نوری المالکی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
Nouri al-Maliki
نوري كامل المالكي
Nouri al-Maliki 2011-04-07.jpg
Vice President of Iraq
دفتر سنبھالا
8 September 2014
صدر Fuad Masum
پیشرو Khodair al-Khozaei
74th وزیر اعظم عراق
عہدہ سنبھالا
20 May 2006 – 8 September 2014
صدر Jalal Talabani
Fuad Masum
ڈپٹی
پیشرو Ibrahim al-Jaafari
جانشین حیدر العبادی
Minister of the Interior
Acting
عہدہ سنبھالا
21 December 2010 – 8 September 2014
پیشرو Jawad al-Bulani
جانشین Mohammed Al-Ghabban
عہدہ سنبھالا
20 May 2006 – 8 June 2006
پیشرو Baqir Jabr al-Zubeidi
جانشین Jawad al-Bulani
Minister of Defence
Acting
عہدہ سنبھالا
21 December 2010 – 17 August 2011
پیشرو Qadir Obeidi
جانشین Saadoun al-Dulaimi
Leader of the حزب الدعوۃ الاسلامیۃ
عہدہ سنبھالا
1 May 2007 – 8 September 2014
پیشرو Ibrahim al-Jaafari
جانشین حیدر العبادی
ذاتی تفصیلات
پیدائش Nouri Kamil Mohammed Hasan al-Maliki
20 جون 1950ء (عمر 67 سال)
Hindiya, Iraq
سیاسی جماعت حزب الدعوۃ الاسلامیۃ
دیگر سیاسی
وابستگیاں
State of Law Coalition
شریک حیات Faleeha Khalil
اولاد 5
مادر علمی Usul al-Din College
University of Baghdad
مذہب اہل تشیع

نوری المالکی نام نوري كامل محمد حسن المالكي، تاریخ پیدائش 20 جون 1950، جواد المالكي اور أبو إسراء کے نام سے بھی جانے جاتے ہیں۔ یہ ایک عراقی سیاست دان ہیں، یہ 2006 سے 2014تک عراق کے وزیر اعظم رہے ہیں، پھر 2014 میں نائب صدر کے عہدہ پر فائز ہوئے۔ یہ اسلامی دعوۃ پارٹی کے سیکریٹری جنرل ہیں۔ انکی پہلی کابینہ نے 20مئی2006 میں حلف اٹھایا تھا جبکہ دوسری کا بینہ نے 21دسمبر2010 میں حلف اٹھایا تھا المالکی نے اپنی سیاسی زندگی ایک شیعہ لیڈر کے طور پر شروع کی جس نے صدام کی حکومت کو 1970 میں چیلنج کر دیا تھا۔ ایک شیعہ لیڈر کی حثیت سے اس نے ایرانی اور شامیوں کی مدد سے صدام مخالف سرگرمیاں جاری رکھیں۔ یہاں تک کے اس کو حکومت حاصل ہو گئی۔ مگر وہ حکومٹ چلانے میں ناکام رہا، شمالی عراقی باغیوں کے ہاتھوں پے در پے شکست کھانے کے بعد وہ حکومت چھوڑنے پر مجبور ہو گیا۔ اس نے 14اگست2014 کو اپنے استعفیٰ کا اعلان کر دیا۔ 

نوری المالکی نام نوري كامل محمد حسن المالكي، تاریخ پیدائش 20 جون 1950، جواد المالكي اور أبو إسراء کے نام سے بھی جانے جاتے ہیں۔ یہ ایک عراقی سیاست دان ہیں، یہ 2006 سے 2014تک عراق کے وزیر اعظم رہے ہیں، پھر 2014 میں نائب صدر کے عہدہ پر فائز ہوئے۔ یہ اسلامی دعوۃ پارٹی کے سیکریٹری جنرل ہیں۔ انکی پہلی کابینہ نے 20مئی2006 میں حلف اٹھایا تھا جبکہ دوسری کا بینہ نے 21دسمبر2010 میں حلف اٹھایا تھا المالکی نے اپنی سیاسی زندگی ایک شیعہ لیڈر کے طور پر شروع کی جس نے صدام کی حکومت کو 1970 میں چیلنج کر دیا تھا۔ ایک شیعہ لیڈر کی حثیت سے اس نے ایرانی اور شامیوں کی مدد سے صدام مخالف سرگرمیاں جاری رکھیں۔ یہاں تک کے اس کو حکومت حاصل ہو گئی۔ مگر وہ حکومٹ چلانے میں ناکام رہا، شمالی عراقی باغیوں کے ہاتھوں پے در پے شکست کھانے کے بعد وہ حکومت چھوڑنے پر مجبور ہو گیا۔ اس نے 14اگست2014 کو اپنے استعفیٰ کا اعلان کر دیا۔