سندھ کی ثقافت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے

بسلسلہ مضامین
سندھی
map of Sindh

سندھ کی ثقافت (سندھی: سنڌ جي ثقافت) کی جڑیں وادی سندھ کی تہذیب میں ہیں۔ سندھ کی تشکیل بڑے صحرائی علاقے، اس کے پاس موجود قدرتی وسائل اور مسلسل غیر ملکی اثر و رسوخ سے ہوئی ہے۔ دریائے سندھ یا سندھو جو زمین سے گزرتا ہے، اور بحیرہ عرب (جو اس کی سرحدوں کا تعین کرتا ہے) نے بھی مقامی لوگوں میں سمندری سفر کی روایات کی حمایت کی۔[1] مقامی آب و ہوا اس بات کی بھی عکاسی کرتی ہے کہ سندھیوں کی زبان، لوک داستان، روایات، رسم و رواج اور طرز زندگی پڑوسی علاقوں سے اس قدر مختلف کیوں ہے۔[2][3] سندھی ثقافت کو سندھی ڈائاسپورا بھی رائج کرتے ہیں۔

تاریخ[ترمیم]

سندھی ثقافت کی جڑیں ماضی بعید تک جاتی ہیں۔ 19ویں اور 20ویں صدی کے دوران آثار قدیمہ کی تحقیق نے سندھ کے لوگوں کی سماجی زندگی، مذہب اور ثقافت کی جڑیں ظاہر کیں: ان کے زرعی طریقوں، روایتی فنون اور دستکاری، رسم و رواج اور سماجی زندگی کے دیگر حصے، ایک پختہ سندھ وادی میں واپس جانا۔ تیسری صدی قبل مسیح کی تہذیب، حالیہ تحقیقوں نے وادی سندھ کی تہذیب کو اس سے بھی پہلے کے نسب کا پتہ لگایا ہے۔[4]

آثار قدیمہ کی دریافتیں[ترمیم]

موہن جو دڑو کی کھدائی نے اقدار، ایک الگ شناخت اور ثقافت کے ساتھ لوگوں کی تہذیب کی شہری زندگی کو آشکار کیا ہے۔ لہذا، سندھی ثقافت کی پہلی تعریف 7000 سال پرانی وادی سندھ کی تہذیب سے نکلتی ہے۔ یہ آریائی سے پہلے کا دور ہے، تقریباً 3000 سال قبل مسیح، جب سندھ میں شہری تہذیب اپنے عروج پر تھی۔

سر مورٹیمر وہیلر کی کتاب وادی سندھ اور اس سے آگے کی تہذیب میں کہا گیا ہے کہ؛ " تہذیب، اصطلاح کے ایک کم سے کم معنی میں، شہروں میں رہنے کا فن ہے، اس تمام شرط کے ساتھ جو سماجی مہارتوں اور نظم و ضبط کے حوالے سے ہے۔" جب لوگ سندھی تہذیب کی بات کرتے ہیں تو انہیں اپنی فکر کرنی پڑتی ہے، بنیادی طور پر انسانی رہائش کے مادی اور ٹھوس پہلو سے جس کا سندھی ثقافت واحد جوہر ہے جسے سپر اسٹرکچر کہتے ہیں۔ موجودہ سندھ، وادی سندھ کی تہذیب کے شمالی حصے کے ساتھ (تقریباً 3000 سے 2500 قبل مسیح) اپنی شہری تہذیب پر واقع ہے۔[5]

قلعہ رنی کوٹ بھی وادی سندھ کی تہذیب کا ایک نشان ہے۔ یہ دنیا کا سب سے بڑا قلعہ ہے جس کی دیواریں 20 کلومیٹر تک پھیلی ہوئی ہیں۔ اسے چین کی دوسری دیوار کہا جاتا ہے، اور بہت سے زائرین کو راغب کرتی ہے۔

ادب[ترمیم]

تاریخ[ترمیم]

سندھی زبان قدیم اور ادب سے مالا مال ہے۔ اس کے مصنفین نے شاعری اور نثر دونوں میں ادب کی مختلف شکلوں میں بڑے پیمانے پر تعاون کیا ہے۔ سندھی ادب بہت وسیع ہے، اور دنیا کے قدیم ترین ادب میں سے ایک ہے۔ سندھی ادب کا قدیم ترین حوالہ عرب مورخین کی تحریروں میں موجود ہے۔ یہ ثابت ہے کہ سندھی پہلی مشرقی زبان تھی جس میں قرآن کا ترجمہ آٹھویں یا نویں صدی میں ہوا تھا۔ بغداد میں مسلم خلفاء کے سامنے سندھی شاعروں کے اپنے اشعار سنانے کے ثبوت موجود ہیں۔[6] یہ بھی ریکارڈ کیا گیا ہے کہ 8ویں اور 9ویں صدی کے دوران فلکیات، طب اور تاریخ پر سندھی میں مقالے لکھے گئے۔[7]

شاعری[ترمیم]

سندھی ثقافت میں سندھی شاعری بھی نمایاں ہے۔ شاہ عبداللطیف بھٹائی اور سچل سرمست کی شاعری سندھ بھر میں بہت مشہور ہے۔

موسیقی[ترمیم]

سندھی موسیقی کا اپنا ایک منفرد معیار ہے۔ یہ بہت سے مختلف طریقوں سے انجام دیا جاتا ہے۔ صوفی موسیقی مزاروں پر پیش کی جاتی ہے، اور دیگر سادہ موسیقی اسٹوڈیو اور اجتماعات میں پیش کی جاتی ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Sindhi Culture And Customs آرکائیو شدہ 2003-07-02 بذریعہ archive.today. Retrieved on 9 July 2008.
  2. Thakur, U (1959). Sindhi Culture. University of Bombay.
  3. http://www.jhulelal.com/culture.html
  4. احمد حسن دانی and Zaman, W. (1975). Proceedings of the First Congress of Pakistan History & Culture. University of Islamabad Press.
  5. Sindhi Culture. Retrieved on 9 July 2008
  6. Schimmel, A.M. (1983). Makli Hill: A Center of Islamic Culture in Sindh. First Syed Hussamuddin Rashdi Memorial Lecture. Institute of Central and West Asian Studies, University of Karachi.
  7. Asani, A. (2003). At the Crossroads of Indic and Iranian Civilizations: Sindhi Literary Culture. In S.I. Pollock, Literary Cultures in History: Reconstructions from South Asia. University of California Press.