فرحت دہلوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
فرحت دہلوی
معلومات شخصیت
پیدائش 4 جنوری 1926  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دہلی،  برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 30 اپریل 1968 (42 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
میرٹھ،  ہندوستان  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (4 جنوری 1926–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ہندوستان (15 اگست 1947–30 اپریل 1968)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ شاعر،  مصنف  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو،  فارسی،  انگریزی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P literature.svg باب ادب

پریم شنکر فرحت دہلوی (پیدائش: 4 جنوری 1926ء — وفات: 30 اپریل 1968ء) اردو زبان کے شاعر، مصنف اور ادیب تھے۔

سوانح[ترمیم]

پیدائش و خاندان[ترمیم]

فرحت دہلوی کا پیدائشی نام پریم شنکر تھا جبکہ اُن کے والد لالہ موہن لال گوئلہ تھے جو گھڑیوں کا کاروبار کیا کرتے تھے۔ فرحت دہلوی دہلی میں 4 جنوری 1926ء کو ایک متمول تجارتی گھرانے میں پیدا ہوئے۔

تعلیم[ترمیم]

فرحت چونکہ یہ جانتے تھے کہ اُنہیں بالآخر تجارت ہی کرنی ہے، تو اِس لیے انٹرمیڈیٹ تک تعلیم حاصل کرپائے۔ باوجود اِس کے، انگریزی زبان بہت خوب جانتے تھے جیساکہ اُن کے رابندر ناتھ ٹیگور کی متعدد نظموں کے تراجم سے ظاہر ہوتا ہے۔فارسی زبان سے خاصا شغف رکھتے تھے۔ اردو زبان اور ہندی زبان سے شغف رکھتے تھے۔ [1]

شعرگوئی[ترمیم]

فرحت چونکہ انگریزی زبان پر عبور رکھتے تھے اور رابندر ناتھ ٹیگور کی نظموں کے متعدد انگریزی ترجمے بھی کہے۔ ہری ونش بچن فرحت کے محبوب شاعر تھے۔ اردو زبان میں میر انیس اور مرزا دبیر کے مراثی اور علامہ اقبال کے کلام کے شیدائی تھے۔اردو زبان میں شعرگوئی کا شوق بہت ابتداء میں ہی پیدا ہوا۔ چند دن لالہ دھرم پال گپتا وفاؔ سے مشورہ لیتے رہے اور بعد ازاں بشیشور پرشاد منورؔ لکھنؤی اور کامل نظامی دہلوی (تلمیذ سائل دہلوی مرحوم) سے اصلاح لیتے رہے۔ فرحت دہلوی کا مجموعہ کلام ’’سازِ حیات‘‘ کے نام سے 1959ء میں شائع ہوا تھا۔ اِس کے بعد کا کلام غیر مطبوعہ رہ گیا اور شائع نہ ہوسکا۔فرحت اپنے آخری ایام میں ایک مثنوی بنام ’’ساقی نامہ‘‘ لکھ رہے تھے مگر وہ بھی فرحت کی اچانک وفات سے نامکمل رہ گئی۔ شاعری میں تخلص فرحت تھا۔ [2]

وفات[ترمیم]

فرحت دہلوی میں فربہی کے اثرات تھے جس سے قلب کا فعل کمزور ہونے لگا تھا۔ اِسی سبب سے 30 اپریل 1968ء کو اچانک اپنے دوسرے سکونتی مکان میرٹھ میں حرکتِ قلب بند ہوجانے سے انتقال کرگئے۔ وفات کے وقت عمر 42 سال تھی۔

مزید دیکھیں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. مالک رام: تذکرۂ معاصرین ، جلد 1، ص 59، مطبوعہ اپریل 1972ء، دہلی
  2. مالک رام: تذکرۂ معاصرین ، جلد 1، ص 59/60، مطبوعہ اپریل 1972ء، دہلی