انورادھا (1960 کی فلم)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
انورادھا
Anuradha (1960).jpg
پوسٹر
ہدایت کاررشی کیش مکھرجی
پروڈیوسرHrishikesh Mukherjee
L. B. Thakur
منظر نویسShachin Bhowmick
راجندر سنگھ بیدی
D. N. Mukherjee
Samir Chowdhary
کہانیSachin Bhowmick
ستارےبلراج ساہنی
Leela Naidu
موسیقیروی شنکر (composer)
Shailendra (lyricist)
سنیماگرافیجے وانت پتھارے
ایڈیٹرDas Dhaimade
تاریخ نمائش
  • 1960ء (1960ء)
دورانیہ
141 minutes
ملکبھارت
زبانہندی

انورادھا ( ہندی: अनुराधा‎ ؛ انگریزی : ) 1960 میں بننے والی ایک ہندی فلم ، جس کے پروڈیوسر اور ہدایتکار ہریشکیش مکھرجی تھے ۔ اس فلم میں بلراج ساہنی اور لیلا نائیڈو نے اسیت سین اور مکری کے ساتھ مرکزی کردار ادا کیے تھے۔ یہ فلم مس انڈیا نائیڈو کی پہلی فلم ہونے کی وجہ سے مشہور ہے۔

اس فلم کی موسیقی پنڈت روی شنکر نے ترتیب دی تھی ، جو ہندی سنیما کے چند نادر شاہکاروں میں سے تھی۔ اس فلم کی کہانی سچن بھومیک کی لکھی ایک مختصر داستان پر مبنی ہے۔جو ایک بنگالی میگزین دیش میں شائع ہوئی تھی۔ان کی خود نوشت کے مطابق اس کہانی کا خیال گسٹاؤ فلیوبرٹ کے 1857ء میں لکھے گئے ناول میڈم باورے سے متاثر تھا۔

اس فلم کو بہترین فلم کا قومی فلم ایوارڈ دیا گیا تھا۔ اور 1961 میں 11 ویں برلن انٹرنیشنل فلم فیسٹیول میں گولڈن بیئر کے لیے نامزد ہوئی تھی۔

کہانی[ترمیم]

انورادھا رائے ( لیلا نائیڈو ) ، ایک مشہور ریڈیو گلوکار ، رقاص اور ایک امیر آدمی کی بیٹی ، ایک آئیڈیلسٹ ڈاکٹر ، ڈاکٹر نرمل چودھری ( بلراج ساہنی ) سے پیار کرتی ہے۔ وہ اپنے والد کی مرضی کے خلاف اس سے شادی کرنے کا فیصلہ کرتی ہے۔ نرمل ، جس کی والدہ بیماری کے سبب فوت ہوگئیں ، ایک دور دراز گاؤں نندا میں غریبوں کی خدمت کرنے کا فیصلہ کرتا ہے۔ وہ انورادھا سے کہتا ہے کہ وہ اس کے جیسی تلخ زندگی گزارنے کی بجائے اپنے والد کی خواہشات پر عمل کرتے ہوئے ان کے مطابق اپنی زندگی بسر کرے۔لیکن وہ اپنے پیار کے ساتھ رہنے پر مصر رہتی ہے۔۔ اس کے والد نے اس کی شادی ایک لندن پلٹ نوجوان دیپک ( ابی بھٹاچاریہ ) سے طے کر دی لیکن اس نے یہ شادی کرنے سے انکار کر دیا۔ دیپک اس سے بہت متاثر ہوتا ہے اور اس کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہے اور وعدہ کرتا ہے کہ اگر اسے کبھی بھی ضرورت پڑتی ہے تو وہ مستقبل میں اس کی مدد کرے گا۔

شادی اور ایک بیٹی کی پیدائش کے بعد ، انورادھا کو اگاؤں میں رہنے کی مشکلات اور اس فیصلے کی تلخی کا احساس ہوتا ہے۔ گھریلو ذمہ داریاں کو نبھانے کے لیے وہ گانا چھوڑ دیتی ہے جو اس کے لیے کبھی زندگی جیسی اہمیت رکھتا تھا۔ ایک دن کئی سالوں کے بعد اس کے والد اسے دیکھنے آئے اور اس سے صلح کر لی۔ اس کی خراب حالت دیکھ کر ، انہوں نے اس سے کہا کہ ان کے ساتھ شہر چلے اور وہیں رہے۔ لیکن ، اپنے مریضوں کی وجہ سے ، نرمل نے اس پیش کش کو مسترد کر دیا اور کچھ وقت بعد منتقل ہونے کا وعدہ کیا۔

ستارے[ترمیم]

  • بلراج ساہنی بحیثیت ڈاکٹر نرمل چودھری
  • لورا نائیڈو بطور انورادھا رائے
  • رانو
  • ابی بھٹاچاریہ بطور دیپک
  • ناصر حسین
  • ڈیوڈ
  • ہری شیوداسانی بطور برجیشور پرساد رائے
  • آسیت سین بطور زمیندار
  • مکری بطور اتمرام

ایوارڈ[ترمیم]

قومی فلم ایوارڈ
  • 1960 : آل انڈیا کی بہترین فیچر فلم کے لیے صدارتی گولڈ میڈل [1]
برلن انٹرنیشنل فلم فیسٹیول
  • 1961 : گولڈن ریچھ : نامزدگی

ساؤنڈ ٹریک[ترمیم]

فلمی میوزک ڈپارٹمنٹ میں ایک نادر مجموعہ تھا ، ستار کے استاد پنڈت روی شنکر ، گیت نگار شیلندر کے ساتھ۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "8th National Film Awards". بھارت کا بین الاقوامی فلمی تہوار. 23 نومبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 ستمبر 2011. 
  2. "Kaise Din Beete" یوٹیوب پر

بیرونی روابط[ترمیم]