علامہ تمنا عمادی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
علامہ تمنا عمادی
معلومات شخصیت
پیدائش 14 جون 1888  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
پھلواری شریف،  وپٹنہ ضلع  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 27 نومبر 1972 (84 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
کراچی،  وسندھ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ شاعر،  ومترجم،  وسوانح نگار  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
P islam.svg باب اسلام

علامہ تمنا عمادی مجیبی یا محمد محی الدین حیات الحق (پیدائش: 14 جون 1888ء— وفات: 27 نومبر 1972ء) شاعر، مترجم، سوانح نگار تھے۔

سوانح[ترمیم]

علامہ تمنا عمادی کی پیدائش پھلواری شریف، پٹنہ میں 14 جون 1888ء کو ہوئی۔ تاریخ پیدائش کا مادہ ’’فیروزبخت‘‘ سے مخرج ہوتا ہے۔ والدین نے نام حیات الحق رکھا تھا مگر وہ اپنے ننھیالی نام محمد محی الدین سے مشہور ہوئے اور تمنا عمادی کے نام سے شہرت پائی۔ والد شاہ نذیرالحق تھے جنہوں نے 10 مارچ 1905ء کو پھلواری شریفمیں وفات پائی۔

تعلیم[ترمیم]

درس نظامی کی تکمیل تمنا نے اپنے والد شاہ نذیرالحق سے کی۔ گویا عربی زبان اور فارسی زبان میں منتہی الکمال تھے۔ انگریزی زبان سے نابلد تھے۔ فارغ التحصیل ہونے کے بعد اولاً مدرسہ حنیفیہ، پٹنہ میں ملازمت اختیار کرلی۔ یہ مدرسہ محمدی جان بیگم تھا جسے نواب یوسف علی خان نے قائم کیا تھا۔ یہاں تمنا 1910ء سے 1918ء تک عربی زبان اور فارسی زبان کے مدرس رہے۔

بطور مدرس[ترمیم]

اِس کے بعد وہ تقریباً ساڑھے تین سال سابق صدر بھارت ڈاکٹر راجندر پرشاد کے قائم کردہ وِدیا پیٹھ (بہار) میں عربی و فارسی پڑھاتے رہے۔ 1921ء میں تمنا اِس سے علاحدہ ہو گئے اور پھر کسی ادارے میں ملازمت اختیار نہ کی۔ بعد ازاں پٹنہ کے بعض مسلمان وکلا اُن سے قرآن مجید پڑھنے لگے۔ یہ لوگ کچھ مالی خدمت بھی کر دیا کرتے تھے۔ سر فخرالدین (متوفی 1933ء) فقہی معاملات میں بھی علامہ تمنا سے مشورہ کیا کرتے تھے۔ جب اُن کا انتقال ہو گیا تو یہ عبدالعزیز بیرسٹر (متوفی 1948ء)، وزیر تعلیم بہار کے مشیرخاص اور دستِ راست بن گئے۔ عبدالعزیز صاحب بعد میں صدر اُمورِ مذہبی بن کر حیدرآباد دکن گئے تو تمنا کو بھی اپنے ہمراہ لیتے گئے۔ ریاست نظام حیدرآباد دکن سے علامہ تمنا کا ماہانہ وظیفہ 100 روپئے مقرر ہوا اور یہ اُنہیں ریاست حیدرآباد کے انضمام یعنی ستمبر 1948ء تک باقاعدگی سے ملتا رہا۔[1]

ٖڈھاکہ اور چاٹگام میں قیام[ترمیم]

1948ء میں علامہ تمنا اپنے اہل و عیال کے ہمراہ ہجرت کرکے ڈھاکہ چلے گئے۔ڈھاکہ جاتے ہوئے وہ اپنا کتاب خانہ بھی ساتھ لے گئے تھے۔ وہاں حکومت پاکستان نے اُنہیں رہائش کے لیے ایک وسیع مکان دیا۔ علمی حلقوں میں خاصی آؤ بھگت ہوئی۔ وہ طویل عرصے تک ریڈیو ڈھاکہ سے درس قرآن نشر کرتے رہے۔ غرض کہ معاش کے پہلو سے اُنہیں کوئی تشویش نہ ہوئی، بلکہ وہ خاصا خوشحال اور فارغ البال تھے۔ کئی سال بعد اُنہوں نے ڈھاکہ سے اپنی رہائش چاٹگام منتقل کرلی جہاں اُن کا بیٹا صاحبزادہ محمد انعام الدین رہتا تھا اور جس کا وہاں ٹھیکے کا کاروبار تھا۔

اواخر عمر[ترمیم]

اُن کی بیشتر تصانیف نامکمل پڑی تھیں۔ اُنہوں نے اِس دوران خیال کیا کہ اُن کی تکمیل اُس وقت تک ممکن نہیں ہوسکتی کہ جب تک مستقل قیام کراچی میں نہ ہوجائے۔ اِس کے علاوہ اُن کی ایک آنکھ سے پانی اُترنے کا مرض شروع ہو گیا اور رفتہ رفتہ بینائی رخصت ہونے لگی۔ اِس پر اُنہیں آپریشن کی ضرورت تھی۔ اِس لیے چاٹگام سے کراچی چلے آئے اور ایک عزیز کے پاس قیام کیا۔ اِس اثنا میں اُن کے بیٹے محمد انعام الدین نے بھی اپنا کاروبار کراچی منتقل کر لیا۔ چنانچہ 1969ء میں علامہ تمنا اپنے بیٹے کے پاس کراچی میں رہائش پزیر ہوئے۔

وفات[ترمیم]

اواخرعمر میں بینائی رخصت ہونے پر آنکھ پر عمل جراحی کروایا۔ بینائی اِس سے بحال ہو گئی مگر شومئی قسمت کہ 1972ء کے اوائل میں اُنہیں حلق کا سرطان لاحق ہو گیا۔ علاج معالجہ کا بے سود کوششیں کی گئیں مگر کوئی کمی واقع نہ ہوئی۔ کھانا پینا بالکل ترک ہوچکا تھا کیونکہ کوئی شے حلق سے نیچے نہیں اُترتی تھی۔ سیال چیزوں میں دو چار گھونٹ یخنی یا آدھی پیالی چائے اُن کی دن بھر کی خوراک رہ گئی تھی۔ اِسی مرض میں 27 نومبر 1972ء کو کراچی میں فوت ہو گئے۔[2]

تصانیف[ترمیم]

علامہ تمنا کی چند مشہور تصانیف یہ ہیں:

  • مثنوی مذہب و عقل
  • مثنوی معاش و معاد
  • ایضاحِ سخن
  • رسالہ تذکیر و تانیث
  • افعالِ مرکبہ

حوالہ جات[ترمیم]

  1. مالک رام: تذکرہ معاصرین، جلد 2، صفحہ 92/93۔ مطبوعہ دہلی
  2. مالک رام: تذکرہ معاصرین، جلد 2، صفحہ 93۔ مطبوعہ دہلی