عبداللہ خان دوم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
عبداللہ خان دوم
(ازبک میں: عبد اللہ خان بن اسکندر ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1533ء  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
خانیت بخارا  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 1598ء (64–65 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سمرقند  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
خاندان سلسلہ شیبانیان  ویکی ڈیٹا پر (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ شاعر  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل شاعری  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

عبد اللہ خان ( عبد اللہ خان اوزبیگ ) (1533/4-1598)، جسے "پرانے خان " کے نام سے جانا جاتا ہے، بخارا کی خانیت (1500-1785) کا ایک ازبک حکمران تھا۔ وہ 1583 سے اپنی وفات تک بخارا کے آخری شیبانید خان تھے۔ [2] عبد اللہ خان نے ایران کے ساتھ جنگ شروع کی جو 1587 سے 1598 تک جاری رہی۔ وہ مغل شہنشاہ اکبر کے ساتھ عدم جارحیت کے معاہدے کی بدولت اس پر توجہ مرکوز کرنے میں کامیاب ہوا، جس کے ذریعے عبد اللہ خان نے کابل کے علاقے میں اکبر کے حکمرانی کے حق کو تسلیم کیا۔ عبد اللہ خان کے دور میں بخارا سفارتی طور پر خان آف یارکنٹ ، عبدالکریم خان کے خلاف بھی تھا۔ [2] [3]

سیرت[ترمیم]

عبد اللہ خان 1533 یا 1534 میں صوبہ سمرقند کے شہر افرینکنت میں پیدا ہوئے۔

تخت پر چڑھنا[ترمیم]

عبد العزیز شیبانید کی وفات کے بعد تخت کے لیے جدوجہد شروع ہوئی۔ سمرقند پر حکومت کرنے والے خان عبد اللطیف نے اپنے دو پوتوں: شیبانی خان یار محمد سلطان اور برہان سلطان کے ذریعے بخارا پر حکومت کرنے کی کوشش کی۔ تاہم، 1551 میں عبد اللطیف خان کی موت کے بعد، برق خان، جس نے تاشقند پر حکمرانی کی، سمرقند پر قبضہ کر لیا اور وہاں خود کو نوروز احمد خان کے نام سے حاکم بنا لیا۔ انھیں ازبکوں کا سپریم خان قرار دیا گیا۔ شیبانید عبد اللہ سلطان، جو اس وقت کرمائن کے گورنر تھے، نے نوروز احمد خان کے خلاف مزاحمت کی قیادت کی۔ ان کی مدد ان کے چچا، بلخ کے گورنر پیر محمد خان نے کی۔ 1556 میں نوروز احمد کا انتقال ہوا۔ ان کی وفات کے ساتھ ہی پیر محمد خان کو ازبکوں کا اعلیٰ ترین حکمران قرار دیا گیا۔ [4]

ریاست کے اتحاد کی جدوجہد[ترمیم]

1557 میں، عبد اللہ سلطان نے صوفی شیخوں کی حمایت سے بخارا پر قبضہ کیا اور اس کا حکمران بن گیا۔ 1561 میں، اس نے اپنے والد اسکندر کو ازبکوں کے سپریم خان کے طور پر اعلان کرنے کی جرات کی۔ [5] اس نے پہلے کرمائن اور میانکل پر حکومت کی تھی۔ عبد اللہ کے والد کو مذہبی رسومات میں زیادہ دلچسپی تھی، اس لیے انھوں نے ریاستی امور کی انجام دہی اپنے بیٹے عبد اللہ سلطان کے سپرد کی۔ عبد اللہ چاروں شیبانیوں کو اکٹھا کرنے کے لیے نکلا: بخارا، سمرقند، تاشقند اور بلخ کو ایک ریاست میں۔ اس میں کئی سال لگے اور یہ صرف 1582 میں تھا کہ وہ چار شیبانیوں میں سے ایک ریاست بنانے میں کامیاب ہوا۔ [6] اتحاد کے حصول کے لیے اسے تاشقند پر قبضہ کرنے کے لیے ایک طویل جنگ لڑنی پڑی۔ اس کے بعد اس نے فرغانہ پر قبضہ کر لیا اور 1573 میں طویل محاصرے کے بعد بلخ پر قبضہ کر لیا۔ 1574 میں، اس نے کرشی، کارشی اور حصار پر حملہ کر کے اپنے مال میں اضافہ کیا۔ 1576 میں، اس نے سمرقند سے فوجوں کا مقابلہ کیا اور تاشقند پر قبضہ کر لیا۔ عبد اللہ خان کی خدمت میں قازق سلطان شیہان اور اس کا بیٹا توکیل موجود تھے۔ [7] 1582 میں عبد اللہ خان نے دشت کپچک کی طرف کوچ کیا۔ بابو خان مارا گیا اور اس کے شاہروہیہ سائرام اور اہنگران کے قلعوں پر قبضہ کر لیا گیا۔ 1583 میں اس کے بیٹے عبد المومن نے مشہد پر قبضہ کر کے لوٹ مار کی۔ اسی 1583 میں، اپنے والد کی وفات کے بعد، عبد اللہ خان کو ازبکوں کا حکمران قرار دیا گیا [8] اور اس کی ریاست کو بخارا خانیت کہا گیا۔

عبد اللہ خان کی مالیاتی اصلاحات[ترمیم]

عبد اللہ خان دوم نے کئی مراحل میں مالیاتی اصلاحات کا انتظام کیا۔ چاندی کی دھات اور چاندی کے سکوں کی کمی کو دور کرنے کے لیے، اس نے اپنے والد کے ساتھ مل کر سونے کے سکوں کی باقاعدہ تیاری کا اہتمام کیا اور بخارا میں ان کے ڈاک ٹکٹ کو کنٹرول کیا، خاص طور پر اعلیٰ معیار کو برقرار رکھنے پر توجہ دی۔ عبد اللہ خان کی طرف سے متعارف کرائی گئی اصلاحات کا بنیادی مقصد چاندی کی قیمتوں میں اضافے کے مطابق چاندی کے سکوں کے مواد کو تبدیل کرنا تھا۔ ایک ایسے وقت میں جب خاندان کا باضابطہ سربراہ اسکندر خان (1560-1583) ہی تھا، چاندی کے سکّوں کی ٹکسال کو مرکزیت حاصل رہی۔ تاہم، اسکندر کے نام کے سکے بخارا، سمرقند، بلخ، تاشقند، اندیجان اور اہسی یاس ( ترکستان ) میں جاری کیے گئے۔ [9] 1583 میں عبد اللہ خان نے ایک اور مالیاتی اصلاحات کیں۔ یہ اصلاحات دار الحکومت بخارا (جس میں چاندی کے سکے بنائے گئے) کے ارد گرد مرکوز تھی۔ اشیائے صرف کی روزمرہ کی شہری تجارت کے لیے عبد اللہ خان نے تانبے کے سکے بنائے۔ عبد اللہ خان دوم نے جو مالیاتی اصلاحات شروع کیں وہ کامیاب رہیں۔ انھوں نے مالیاتی بحران کو ختم کیا اور ریاست سے باہر کرنسی کے بڑے پیمانے پر رساو کو روک دیا۔ یہ اصلاحات عبد اللہ خان دوم کے اس مقصد کا حصہ تھی کہ وہ اپنی ریاست کی سرحدوں کے اندر اور باہر کے علاقوں میں ہر قسم کی تجارت کے لیے سازگار حالات پیدا کرے۔

ریاست کی حدود کو وسیع کرنا[ترمیم]

شیبانی ریاست کے ملاپ نے اپنی علاقائی حدود کو بڑھانے کے نئے مواقع کھولے تھے۔ 1584ء میں عبد اللہ خان نے بدخشاں پر قبضہ کر لیا۔ 1588 میں اس نے خراسان پر قبضہ کر لیا۔ اپنے دور حکومت کے آخری دور میں عبد اللہ نے خوارزم کی فتح کے لیے جنگ چھیڑی۔ 1593-94 میں خورزم کو بالآخر عبد اللہ کی فوجوں نے فتح کر لیا۔ عبد اللہ نے خیوا کی طرف کوچ کیا اور ان کے سلطانوں کو گرفتار کر کے قتل کر دیا گیا۔ جلد ہی قازق خانوں کے ساتھ تعلقات خراب ہو گئے، جنہیں عبد اللہ خان کے بیٹے عبد المومن کی بغاوت کے بارے میں معلوم ہوا۔ عبد اللہ خان کو اپنے ہی بیٹے کے ساتھ جنگ میں جانے پر مجبور کیا گیا۔ اس نے آگے کی لڑائیوں کے لیے ایک فوج تیار کی، لیکن قازق چنگیزیڈ کے ساتھ لڑائی سے پہلے ہی اس کی موت ہو گئی۔ قازق صورت حال کا فائدہ اٹھاتے ہوئے ترکستان ، تاشقند، سمرقند اور اندیجان پر قبضہ کر لیں گے۔ تاہم وہ بخارا لے جانے سے قاصر تھے۔

خارجہ پالیسی[ترمیم]

عبد اللہ خان کے دور میں خانٹے نے مغلیہ سلطنت ، سلطنت عثمانیہ اور روس کے زار کے ساتھ قریبی سفارتی تعلقات بنائے رکھے تھے۔ اکبر نے 1577 کے ایک خط میں عبد اللہ خان ازبک کو پرتگالیوں کو ہندوستان سے نکالنے کے اپنے ارادے سے آگاہ کیا۔ [10] عبد اللہ خان کی سائبیرین خان کچم کی حمایت کی وجہ سے بخارا کے ساتھ روس کے تعلقات 1580 کی دہائی کے اوائل میں خراب ہو گئے۔

قبائلی دستوں کی تشکیل[ترمیم]

عبد اللہ خان کی فوج مختلف ازبک قبائل کے سپاہیوں پر مشتمل تھی جن میں شامل ہیں: شیریں، اترچ، بشیوز، جلیر ، کیرالہ، کاتاگان ، تان یاروکس، الچنس، ہٹیس، بحرین، نعیمان، منگھود ، کشچی ، ارگنس ، منگس، کنگس اور Tubais ( tuvas ) [11]

ثقافتی پالیسیاں[ترمیم]

عبد اللہ خان نہ صرف ایک باصلاحیت جنگجو تھے بلکہ ایک بہترین سیاست دان بھی تھے۔ اس نے بیرون ملک (خاص طور پر روس اور ہندوستان کے ساتھ) بخارا کے تجارتی تعلقات کو مضبوط بنانے کا خیال رکھا اور عوامی عمارتوں اور ڈھانچے - مدارس اور خانقاہوں ، شاپنگ مالز اور کاروانسرائیوں ، آبی ذخائر اور پلوں کی تعمیر پر بہت توجہ دی۔ عبد اللہ خان دوم کے دور میں بخارا میں کوش مدرسہ تعمیر کیا گیا۔ یہ دو مدارس پر مشتمل ہے۔ سب سے پہلے، مدرسہ مدری خان تھا، جو 1567 میں اپنی والدہ عبد اللہ خان کے اعزاز میں بنایا گیا تھا۔ اس کے بعد عبد اللہ خان کے نام سے منسوب مدرسے تھے جو 1588 سے 1590 کے درمیان بنائے گئے تھے۔ عبد اللہ خان ثانی نے نظمیں لکھیں اور "آواز غازی" کے نام سے اپنی میراث چھوڑی۔ [12]

موت[ترمیم]

1598 میں عبد اللہ کی موت کے بعد تخت اس کے بیٹے عبد المومن کے پاس چلا گیا، لیکن جلد ہی وہ باغیوں کے ہاتھوں مارا گیا۔ عبد المومن کی وفات سے شیبانی خاندان کا خاتمہ ہو گیا۔ عبد اللہ خان کو بخارا کے قریب بہاؤالدین نقشبندی کے مزار میں دفن کیا گیا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/abdullah-30 — بنام: Abdullah
  2. ^ ا ب The Bukharans: A Dynastic, Diplomatic, and Commercial History, 1550-1702
  3. The Bukharans: A Dynastic, Diplomatic, and Commercial History, 1550-1702 page 46
  4. "Шайбаниды"۔ 01 نومبر 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 نومبر 2014 
  5. Абусеитова М.Х. (1985)۔ Казахское ханство во второй половине XVI века۔ Алма-Ата: Академия наук Казахской ССР Институт Истории, Археологии и Этнографии им. Ч. Ч. Валиханова 
  6. Foltz, Richard (1998)۔ Mughal India and Central Asia۔ Oxford University Press 
  7. Материалы по истории казахских ханств XV-XVIII веков. (Извлечения из персидских и тюркских сочинений).۔ Алма-Ата۔ 1969 
  8. "Шейбаниды"۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 نومبر 2014 
  9. Е. А. Давидович (1992)۔ Корпус золотых и серебряных монет Шейбанидов. XVI век. 
  10. Naim R. (1988)۔ Farooqi, Moguls, Ottomans, and Pilgrims: Protecting the Routes to Mecca in the Sixteenth and Seventeenth Centuries۔ The International History Review 
  11. Шараф-наме-йи шахи۔ Хафиз-и Таныш Бухари 
  12. А.Эркинов (2001)۔ Синтез номадской и оседлой культур в поэзии Шайбанидского правителя Убайдаллах хана۔ International journal of Central Asian studies