سید ظفر حسن نقوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

علامہ سید ظفر حسن نقوی ، ہندوستان کے ایک مشہور شیعہ عالم دین اور متعدد کتابوں کے مصنف تھے ـ شہر امروہہ کے رہنے والے تھے ـ

ولادت[ترمیم]

سنہ 1307ھ میں آپ کی ولادت ہوئی ـ

آپ کا شجرہ نسب اس طرح ہے : سید ظفر حسن بن سید دلشاد علی بن سید امداد علی بن سید حمایت علی نقوی ـ

تعلیم[ترمیم]

آپ کی تعلیم کی تفصیلات معلوم نہ ہوسکیں، ـ تاہم جو کچھ بھی آپ کی تعلیم سے متعلق علامہ شیخ آقا بزرگ تہرانی نے تحریر کیا ہے اسے قارئین کی خدمت میں پیش کیا جا رہا ہے :

” نشا محبا للعلم و اھلہ فقرا علی لفیف من فضلاء بلادہ، و لازم بعض العلماء و الاجلاء حتی استفاد کثیرا و اتجہ الی التالیف فخاض مختلف المواضیع الاسلامیۃ و انتج مجموعۃ قیمۃ من الآثار المتنوعۃ “.

بچپن سے ہی آپ کو علم اور علما سے نہایت لگاؤ تھا، ـ چنانچہ آپ نے اپنے علاقہ کے متعدد علما سے کسب فیض کیا، ـ اس کے بعد جلیل القدر علما کی خدمت میں رہے ـ پھر تصنیف و تالیف میں مشغول ہو گئے اور مختلف اسلامی موضوعات پر دلچسپ کتابیں لکھیں ـ [1]

علمی صلاحیت[ترمیم]

علامہ شیخ آقا بزرگ تہرانی نے آپ کی علمی صلاحیت کے لیے یہ الفاظ استعمال کیے ہیں :

”عالم بارع و مؤلف فاضل“ [1]

تالیفات[ترمیم]

شیخ آقا بزرگ تہرانی کے بیان کے مطابق آپ کی مشہور تالیفات مندرجہ ذیل ہیں :

1: تفسیر قرآن کریم : پانچ جلدوں پر مشتمل یہ ایک بہترین تفسیر قرآن شمار ہوتی ہے ـ

2: جواز عزا (عزاداری امام حسین کے جواز کے بارے میں) ـ [2]

3: مصباح المجالس (پانچ جلدوں پر مشتمل)

4: چہاردہ معصومین کی سوانح حیات ( ہر معصوم کے بارے میں ایک جلد)

5: حکومت الٰہیہ

6: منازل روحانیت

7: عاقبت محمود

8: اہل بیت

9: حدیث قرطاس

10: فدک

11: تقیہ

12: خمس

13: یزید بن معاویہ

14: عقد ام کلثوم

15: ایمان ابوطالب

16: تعدد ازواج امام حسن

17: سکینہ بنت الحسین

18: تحریف قرآن

19: حقائق اسلام

20: محافل و مجالس [1]

21: مجالس خواتین

واضح رہے کہ یہ تمام کتابیں اردو زبان میں ہیں ـ

وفات اور مدفن[ترمیم]

تقسیم ہند و پاکستان کے بعد آپ پاکستان کے شہر کراچی ہجرت کر گئے تھے ـ وہیں آپ کی وفات ہوئی اور وہیں آپ کو دفن کیا گیا ـ

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ نقباء البشر فی القرن الرابع عشر، ج: 3، ص: 977
  2. الذریعۃ الی تصانیف الشیعۃ، ج: 5، ص: 244