حلیمہ رفیق

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
حلیمہ رفیق
ذاتی معلومات
پیدائش23 مارچ 1997(1997-03-23)
ملتان، پنجاب، پاکستان
وفات13 جولائی 2014(2014-70-13) (عمر  17 سال)
ملتان, پنجاب، پاکستان

حلیمہ رفیق (23 مارچ ، 1997 - 13 جولائی ، 2014) ملتان ، پنجاب ، پاکستان سے تعلق رکھنے والا ایک پاکستانی کرکٹ کھلاڑی تھی۔ حلیمیہ نے ملتان کرکٹ کلب کے چیئرمین مولوی محمد سلطان عالم انصاری پر ملتان کرکٹ اسٹیڈیم میں کرکٹ میچ کے دوران جنسی طور پر ہراساں کرنے کا الزام عائد کیا ، جس کے لئے اس کی خاتون ساتھی نے بھی سپورٹ کیا تھا ، لیکن اس کے بعد عالم انصاری نے ان پر 20 ملین ڈالر کا مقدمہ چلایا تھا۔ [1] [2] حلیمہ رفیق نے 13 جولائی 2014 کو تیزاب پی لیا جس کی وجہ سے اس کی وفات ہو گئی ۔

کیریئر[ترمیم]

جنسی طور پر ہراساں کرنے کے الزامات[ترمیم]

حلیمہ نے ایک کرکٹ میچ کے دوران یہ دعویٰ کیا تھا کہ وہ کرکٹ ٹیم میں بھرتی کرنے والوں کے ہاتھوں جنسی ہراسانی کا نشانہ بنی ہے۔ [3] [4] مبینہ ملزم مولوی محمد سلطان عالم انصاری تھا ، جو ایک 70 سالہ وکیل ، سابق جج ، اور پاکستان مسلم لیگ (ن) کے ٹکٹ سے ملتان سے پی پی 161 سے منتخب ہونے والے ایم پی اے اور پنجاب صوبائی اسمبلی کے رکن بھی تھے۔. [5] حلیمہ نے دعوی کیا کہ عالم انصاری نے ٹیم کے سلیکٹر محمد جاوید کے ساتھ مل کر علاقائی اور قومی کرکٹ دونوں ٹیموں کے لئے نامزد ہونے کے عوض جنسی استحصالکا مطالبہ کیا۔ [6] حلیمہ نے بتا کہ جب اسے اس نے ان ہراساں کرنے والوں کا پردہ فاش کیا ہے تب سے انہیں دھمکی دی جارہی تھی۔ 2013 میں ، رفیق ، سیما جاوید ، حنا غفور ، کرن ارشاد اور صبا غفور نے دعوی کیا تھا کہ ان پر ملتان کرکٹ بورڈ دباؤ ڈال رہا ہے۔

اس کے بعد عالم انصاری نے حلیمہ پر جھوٹے الزامات لگانے اور اقدام ہتک عزت کی وجہ سے دو کروڑ پاکستانی روپوں کاکے ہرجانے کا کیس کر دیا۔ - [] خواتین کو ہراساں کرنے کا کیس ملتان کی ضلعی عدالت میں جھوٹا اور محرک قرار پایا جہاں متعلقہ خواتین اور ٹی وی چینلز کو جھوٹا قرار دیا گیا اور یہ قرار دیا گیا کہ سلطان عالم ایک شریف آدمی ہیں اور انہوں نے (ٹی وی پر ان کے چینلز پر مبینہ خواتین کو ہراساں کرنے کی غلط رپورٹنگ کی وجہ سے)اس سلسلے میں ان کو ہونے والی تکلیف کے لئے غیر مشروط معافی مانگی ۔ ) -

موت[ترمیم]

اتوار 13 جولائی ، 2014 کو حلیمہ رفیق نے تیزاب پی کر خودکشی کرلی۔ [7] حلیمہ کے والد ، محمد رفیق نے ملتان کرکٹ بورڈ کے عہدیداروں (بشمول عالم انصاری) پر کرکٹ کیمپ کی تربیت کے دوران نوعمر نوعمر کھلاڑیوں کو جنسی طور پر ہراساں کرنے کا الزام عائد کیا۔[8] [9] حلیمہ کے بھائی رشید رفیق نے نشتر اسپتال پر غفلت کا الزام عائد کیا کہ ایمرجنسی روم کی غفلت کی وجہ سے حلیمہ کا انتقال ہوا۔ [10] [11]

مزید دیکھیے[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Cricketer commits suicide after sexual harassment". 17 جولا‎ئی 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2014. 
  2. "Court summons TV channel owner in defamation case". 29 نومبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 مارچ 2021. 
  3. "Cricketer commits suicide after sexual harassment". 17 جولا‎ئی 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2014. 
  4. "Court summons TV channel owner in defamation case". 29 نومبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 مارچ 2021. 
  5. MULTAN (PP-160 to PP-169)
  6. Family tells of Pakistan teen cricketer's 'suicide' after sex-pest row
  7. "Woman Cricketer Halima Rafiq commits suicide". 10 اکتوبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 مارچ 2021. 
  8. "Teen Female Cricketer Dies Under Mysterious Circumstances". 04 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 مارچ 2021. 
  9. Teenage cricketer Halima Rafique dies under mysterious circumstances
  10. Cricketer Haleema Rafique's kin blame death on doctors
  11. Under threat: Haleema’s family moves court plea to register FIR