سچترا سین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سچترا سین
(بنگالی میں: সুচিত্রা সেন ویکی ڈیٹا پر مقامی زبان میں نام (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Suchitra Sen as Paro in بمل رائے's دیوداس (1955ء فلم) (1955)
Suchitra Sen as Paro in بمل رائے's دیوداس (1955ء فلم) (1955)

معلومات شخصیت
پیدائشی نام (بنگالی میں: Rama Dasgupta ویکی ڈیٹا پر پیدائشی نام (P1477) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیدائش 6 اپریل 1931(1931-04-06)
وفات 17 جنوری 2014(2014-10-17) (عمر  82 سال)
کولکاتا[1]  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجۂ وفات دورۂ قلب  ویکی ڈیٹا پر وجۂ وفات (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر طرزِ موت (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قومیت Indian
آبائی علاقے Pabna، بنگلہ دیش
شریک حیات Dibanath Sen (شادی. 1947; died 1970)
اولاد مون مون سین
عملی زندگی
مادر علمی Pabna Government Girls High School
پیشہ فلم اداکارہ  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان ہندی، بنگلہ، انگریزی  ویکی ڈیٹا پر زبانیں (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
پدم شری اعزاز
Banga Bibhushan
دستخط
سچترا سین
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحات  ویکی ڈیٹا پر آئی ایم ڈی بی - آئی ڈی (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

بنگالی اور ہندی فلموں کی اداکارہ .سچترا سین کی تاریخ پیدائش بعض لوگ 1931ء بتاتے ہیں اور بعض 1934ء۔ مغربی بنگال کے بیربھوم ضلع کے ایک گاؤں پنا میں ان کی پیدائش ہوئی جو اب بنگلہ دیش کا ایک حصہ ہے۔ وہ تین بھائیوں اور پانچ بہنوں میں پانچویں بیٹی تھیں۔ ان کا اصلی نام اوما تھا۔ ہائی اسکول میں تعلیم کے بعد ہی 1947ء میں کلکتہ کے ایک نوجوان دیباناتھ سین سے ان کی شادی کردی گئی۔ سچترا سین کا شمار ان ہیروئینوں میں ہوتا ہے جو فلمی دنیا میں داخل ہونے سے پہلے شادی شدہ تھیں اور ایک بچی کی ماں بھی۔

فلمی کیرئیر[ترمیم]

سچترا سین کے شوہر ان کے فن کارانہ رجحان سے واقف تھے۔ جب انہیں ایک بنگالی فلم ”سات نمبر قیدی“ میں ہیروئن کے رول کے لیے چنا گیا تو ان کے شوہر نے فوراً اجازت دے دی۔ جلد ہی ان کا شمار بنگالی اسکرین کی مقبولِ عام اداکارؤں میں ہونے لگا۔ ہندی فلموں سے ان کا تعارف مشہور بنگالی ہدایت کار بمل رائے کی فلم ”دیوداس“ سے ہوا۔ بمل رائے اس فلم میں پاروتی (پارو) کے رول کے لیے مینا کماری کو لینا چاہتے تھے لیکن وہ اس فلم کے لیے وقت نہیں نکال سکیں۔ پھر مدھوبالا کا نام زیر غور رہا لیکن ان دنوں مدھو بالا اور دلیپ کمار کے تعلقات کشیدہ ہوچکے تھے۔ اس لیے قرعہٴ فال سچترا سین کے نام نکلا۔ 1955ء میں ریلیز ہونے والی فلم ”دیوداس“ باکس آفس پر اتنی کامیاب نہیں رہی لیکن آج تک اسے ایک کلاسک فلم تسلیم کیا جاتا ہے۔ دیوداس“ کے بعد سچترا سین نے کئی ہندی فلموں میں کام کیا جیسے، مسافر، چمپا کلی، سرحد، بمبئی کا بابو، ممتا اور آندھی، وغیرہ اور ہر فلم میں اپنی خوبصورتی اور موثر اداکاری کے نقوش چھوڑے۔

کنارہ کشی[ترمیم]

اپنی غیر معمولی مقبولیت کے دور میں اچانک 1978ء میں فلموں اور عوامی زندگی سے انہوں نے کنارہ کشی اختیار کرلی، حتیٰ کہ انہوں نے صحافت کو انٹرویو دینے بھی چھوڑ دے دیے۔ بعد میں مکمل طور پر رام کرشنا مشن سے وابستگی اختیار کرلی۔ سچترا سین اپنی مقبولیت کے عروج میں ہی اپنے شوہر سے علاحدہ ہو گئی تھیں ان کے ساتھ ان کی اکلوتی بیٹی، مون مون سین تھیں اور آج تک بھی وہ اپنی بیٹی اور ان کی دو بیٹیوں ریاس سین اور ریما سین کے ساتھ ہی رہتی ہیں۔

  1. http://www.bbc.co.uk/news/world-asia-india-25648140