پائیتھن پروگرامنگ زبان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
Python
Python logo and wordmark.svg
پیراڈائم multi-paradigm: object-oriented, imperative, functional, procedural, reflective
اشاعت 20 فروری 1991؛ 26 سال قبل (1991-02-20)[1]
ڈیزائنر Guido van Rossum
ترقی دہندہ Python Software Foundation
مستحکم اشاعت 3.5.2 / 27 جون 2016؛ 8 مہینہ قبل (2016-06-27)[2]
2.7.12 / 28 جون 2016؛ 8 مہینہ قبل (2016-06-28)[3]
پیش منظر 3.6.0a3 / جولائی 2016؛ 8 مہینے (2016-07)[4]
شعبہ تحریر duck, dynamic, strong, gradual (as of Python 3.5)[5]
اہم اطلاقات CPython, IronPython, Jython, MicroPython, PyPy
بولیاں Cython, RPython, Stackless Python
متاثر ABC,[6] ALGOL 68,[7] C,[8] C++,[9] Dylan,[10] Haskell,[11] Icon,[12] Java,[13] Lisp,[14] Modula‑3,[9] Perl
موثر Boo, Cobra, CoffeeScript,[15] D, F#, Falcon, Genie,[16] Go, Groovy, JavaScript,[17][18] Julia,[19] Nim, Ruby,[20] Swift,[21]
آپریٹنگ سسٹم Cross-platform
اجازت نامہ Python Software Foundation License
فائل کی توسیع .py, .pyc, .pyd, .pyo,.[22] pyw, .pyz[23]
ویب سائٹ www.python.org
Wikibooks logo Python Programming بر ویکی کتب

پائیتھن   ایک وسیع پیمانے پر استعمال کی جانے والی  اعلی سطح کی، عام مقصد (general-purpose), تشریح شدہ( interpreted) ، متحرک(dynamic ) پروگرامنگ زبانہے۔[24][25] اس کے ڈیزائن کا فلسفہ کوڈ کو  پڑھنے کی اہلیت پر  زرو دیتا ہے،  اور اس کی نحو پروگرامرز کو  اجازت دیتی ہے کہ وہ   ++C یا جاوا  کے مقابلے میں اپنےتصورات کا  اظہار کم کوڈ کی سطروں  میں کرسکتے  ہیں۔[26][27] یہ زبان چھوٹے اور بڑے پیمانے پر  پروگرام تشکیل دینے  کی سہولت فراہم کرتی ہے۔[28]

پائیتھن متعدد  پروگرامنگ کے نمونوں  کی حمایت کرتا ہے جس میں متعین مقصد(object-oriented), ضروری (imperative)  اور فعال پروگرامنگ(functional programming) یا باضابطہ (procedural) انداز  شامل ہیں۔ اس میں  ایک متحرک قسم کے نظام اور خود کار طریقے سے  یاداشتوں کو  منظم کرنے کی خصوصیات ہیں  اور ایک بڑی اور جامع معیاری لائبریری  بھی موجود ہے۔       [29]

پائیتھن کے ترجمان (interpreters)  بہت سے آپریٹنگ سسٹمز کے لیے دستیاب ہیں،  جو پائیتھن کوڈ کو  وسیع اقسام کےسسٹمز پر چلانے کی اجازت دیتا ہے۔   تیسری پارٹی کے آلات کا استعمال کرتے ہوئے، جیسے کہ  Py2exe یا Pyinstaller،[30] پائیتھن  کوڈ میں پیک کیا جا سکتا موقف اکیلے کارکردگی کے پروگراموں میں سے کچھ کے لئے سب سے زیادہ مقبول آپریٹنگ سسٹمز ، تو ازگر پر مبنی سافٹ ویئر تقسیم کیا جا سکتا ہے ، اور استعمال کیا جاتا ہے, ان کے ماحول کے ساتھ انسٹال کرنے کی ضرورت نہیں ایک ازگر مترجم.

تاریخ[ترمیم]

 Guido van Rossum  پائیتھن کا خ

References[ترمیم]

ریاضی[ترمیم]

پائیتھن ہے معمول سی ریاضی آپریٹرز (+, -, *, /, %). یہ بھی ہے ** کے لئے اسیاتی ، مثال کے طور پر 5**3 == 125 اور 9**0.5 == 3.0 ، اور ایک نئے میٹرکس ضرب @ آپریٹر میں شامل ہے ورژن 3.5.[31]

  1. "The History of Python: A Brief Timeline of Python". Blogger. 2009-01-20. اخذ کردہ بتاریخ 2016-03-20. 
  2. Hastings، Larry (2016-06-27). "Python 3.5.2 and Python 3.4.5 are now available". Python Insider. The Python Core Developers. اخذ کردہ بتاریخ 2016-06-28. 
  3. Peterson، Benjamin (2016-06-28). "Python 2.7.12 released". Python Insider. The Python Core Developers. اخذ کردہ بتاریخ 2016-06-28. 
  4. "Python Release Python 3.6.0a3". Python Software Foundation. اخذ کردہ بتاریخ 12 July 2016. 
  5. "Type hinting for Python". LWN.net. 24 December 2014. اخذ کردہ بتاریخ 5 May 2015. 
  6. خطا در حوالہ: حوالہ بنام faq-created کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  7. خطا در حوالہ: حوالہ بنام 98-interview کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  8. خطا در حوالہ: حوالہ بنام AutoNT-1 کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  9. ^ 9.0 9.1 خطا در حوالہ: حوالہ بنام classmix کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  10. خطا در حوالہ: حوالہ بنام AutoNT-2 کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  11. خطا در حوالہ: حوالہ بنام AutoNT-3 کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  12. خطا در حوالہ: حوالہ بنام AutoNT-4 کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  13. خطا در حوالہ: حوالہ بنام AutoNT-5 کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  14. خطا در حوالہ: حوالہ بنام AutoNT-6 کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  15. "CoffeeScript borrows chained comparisons from Python". 
  16. "Genie Language - A brief guide". اخذ کردہ بتاریخ 2015-12-28. 
  17. "Perl and Python influences in JavaScript". www.2ality.com. 24 February 2013. اخذ کردہ بتاریخ 15 May 2015. 
  18. Rauschmayer، Axel. "Chapter 3: The Nature of JavaScript; Influences". O'Reilly, Speaking JavaScript. اخذ کردہ بتاریخ 15 May 2015. 
  19. خطا در حوالہ: حوالہ بنام Julia کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  20. خطا در حوالہ: حوالہ بنام bini کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  21. Lattner، Chris (3 June 2014). "Chris Lattner's Homepage". Chris Lattner. اخذ کردہ بتاریخ 3 June 2014. "The Swift language is the product of tireless effort from a team of language experts, documentation gurus, compiler optimization ninjas, and an incredibly important internal dogfooding group who provided feedback to help refine and battle-test ideas. Of course, it also greatly benefited from the experiences hard-won by many other languages in the field, drawing ideas from Objective-C, Rust, Haskell, Ruby, Python, C#, CLU, and far too many others to list." 
  22. File extension .pyo will be removed in Python 3.5. See PEP 0488
  23. Holth، Moore (30 March 2014). "PEP 0441 -- Improving Python ZIP Application Support". اخذ کردہ بتاریخ 12 Nov 2015. 
  24. TIOBE Software Index (2015).
  25. "The RedMonk Programming Language Rankings: June 2015 – tecosystems". Redmonk.com. 1 July 2015. اخذ کردہ بتاریخ 10 September 2015. 
  26. Summerfield، Mark. Rapid GUI Programming with Python and Qt. "Python is a very expressive language, which means that we can usually write far fewer lines of Python code than would be required for an equivalent application written in, say, C++ or Java" 
  27. McConnell، Steve (30 November 2009). Code Complete, p. 100. https://books.google.com/books?id=3JfE7TGUwvgC&pg=PT100. 
  28. Kuhlman, Dave.
  29. "About Python".
  30. "PyInstaller Home Page". اخذ کردہ بتاریخ 27 January 2014. 
  31. "PEP 465 -- A dedicated infix operator for matrix multiplication". python.org.