مندرجات کا رخ کریں

طالوت بن عباد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
طالوت بن عباد
معلومات شخصیت
وجہ وفات طبعی موت
رہائش کوفہ
شہریت خلافت عباسیہ
کنیت ابو عثمان
مذہب اسلام
فرقہ اہل سنت
عملی زندگی
نسب البصری ، الصیرفی
ابن حجر کی رائے لا باس بہ
ذہبی کی رائے صدوق
استاد ابو امامہ باہلی ، حماد بن سلمہ
نمایاں شاگرد ابو حاتم رازی ، ابو قاسم بغوی
پیشہ محدث
شعبۂ عمل روایت حدیث

طالوت بن عباد ابو عثمان بصری صیرفی آپ حدیث نبوی کے راویوں میں سے ہیں، اور آپ صدوق درث کے راوی ہیں آپ کی حدیث کم از کم حسن درجہ کی ہوتی ہے۔ [1] اور آپ کے پاس ایک مشہور اور اعلیٰ درجے کا حدیث کا نسخہ تھا جس سے آپ روایت کرتے تھے ، آپ کی وفات سن دو سو اڑتیس ہجری میں ہوئی۔[2]

روایت حدیث

[ترمیم]

ابو امامہ باہلی کے صحابی فضل بن جبیر اور ربیع بن مسلم، حماد بن سلمہ، ابو ہلال محمد بن سلیم، الایمان ابو حذیفہ، سعید بن ابراہیم اور ایک گروہ محدثین کا۔ راوی: ابو حاتم رازی، عبدان الاہوازی، یحییٰ بن محمد حنائی، علی بن سعید بن بشیر رازی، ابو قاسم البغوی وغیرہ۔

جراح اور تعدیل

[ترمیم]

ابو فرج ابن جوزی نے کہا: "اسے نقل کرنے والے علماء نے ضعیف سمجھا ہے" رازی نے کہا: ابن حجر عسقلانی نے کہا: لا باس بہ "اس میں کوئی حرج نہیں ہے" اور ابن قیم الجوزیہ نے کہا: "اس میں کوئی حرج نہیں ہے۔" الجوزی نے اسے بغیر دلیل کے ضعیف قرار دیا ہے: صالح بن محمد جزرہ نے کہا: ثقہ ہے، اور یحییٰ بن معین نے کہا: یہ کچھ نہیں ہے۔ [2]

وفات

[ترمیم]

آپ نے 238ھ میں وفات پائی ۔

حوالہ جات

[ترمیم]
  1. "موسوعة الحديث : طالوت بن عباد"۔ hadith.islam-db.com۔ 13 سبتمبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 ستمبر 2021 
  2. ^ ا ب "إسلام ويب - سير أعلام النبلاء - الطبقة الثانية عشرة - طالوت بن عباد- الجزء رقم10"۔ islamweb.net (بزبان عربی)۔ 12 نوفمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 ستمبر 2021