ارض روم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

ارض روم (ترکی زبان: Erzurum) ترکی کا شہر ہے جو جزیرہ نما اناطولیہ کے مشرقی علاقے میں واقع ہے۔

2000ء کی مردم شماری کے مطابق شہر کی آبادی 361،235 ہے۔ یہ صوبہ ارض روم کا دارالحکومت ہے جو مشرقی اناطولیہ کا سب سے بڑا صوبہ ہے۔ شہر سطح سمندر سے 1757 میٹر (5766 فٹ) کی بلندی پر واقع ہے اور یہاں موسم انتہائی سرد ہوتا ہے۔ ماہ جنوری میں یہاں کا اوسط درجہ حرارت منفی 11 درجہ سینٹی گریڈ (12.2 فارن ہائیٹ) ہوتا ہے جبکہ کبھی کبھار یہ منفی 30 درجہ سینٹی گریڈ (منفی 22 درجہ فارن ہائیٹ) تک پہنچ جاتا ہے۔ موسم سرما میں یہاں شدید برف باری بھی پڑتی ہے۔ ارض روم زمانہ قدیم میں کیرن کے نام سے جانا جاتا تھا اور بازنطینی عہد میں یہ شہر تھیوڈوسیوپولس کہلاتا تھا اور اس کو موجودہ نام جنگ ملازکرد میں فتح کے بعد مسلمانوں کے ہاتھوں ملا۔

1829ء میں شہر پر روسیوں نے قبضہ کر لیا لیکن معاہدہ ادرنہ کے تحت اسے سلطنت عثمانیہ کو واپس کر دیا گیا۔ جنگ کریمیا کے دوران روسی افواج اس شہر تک دروازوں تک پہنچ گئی تھیں لیکن عددی قوت کی کمی اور دیگر محاذوں پر جاری مقابلوں کے باعث اس پر حملے کی جرات نہ کر سکی۔ 1877ء کی روس ترک جنگ میں روسی حملے کے دوران یہاں کے شہریوں نے زبردست مزاحمت کی لیکن شہر بالآخر روسی افواج کے زیر نگیں آ گیا تاہم ایک مرتبہ پھر معاہدہ سان اسٹیفنو کے تحت سلطنت عثمانیہ کو واپس مل گیا۔

1915ء کے آرمینیائی قتل عام کے دوران یہ شہر آرمینیائی باشندوں پر مبینہ مظالم کا اہم مرکز تھا۔

پہلی جنگ عظیم کے دوران یہ شہر عثمانی اور روسی سلطنتوں کے درمیان لڑی گئی کلیدی جنگوں میں سے ایک کا مرکز رہا۔ فروری 1916ء میں روسی افواج نے شہر پر قبضہ کر لیا اور تیسری مرتبہ یہ شہر 1918ء میں معاہدہ بریسٹ-لیٹوفسک کے تحت عثمانیوں کو واپس ملا۔

1919ء میں شہر میں منعقد ہونے والی ارض روم کانگریس ترک جنگ آزادی کا نقطہ آغاز سمجھی جاتی ہے۔

شہر میں واقع جامعہ اتاترک ترکی کی بڑی جامعات میں سے ایک ہے جہاں چالیس ہزار سے زائد طالب علم زیر تعلیم ہیں۔ تعلیم کے علاوہ سیاحت یہاں کی معیشت کا اہم حصہ ہے۔ ترکی کے چوتھے صدر جمال گرسل اور معروف جدید اسلامی دانشور و مصنف فتح اللہ گلین کا تعلق اسی شہر سے ہے۔