محمد صالح کمبوہ لاہوری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(محمد صالح کمبوہ سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search
Mulla Muhammad Saleh Kamboh
ملا محمد صالح کمبوہ
Muhammad Saleh Kamboh.jpg
 

معلومات شخصیت
مقام پیدائش مغلیہ سلطنت  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 1675  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ مصنف،  شاعر  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مولوی محمد صالح کمبوہ لاہوری رحمتہ اللہ علیہ ایک معروف و مشہور خطاط اور مغل شہنشاہ شاہ جہاں کا سرکاری سوانح نگار شاہ جہاں اور مغل بادشاہ اورنگزیب عالمگیر کا استاد تھا۔ اگرچہ وہ ایک بہت پڑھا لکھا ہوا شخص تھا ، [1] لیکن مولوی محمد صالح کمبوہ کی زندگی کے بارے میں بہت کم معلومات ہیں علاوہ اس کے جو انھوں نے لکھا ہے۔ وہ میر عبدو للہ ، مشکین کلام کا بیٹا تھا ، جس کے لقب سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ وہ ایک عمدہ مصنف بھی ہے۔ [2] خیال کیا جاتا ہے کہ وہ عنایت اللہ کمبوہ کا چھوٹا بھائی ہے [3] اور انہوں نے شاہی دیوان (وزیر) کے طور پر لاہور کے گورنر کے ساتھ کام کیا۔

بطور مورخ اور شاعر[ترمیم]

محمد صالح کو ان کی تخلیق عمال صالح کے لئے سب سے زیادہ یاد کیا جاتا ہے ، جسے شاہ جہاں نامہ ( شاہ جہاں کی تاریخ) بھی کہا جاتا ہے ، جسے انہوں نے 1659–60 ء میں مکمل کیا۔ عمال صالح شاہ جہاں کی زندگی اور اس کے دور کا ایک بیان ہے۔ تاہم ، اس کام میں شاہ جہاں کے پیش روؤں (خصوصا اکبر اور جہانگیر ) کے بارے میں بھی معلومات شامل ہیں اور شیخوں ، شاعروں ، اور دیگر قابل ذکر افراد کی سوانح حیات کا مجموعہ جو شاہ جہاں کے ہم عصر تھے۔ شاہ جہاں کے دور حکومت میں واقعات کے سب سے اہم اصل ذرائع میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔

محمد صالح فارسی لقب کشفی اور ہندی سبحان کے ذریعہ ایک شاعر کے طور پر جانا جاتا تھا اور یہ بھی کہا جاتا ہے کہ وہ ایک ہندی گلوکار ہیں۔ [3] [4]

بحیثیت فوجی[ترمیم]

منصبداروں کی فہرست میں ، محمد صالح کمبوہ کو پانچ سو فوجیوں کے کمانڈر کے طور پر شامل کیا گیا ہے۔ [5] [6]

کچھ کھاتوں سے یہ دعوی کیا جاتا ہے کہ محمد صالح کمبوہ مغل ایڈمرل کی حیثیت سے خدمات انجام دیتا تھا اور بدقسمتی سے بنگال - آسام کی سرحد پر پانڈو کے مقام پر بنگال کے مغل گورنر ، اسلام خان مشہدی کے دور میں ،اہوم کے خلاف اپنے بیڑے کے ساتھ لڑتے ہوئے ہجو کے فوجدار (پیادہ کمانڈر) جنرل عبدالسلام کی مدد کرتے ہوئے مارا گیا تھا۔ [7] مذکورہ واقعہ 1636 ء کی تاریخ کا بتایا جاتا ہے ، جو غلط ہے ، چونکہ محمد صالح زندہ تھا اور اورنگ زیب کے فورا 16 بعد 1659/60 میں اپنا عمال صالح مکمل کر لیا تھا (حکومت 1658 ء - 1707 ء) 1658 ء میں ہندوستان کا شہنشاہ بنا۔ نعیم الرحمن فاروقی کے مطابق یہ کام 1669 ء میں مکمل ہوا تھا۔ [8]

یہ بھی بتایا گیا ہے کہ جب اورنگ زیب کے دور حکومت میں صدر شریف خان کی وفات کے بعد جب شیخ مخدوم کو شاہی "صدر الصدور" ( چیف صدر ، چیف ایڈمنسٹریٹر یا وزیر اعظم ) مقرر کیا گیا تھا ، محمد صالح کمبوہ کو پیشدست (نائب) مقرر کیا گیا تھا۔ [9]

موت[ترمیم]

محمد صالح کی وفات کی تاریخ یقینی نہیں ہے۔ [10] ایس ایم لطیف اپنی تصنیفات میں غیر اعلانیہ اختیار پر لکھتے ہیں کہ محمد صالح کمبوہ سن 1085 (1675 ء) میں فوت ہوا [11] جسے کچھ مصنفین نے قبول کیا۔

لاہور کے اندرون شہر موچی گیٹ میں ان کے نام کے ساتھ ایک مسجد صالح کمبوہ مسجد کے نام سے مشہور ہے۔ [12] [13] اسے لاہور میں سپرد خاک کردیا گیا ہے ، حالانکہ اس کی قبر کے مقام پر اس وقت پراپرٹی کے مالکان متنازعہ ہیں۔ [14]

یہ بھی دیکھیں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Hamdard Islamicus, 1978, p 75, Hamdard National Foundation, Pakistan – Islam.
  2. ہندوستان کی تاریخ، اس کے اپنے مؤرخین کی زبانی—محمدی دور, 1877, p 123, Henry Miers Elliot, John Dowson; Shah Jahan, 1975, p 131, Henry Miers Elliot – Mogul Empire; A Descriptive Catalogue of the Historical Manuscripts in the Arabic and Persian Languages, 2008, p. 124, William Hook Morley – History.
  3. ^ ا ب Shah Jahan, 1975, p 131, Henry Miers Elliot – Mogul Empire.
  4. Persian literature in India during the time of Jahangir and Shah Jahan, 1970, p 171, M. Lutfur Rahman, Persian literature India History and criticism; A Descriptive Catalogue of the Historical Manuscripts in the Arabic and Persian Languages, 2008, p 124, William Hook Morley – History.
  5. The History of India, as Told by Its Own Historians, 1877, p 123, Henry Miers Elliot, John Dowson; Shah Jahan, 1975, p 131, Henry Miers Elliot – Mogul Empire.
  6. A Descriptive Catalogue of the Historical Manuscripts in the Arabic and Persian Languages, 2008, p 124, William Hook Morley – History.
  7. Journal of the Pakistan Historical Society, 1963, p 349, Pakistan Historical Society; Encyclopaedia of Bangladesh, p 169/170, Nagendra K. Singh; A History of Assam, 1906, pp 110–111, Edward Albert Gait.
  8. Mughal-Ottoman Relations: A Study of Political and Diplomatic Relations Between Mughal India and the Ottoman Empire, 1556–1748, 1986, p 208, Naimur Rahman Farooqi.
  9. Maāsir-i-ʻālamgiri: A History of the Emperor Aurangzib-ʻĀlamgir (reign 1658–1707 A.D.) of Saqi Mustʻad Khan By Muḥammad Sāqī Mustaʻidd Khān, Jadunath Sarkar, 1981, p 138, Muḥammad Sāqī Mustaʻidd Khān, Jadunath Sarkar – Mogul Empire; Bibliotheca Indica, 1947, p 138, Royal Asiatic Society of Bengal, Asiatic Society (Calcutta, India), Asiatic Society of Bengal, India Asiatic Society (Calcutta – Indic literature.
  10. The Shah Jahan Nama of 'Inayat Khan: An Abridged History of the Mughal Emperor Shah Jahan, Compiled by His Royal Librarian : the Nineteenth-century Manuscript Translation of A.R. Fuller (British Library, Add. 30,777), 1990, p xxviii, Inayat Khan, Wayne Edison Begley, Z. A. Desai, Ziyaud-Din A. Desai.
  11. Lahore, its history etc., 1992, S. M. Latif; Quoted in: Islamic Culture, 1941, p 74, Islamic Culture Board.
  12. Islamic Culture, 1941, p 74, Islamic Culture Board.
  13. "Muhammad Saleh Kamboh's Mosque". https://www.ualberta.ca/~rnoor/. 04 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 05 ستمبر 2017.  روابط خارجية في |publisher= (معاونت)
  14. "Muhammad Saleh Kamboh's Tomb". https://www.ualberta.ca/~rnoor/. 03 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 05 ستمبر 2017.  روابط خارجية في |publisher= (معاونت)
  • جدوناتھ سرکار ترجمہ ، معاصر عالمگیری : شہزادہ اورنگزیب عالمگیر (راج 1658-1707 ء) کی تاریخ: تحریر محمد صمد مصطفیٰ خان

بیرونی روابط[ترمیم]