) اور طبیعیات (دوسرا اختیاری مضمون) ممبئی یونیورسٹی سے پڑھا۔ اس کے بعد انہوں نے انڈین انسٹی ٹیوٹ آف سائنس (آئی آئی ایس سی) کے آگے ایک ریسرچ فیلو شپ کی درخواست پیش کی، مگر یہ اس وقت کے ڈائریکٹر پروفیسر سی وی رامن کی جانب سے اس وجہ سے نامنظور ہوئی کہ عورتیں اس قابل نہیں کہ وہ تحقیق میں آگے بڑھیں۔[2] کچھ نمائندگیوں کے بعد کملا کو آئی آئی ایس سی میں داخلہ ملا، جو کسی بھی عورت کو پہلی بار حاصل ہوا تھا۔ یہ اس بات سے مشروط تھا کہ وہ تحقیق کے پہلے سال آزمائشی مرحلے میں رہیں گی۔[4] حالانکہ کملا پہلی بھارتی عورت نہیں ہیں جنہوں نے سائنس کے شعبے میں پی ایچ ڈی مکمل کی ہو- ان سے پہلے ای کے جانکی اما 1930ء میں پی ایچ ڈی مکمل کر چکی تھیں (جو آگے چل کر بوٹانیکل سروے آف انڈیا کی ڈائریکٹر جنرل بھی بنی تھیں)، جبکہ کملا نے اپنی پی ایچ ڈی 30ء کے اخیر سالوں میں مکمل کی ہے، وہ پہلی بھارتی خاتون تھیں جنہوں نے سائنس کے شعبے میں ایک برطانوی جامعہ سے اپنی تحقیق پر یہ سند حاصل کی ہو۔

کریئر اور تحقیق[ترمیم]

کملا پروفیسر سی وی رامن کی شرائط کو منظور کرتے ہوئے آئی آئی ایس سی میں 1933ء میں داخل ہوئیں۔ ان کے تحقیقی نگراں کار سری سرینیواسیا تھے۔ رامن کملا کی کارکردگی سے بے حد متاثر ہوئے اور انہیں مزید تحقیق کی اجازت دے دی۔ وہ غذائی اشیا میں پروٹین کی موجودگی پر کام کرتے ہوئے ایم ایس سی حیاتی کیمیا حاصل کرلی۔ انہیں کیمبرج یونیورسٹی سے دعوت دی گئی تاکہ ڈاکٹر ڈیریک ریکٹر کے تحت فریڈریک جی ہاپکینز لیباریٹری میں کام کرنے کا موقع ملے۔ اس کے بعد وہ ڈاکٹر رابِن ہِل کے تحت کام کرتے ہوئے خلیوں کی خامرہ سائٹوکروم سی کو کھوج نکالا۔[5] اسی نودریافت سائٹوکروم سی کے مطالعہ پر جامعہ کیمبرج نے پی ایچ ڈی کی ڈگری عطا کی۔ ان کی تحقیقات بہت مختصر تھیں، جو صرف 40 صفحات پر مشتمل تھیں۔

کملا 1939ء میں لوٹ آئیں۔ وہ لیڈی ہارڈنگ میڈیکل کالج، نئی دہلی میں پروفیسر اور صدر شعبہ حیاتی کیمیاء کے طور پر مقرر ہوئیں۔ بعد میں وہ کونور کے نیوٹریشن ریسرچ لیاب میں کام کرنے لگیں۔[5]

ایم وی سوہونی سے 1947ء میں شادی کے بعد وہ ممبئی چلی گئیں۔ وہ رائل انسٹی ٹیوٹ آف سائنس، بمبئی میں شعبۂ حیاتی کیمیاء میں پروفیسر کے طور پر شامل ہوگئیں۔ انسٹی ٹیوٹ میں وہ پھلیوں کی غذائی حیثیت پر کام کرنے لگیں۔ انہیں راشٹرپتی ایوارڈ ان کے نیرا مشروب کے لیے دیا گیا تھا کہ غریب التغذیہ بچوں کے لیے اہم شے ہے۔[5]

کملا سوہونی کو انڈین کونسل آف میڈیکل ریسرچ، نئی دہلی کی جانب سے ایک تقریب میں تہنیت پیش کی گئی تھی۔ اس کے کچھ عرصے بعد وہ انتقال کر گئیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://www.indianbotanists.com/2015/03/kamala-sohonie-woman-who-established.html
  2. ^ ا ب Aravind Gupta۔ "Kamala Sohonie" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Indian National Science Academy۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2012۔
  3. "The Glass Ceiling: The why and therefore" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Vigyansagar۔ Government of India۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل (پی‌ڈی‌ایف) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2012۔
  4. "Kamala Sohonie"۔ Streeshakti۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2012۔
  5. ^ ا ب پ Vasumathi Dhuru۔ "The scientist lady" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Indian Association of Scientists۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل (پی‌ڈی‌ایف) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2012۔