انیتا دیسائی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

انیتا دیسائی کی پیدائش 24 جون 1937 کو ہوئی ۔ وہ ایک ہندوستانی ناول نگار ہیں اور میساچوسٹس انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی میں ہیومینٹیزکی  پروفیسر بھی رہیں ۔ [1] [2] ایک مصنف کی حیثیت سے ان کا نام تین بار بکر پرائز کے لیے شارٹ لسٹ بھی ہوا [2] انہیں ہندوستان کے نیشنل اکیڈمی آف لیٹرز کے ساہتیہ اکیڈمی سے اپنے ناول فائر آن ماؤنٹین کے لیے سن 1978 میں ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ  بھی ملا۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

انیتا دیسائی سن 1937 میں ہندوستان کے شہر مسوری میں ایک جرمن تارکین وطن والدہ  ٹونی نیم کے ہاں پیدا ہوئیں۔ان کے والد ایک ایک بنگالی تاجر ، ڈی این مظومدار تھے [1]  ان کے بنگالی باپ کی پہلی بار ان کی جرمن ماں سے اس وقت ملاقات ہوئی جب وہ جنگ سے پہلے برلن میں انجینئری کا طالب علم تھے اور ان کی شادی اس دور میں ہوئی جب ایک ہندوستانی مرد کے لیے ایک یورپی عورت سے شادی کرنا  بہت غیر معمولی بات تھی ۔ اس شادی کے فور بعد ، وہ نئی دہلی چلے گئے ، جہاں دیسائی کو اپنی دو بڑی بہنوں اور بھائی کے ساتھ پالا گیا۔ وہ  اپنے گھر میں جرمن کے ساتھ  ساتھ ہندی بولتے ہوئے بڑی ہوئیں۔ وہ گھر سے باہر بنگالی ، اردو اور انگریزی بھی بولتی تھیں۔ انھوں نے سب سے پہلے اسکول میں انگریزی پڑھی۔یہی ان کا انگریزی سے لگاؤ پیدا ہوا  اور اس کے نتیجے میں انگریزی ان کی "ادبی زبان" بن گئی۔ انہوں نے سات سال کی عمر میں انگریزی میں لکھنا شروع کیا اور نو سال کی عمر میں اپنی پہلی کہانی شائع کی۔ وہ دہلی کے کوئین میری  ہائر سیکنڈری اسکول میں طالب علم تھیں اور پھر انھوں نے 1957 میں دہلی یونیورسٹی کے مرانڈا ہاؤس سے انگریزی ادب میں  بی اے کی سند حاصل کی۔ اگلے ہی سال اس نے ایک کمپیوٹر سافٹ ویئر کمپنی کے ڈائریکٹر اور کتاب بیٹیوین ایٹرنٹیز: آئیڈیاز آن لائف اینڈ دی کاسموس کے مصنف اشون دیسئ سے شادی کی۔ بکر انعام یافتہ ناول نگار کرن دیسائی سمیت ان کے چار بچے ہیں۔

کیریئر[ترمیم]

دیسائی نے اپنا پہلا ناول ، کری دی میور ، 1963 میں شائع کیا۔ وہ کلئیر لائٹ آف ڈے (1980) کو اپنی سب سے  بہترین تصنیف سمجھتی ہیں 1999 کے بکر پرائز فائنلسٹ ناول فاسٹنگ نے ان کی مقبولیت میں اضافہ کیا۔ ان کی مختصر کہانیوں کا تازہ ترین مجموعہ ، آرٹسٹ آف لاپتہ ، 2011 میں شائع ہوا تھا۔ [3] دیسائی نے ماؤنٹ ہولیوک کالج ، بارچ کالج اور اسمتھ کالج میں  بھی تعلیم دی ۔ وہ رائل سوسائٹی آف لٹریچر ، امریکن اکیڈمی آف آرٹس اینڈ لیٹرز اور گرٹن کالج ، کیمبرج میں بھی شامل ہیں۔ [4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب "Anita Desai- she also has a cousin named Josefina Wickham, that was born in 2005. Biography". British Council. Chatto & Windus. اخذ شدہ بتاریخ 29 اپریل 2018. 
  2. ^ ا ب "Anita Desai". Goodreads. Goodreads. اخذ شدہ بتاریخ 29 اپریل 2018. 
  3. "A Page in the Life: Anita Desai". اخذ شدہ بتاریخ 24 مارچ 2018. 
  4. Baumgartner's Bombay, Penguin, 1989.